Saturday , December 15 2018

بچوں کے ادائیگی حج پر امتناع عائد کرنے کا منصوبہ

جدہ۔19اکٹوبر ( سیاست ڈاٹ کام) سعودی عرب نے منصوبہ بنایا ہے کہ 10سال سے کم عمر کے بچوں کی ادائیگی حج پر امتناع عائد کیا جائے ۔یہ اقدام اُن کی صحت اور حج کے دوران شدید دباؤ کے پیش نظر کیا گیا ہے ۔ حج دنیا کا سب سے بڑا اجتماع ہوتا ہے ۔ اس مسئلہ پر حالیہ اجلاس میں جو حج انتظامیہ کے سربراہوں اور وزارت حج کے درمیان تبادلہ خیال کیلئے منعقد کیا گ

جدہ۔19اکٹوبر ( سیاست ڈاٹ کام) سعودی عرب نے منصوبہ بنایا ہے کہ 10سال سے کم عمر کے بچوں کی ادائیگی حج پر امتناع عائد کیا جائے ۔یہ اقدام اُن کی صحت اور حج کے دوران شدید دباؤ کے پیش نظر کیا گیا ہے ۔ حج دنیا کا سب سے بڑا اجتماع ہوتا ہے ۔ اس مسئلہ پر حالیہ اجلاس میں جو حج انتظامیہ کے سربراہوں اور وزارت حج کے درمیان تبادلہ خیال کیلئے منعقد کیا گیا تھا ‘ غور کیا گیا ۔ روزنامہ ’عرب نیوز‘ کی خبر کے بموجب یہ تجویز اس حقیقت کی بنیاد پر ہے کہ درجہ حرارت میں اضافہ ہوتا جارہا ہے اور حج کے دوران مقامات مقدسہ پر زبردست ہجوم ہوتاہے جس کی وجہ سے بچے جو حج کی ادائیگی کیلئے آتے ہیں خطرہ میں پڑجاتے ہیں ۔

علاوہ ازیں اس بات کا بھی زبردست امکان ہے کہ بچوں کو انفکشن نہ ہوجائے ۔ اگر یہ تجویز منظور ہوجائے تو اسے علماء دین کی کونسل کو غور کیلئے پیش کیا جائے گا ۔ وزارت حج کی عملی کام انجام دینے والی ٹیموں نے پتہ چلایا ہے کہ سینکڑوں بچے جن میں سے تقریباً دو تہائی 6سال سے کم عمر کے ہوتے ہیں مسجد حرام ‘ مکہ معظمہ اور دیگر مقدس مقامات پر جاریہ سال حج کے دوران موجود تھے ۔ وزارت کے تخمینے کے بموجب بچوں کی تعداد جن کی عمر 6سال سے کم تھی 5ہزار سے 7ہزار تک تھی ہندوستان سے آنے والے بچوں کی تعداد 144تھی۔ ہندوستانی حج مشنس کے ویب سائٹس پر دستیاب معلومات کے ذریعہ ان کے علاوہ 52نومولود بچے تھے ۔ گذشتہ سال تک ہندوستان سے آنے والے نومولود بچوں کو حج ویزا کی ضرورت نہیں ہوتی تھی لیکن جاریہ سال سے انہیں بھی عازمین حج تصور کیا جارہا ہے ۔ عازمین حج اپنے ساتھ بچوں کو حج کیلئے لاتے ہیں کیونکہ انہیں ساتھ لانے کے سوا کوئی اور راستہ نہیں ہوتا ۔

TOPPOPULARRECENT