Wednesday , November 22 2017
Home / Top Stories / بہار میں سیکولر ہندوستان کی جیت

بہار میں سیکولر ہندوستان کی جیت

عظیم اتحاد کودوتہائی اکثریت،بی جے پی زیر قیادت این ڈی اے کا انتہائی ناقص مظاہرہ

پٹنہ ۔ /8 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) بہار میں عظیم تر اتحاد نے آج بی جے پی زیرقیادت این ڈی اے کا عملاً صفایا کردیا اور ریاست کے انتخابی نتائج کو ’’سیکولر ہندوستان ‘‘ کی جیت تصور کیا جارہا ہے ۔ عظیم تر اتحاد نے جہاں دو تہائی اکثریت حاصل کرلی وہیں نتیش کمار تیسری میعاد کیلئے چیف منسٹر کا عہدہ سنبھالنے تیار ہیں اور اس انتخابی لڑائی میں وزیراعظم نریندر مودی کو انتہائی ہزیمت کا سامنا کرنا پڑا ۔ گزشتہ لوک سبھا انتخابات میں مودی کے ہاتھوں شکست کے بعد اس بار شاندار واپسی کرتے ہوئے نو تشکیل شدہ جنتادل (یو) ۔ آر جے ڈی ۔ کانگریس اتحاد نے 243 رکنی ایوان میں 178 نشستوں پر کامیابی حاصل کی ۔ لالو پرساد یادو کی آر جے ڈی سب سے بڑی جماعت بن کر ابھری جس نے 80 نشستیں  حاصل کیں ۔ جبکہ جنتادل (یو) کو 71 پر کامیابی ملی ہے ۔ ان دونوں پارٹیوں نے فی کس 101 نشستوں پر مقابلہ کیا تھا ۔ کانگریس نے بھی متاثر کن مظاہرہ کیا ہے اور 41 نشستوں پر اس نے مقابلہ کیا تھا جس میں 27 پر کامیابی ملی ۔ گزشتہ انتخابات میں وہ صرف 4 نشستوں پر کامیاب ہوئی تھی ۔ بی جے پی زیرقیادت این ڈی اے کیلئے نریندر مودی نے جارحانہ مہم چلائی اور 30 سے زائد ریالیوں سے خطاب کیا لیکن اسے 58 نشستوں پر ہی کامیابی مل سکی ۔ بی جے پی نے 157 نشستوں پر مقابلہ کیا اور اسے 53 پر کامیابی ہوئی جبکہ حلیف جماعتوں کا مظاہرہ بالکلیہ ناقص رہا ۔ رام ولاس پاسوان کی زیرقیادت ایل جے پی اور اوپیندر کشواہا کی آر ایل ایس پی کو فی کس دو نشستوں پر کامیابی حاصل ہوئی ہے ۔ سابق چیف منسٹر جیتن رام مانجھی نے دو نشستوں پر مقابلہ کیا تھا جس میں ایک پر کامیابی ملی اور ان کی پارٹی کو مابقی تمام 19 نشستوں پر شکست ہوئی ۔ مجلس اتحادالمسلمین نے پہلی مرتبہ بہار انتخابی مقابلہ میں حصہ لیا تھا لیکن وہ کھاتہ نہیں کھول سکی ۔ اسی طرح پپو یادو کی جن ادھیکار پارٹی کو بھی کامیابی نہیں ملی ۔ سی پی آئی (ایم ایل ۔ آئی) نے دو نشستوں پر کامیابی حاصل کی جبکہ چار آزاد امیدوار کامیاب رہے ۔ انتخابی نتائج مجموعی طور پر عظیم تر اتحاد کے حق میں رہے ۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT