Monday , November 20 2017
Home / Top Stories / بہار سیلاب متاثرین میں 5 لاکھ روپئے مالیتی غذائی اشیاء کی تقسیم

بہار سیلاب متاثرین میں 5 لاکھ روپئے مالیتی غذائی اشیاء کی تقسیم

سیاست ملت فنڈ اور فیض عام ٹرسٹ کی جانب سے اسکول اور تربیتی مرکز قائم کرنے کا اعلان
حیدرآباد ۔ 11 ۔ ستمبر : ( سیاست نیوز ) : بہار میں سیلاب نے کئی دیہاتوں کو مکمل طور پر تباہ کردیا ہے ۔ مکانات زمین دوز ہوگئے ہیں ۔ غریب عوام انتہائی کسمپرسی کی حالت میں آسمان تلے زندگی گزارنے پر مجبور ہیں ۔ سیاست ملت فنڈ اور فیض عام ٹرسٹ کی جانب سے سیلاب سے شدید متاثرہ علاقوں میں پہلے مرحلہ کی راحت کاری و امداد کے طور پر 5 لاکھ روپئے مالیتی غذائی اشیاء ، ادویات اور دوسرے ضروری سامان کی تقسیم عمل میں لائی گئی ۔ منیجنگ ایڈیٹر سیاست و سکریٹری سیاست ملت فنڈ نے کشن گنج ، پورنیہ اور کٹہیار جیسے شدید متاثرہ علاقوں کا دورہ کرتے ہوئے پریشان حال شہریوں میں امداد تقسیم کی ۔ واضح رہے کہ غیر سرکاری اعداد و شمار کے مطابق بہار میں آئے سیلاب کے نتیجہ میں 4000 سے زائد افراد ہلاک ہوئے ہیں جن میں بوڑھے ، جوان ، بچے اور خواتین سب شامل ہیں ۔ یہاں اس بات کا تذکرہ بھی ضروری ہوگا کہ مذکورہ متاثرہ مقامات کی آبادی میں 60 تا 70 فیصد مسلمان ہیں جن کی غربت کا یہ حال ہے کہ ان کے جسموں پر لباس تک نہیں ۔ ان مسلمانوں کی حالت جنگلاتی علاقوں میں رہنے والے قبائیلوں سے بدتر ہے ۔ ان علاقوں میں تاریکی کا بسیرا ہے ۔ الیکٹرسٹی کا کوئی انتظام نہیں اور حمل و نقل کے ذرائع بھی مفقود ہے ۔ ان علاقوں میں 10 تا 13 سال کے لڑکے لڑکیاں اور 50-55 سال کے مرد و خواتین ہی نظر آئے ۔ جب یہ سوال کیا گیا کہ آخر نوجوان کہاں ہیں تو بتایا گیا کہ شدید غربت اور بیروزگار کے باعث ان علاقوں کے نوجوان ملک کے مختلف مقامات پر پھیری والوں کی حیثیت سے کام کرتے ہیں اور گاؤں میں اپنے خاندانوں کے لیے دو وقت کی روٹی کا انتظام کرتے ہیں ۔ ایک مقام پر کمسن بچوں اور بچیوں نے منیجنگ ایڈیٹر سیاست جناب ظہیر الدین علی خاں سے بات چیت میں بتایا کہ ان کے دیہاتوں میں اسکولس نہیں ہیں جب کہ بچوں میں حصول علم کا غیر معمولی شوق اور جذبہ پایا جاتا ہے ۔ ایک لڑکے نے انتہائی درد مندانہ انداز میں یوں کہا ’ صاحب ہمارے لیے یہاں ایک اسکول قائم کردیجئے ۔ عمارتیں تو نہیں ہیں آم کی امرائی میں بھی یہ اسکول قائم کیا جاتا ہے تو گاؤں اور اطراف و اکناف کے علاقوں کے بچوں کو تعلیم حاصل کرنے کا موقع ملے گا ۔ ایک کمسن لڑکی کا کہنا تھا کہ بچیوں کے لیے ٹیلرنگ سنٹر قائم کیا جائے تاکہ وہ اس فن میں مہارت حاصل کرتے ہوئے اپنے خاندان کی کچھ مالی مدد کرسکے ۔ واضح رہے کہ بنگلہ دیش اور نیپال کی دریاوں سے پانی چھوڑنے کے نتیجہ میں بہار کے یہ نشیبی علاقہ تباہ و برباد اور پختہ عمارتیں بھی منہدم ہوگئیں ۔ کئی مکانات پر ایسی عمارتیں دیکھنے میں آئیں جن کی بنیادیں ہل گئی تھیں ۔ ان کے بنیاد کی مٹی کھسک گئی اور صرف ستونوں پر وہ ٹھہری ہوئی تھی لوگوں نے ان عمارتوں کا تخلیہ کردیا ۔ حد تو یہ ہے کہ متاثرہ لوگ ان بچی کچی سڑکوں پر دن رات گذار رہے ہیں جو سیلاب میں کٹ چکی تھی ۔ سیاست ملت فنڈ اور فیض عام ٹرسٹ کی جانب سے ان متاثرین سیلاب میں خیمے بھی تقسیم کئے گئے ۔ جناب ظہیر الدین علی خاں نے بتایا کہ سیاست ملت فنڈ سکریٹری فیض عام ٹرسٹ جناب افتخار حسین سے مشاورت کے بعد متاثرہ علاقوں میں اسکول قائم کرے گا ۔ اور لڑکیوں کے لیے ٹیلرنگ سنٹر قائم کیا جائے گا ۔ واضح رہے کہ گذشتہ سال بھی سیلاب کے موقع پر سیاست اور فیض عام ٹرسٹ نے متاثرین میں زائد از 20 لاکھ روپئے مالیتی ادویات غذائی اشیاء ملبوسات بلانکٹس اور دوسرا سامان تقسیم کیا تھا ۔ ساتھ ہی لڑکیوں و خواتین کے لیے مہندی ڈیزائننگ ، موم بتی و اگربتی سازی اور کھلونوں کے علاوہ عطر کی تیاری کا تربیتی پروگرام منعقد کیا تھا ۔۔

TOPPOPULARRECENT