Saturday , September 22 2018
Home / ہندوستان / بچہ مزدوری تاریخ کا بند باب ہوجائے، کیلاش ستیارتھی کی خواہش

بچہ مزدوری تاریخ کا بند باب ہوجائے، کیلاش ستیارتھی کی خواہش

نئی دہلی۔ 14؍دسمبر (سیاست ڈاٹ کام)۔ نوبل انعام یافتہ کیلاش ستیارتھی نے بچہ مزدوری کو تاریخ کا ایک بند باب بنادینے کی خواہش کا اظہار کیا اور اس مہم کو عالمی سطح پر ایک تحریک میں تبدیل کرنے کی پُرزور اپیل کی۔ کیلاش ستیارتھی کو 2014ء کا نوبل امن انعام دیا گیا۔ وہ آج ہندوستان واپس ہوئے۔ انھوں نے بچہ مزدوری کے خلاف زیر تصفیہ قانون کی جلد من

نئی دہلی۔ 14؍دسمبر (سیاست ڈاٹ کام)۔ نوبل انعام یافتہ کیلاش ستیارتھی نے بچہ مزدوری کو تاریخ کا ایک بند باب بنادینے کی خواہش کا اظہار کیا اور اس مہم کو عالمی سطح پر ایک تحریک میں تبدیل کرنے کی پُرزور اپیل کی۔ کیلاش ستیارتھی کو 2014ء کا نوبل امن انعام دیا گیا۔ وہ آج ہندوستان واپس ہوئے۔ انھوں نے بچہ مزدوری کے خلاف زیر تصفیہ قانون کی جلد منظوری پر زور دیا اور کہا کہ اگر یہ بِل منظور نہیں کیا گیا تو قانون سازوں کو تاریخ معاف نہیں کرے گی۔ وہ تمام ارکان پارلیمنٹ سے یہ اپیل کرتے ہیں کہ اس قانون کی منظوری کو یقینی بنائیں۔ گاندھی جی نے سچائی، عدم تشدد اور امن کو عوامی تحریک میں بدل دیا تھا۔ وہ بچہ مزدوری کو عوامی تحریک کے ساتھ ساتھ عالمی مہم میں تبدیل کرنے کی خواہش کرتے ہیں۔ چائلڈ لیبر (پروہیبیشن اینڈ ریگولیشن) ترمیمی بِل اگر ایک بار منظور ہوجائے تو کسی بھی شعبہ میں 14 سال یا اس سے کم عمر بچوں کو روزگار فراہم کرنے پر امتناع عائد ہوجائے گا۔ یہ قانون بچوں کو مفت اور لازمی تعلیم ایکٹ 2009ء کا ایک تسلسل ہوگا جس کے ذریعہ بچوں کو مفت تعلیم کا حق حاصل رہے گا۔

TOPPOPULARRECENT