Saturday , November 18 2017
Home / Top Stories / بیف کھانا ہر کسی کا حق: مرکزی وزیر اتھاؤلے

بیف کھانا ہر کسی کا حق: مرکزی وزیر اتھاؤلے

’’کئی بے قصور لوگوں کی جانیں تلف ہوچکیں جسے نظرانداز نہیں کیا جاسکتا‘‘
ممبئی 15 جولائی (سیاست ڈاٹ کام) مرکزی مملکتی وزیر برائے سماجی انصاف رام داس اتھاؤلے نے کہا ہے کہ ہر فرد کو بیف کھانے کا حق حاصل ہے اور یہ کہ گاؤ رکھشک بننے کے نام پر انسان کو مارنے والے بن جانے کا کسی کو حق نہیں۔ اتھاؤلے جو رپبلکن پارٹی آف انڈیا کے سربراہ ہیں، انھوں نے متنبہ بھی کیاکہ اُن کی پارٹی سڑکوں پر احتجاج پر مجبور ہوجائے گی، اگر گاؤ رکھشک اسی طرح تشدد میں ملوث ہوتے رہیں۔ وہ گزشتہ روز یہاں اخباری نمائندوں سے بات چیت کررہے تھے۔ اُنھوں نے کہاکہ ہر فرد کو یہ طے کرنے کا حق ہے کہ اُنھیں کیا کھانا چاہئے۔ اگر کوئی بیف کھانا چاہے تو یہ اُن کا انفرادی حق ہے۔ آج گائے کی حفاظت کے نام پر لوگ گوشت اور مویشیوں کو لیجانے والی گاڑیوں کو روک رہے ہیں اور لوگوں کو زدوکوب کررہے ہیں۔ کئی بے قصور لوگ تو اپنی جانیں گنواچکے ہیں، جسے حق بجانب نہیں ٹھہرایا جاسکتا اور نہ ہی نظرانداز کیا جاسکتا ہے۔ ایک واقعہ کا حوالہ دیتے ہوئے جس میں ایک شخص کو گائے کا گوشت لیجانے کے شبہ میں خوب مار پیٹ کی گئی، آر پی آئی لیڈر نے الزام عائد کیاکہ اِس کے پیچھے وسیع تر منصوبہ معلوم ہوتا ہے تاکہ وزیراعظم نریندر مودی کی ساکھ متاثر کی جائے جنھوں نے گاؤ رکھشا کے نام پر تشدد پر تشویش ظاہر کی ہے۔ اتھاؤلے نے کہاکہ گائے کے نام پر تشدد کے واقعات میں اضافہ وزیراعظم مودی کو بدنام کرنے کی حکمت عملی ہوسکتی ہے۔ اپوزیشن قائدین نے بی جے پی کے ایک گوشے کا اس میں رول ہونے کا الزام عائد کیا ہے تاکہ مودی کی بڑھتی سیاسی طاقت پر روک لگائی جاسکے۔ اتھاؤلے نے دلتوں، او بی سیز اور ٹرائبل کارپوریشنس کے لئے قرض معافی کا مطالبہ بھی کیا۔ این ڈی اے کے صدارتی امیدوار رامناتھ کووند جو آج ممبئی کے دورے پر ہیں، اُن کے بارے میں آر پی آئی لیڈر نے کہاکہ اُنھیں ماتو شری کا دورہ کرتے ہوئے صدر شیوسینا ادھو ٹھاکرے سے ملاقات کرنا چاہئے۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT