Monday , January 22 2018
Home / دنیا / بنگلہ دیش میں پارلیمنٹ کو سپریم کورٹ ججس کے مواخذہ کا اختیار

بنگلہ دیش میں پارلیمنٹ کو سپریم کورٹ ججس کے مواخذہ کا اختیار

ڈھاکہ 18ستمبر (سیاست ڈاٹ کام) بنگلہ دیشی پارلیمنٹ نے آج ایک اہم دستوری ترمیم کرتے ہوئے ایک ایسے بل کومنظوری دیدی جسکے ذریعہ ملک کی پارلیمنٹ کو سپریم کورٹ کے ججس کا مواخذہ کرنے کا اختیار حاصل ہوجائگا۔جبکہ دوسری طرف ملک کی سیاسی اوروکلا ء برادری نے پارلیمنٹ کو اپنے اس فیصلے پرنظر ثانی کا مطالبہ کیا ہے ۔اطلاع کے مطابق،برسراقتدارجماعت عوامی لیگ کی زیرقیادت نے گذشتہ رات 16ویں ترمیمی بل کو صفر کے مقابلے 327ندائی ووٹ سے منظور رکرلیا،جس سے سپریم کورٹ کے ججوں کا اپنے عہدے کا غلط استعمال اورانکی نااہلی پر انکا مواخذہ کیا جاسکے گا ،اسکا مقصد اعلی سطحی عدالتی شعبے میں جوابدہی کے عمل کو بہتربناناہے ۔ مذکورہ قوانین کے مطابق،پارلیمنٹ کویہ اختیارحاصل ہوگا کہ وہ سرکاری تحقیقات کی بنیادپر پارلیمنٹ میں دوتہائی اکثریت کے ساتھ پاس کئے گئے قراداد کے ذریعہ سپریم کورٹ کے ججس کو برخواست کرسکتاہے،تاہم ججس کو ان پرعائد کئے الزامات کا دفاع کرنے کا موقع دیا جائگا۔قبل ازیں وزارت قانون کی پارلیمانی اسٹنڈنگ کمیٹی کے چیرمین نے کہا کہ ہم صرف دستورکی آرٹیکل 1972کا احیا ء کررہے ہیںجس میں کہا گیا کہ پارلیمنٹ ججس کوبرخواست کریگا اورناہی انکا مواخذہ ،یہ صرف انکے حوالے سے کئے گئے تحقیقات کومنظور کریگا۔فی الوقت صرف سپریم کورٹ جڈیشیل کونسل جو چیف جسٹس اور سپریم کورٹ کے دو سینر ترین ججس پرمشتمل ہوتا ہے ،کوہی یہ اختیار حاصل ہے کہ سپریم کورٹ کے ججس کو انکی نااہلیت پر مواخذ ہ کرسکتے ہیں یا انہیں برخواست کرسکتے ہیں ،تاہم اب یہ اختیا ر پارلیمنٹ کو بھی حا صل ہوگیاہے۔

TOPPOPULARRECENT