Tuesday , May 22 2018
Home / شہر کی خبریں / بینکوں کے انضمام سے حکومت کو سالانہ 9.6 فیصد کی آمدنی

بینکوں کے انضمام سے حکومت کو سالانہ 9.6 فیصد کی آمدنی

قرض نادہندگان پر قابو پانے کی منصوبہ بندی ، کھاتہ داروں پر اثر نہیں پڑے گا
حیدرآباد۔20ڈسمبر(سیاست نیوز) بینکوں کے انضمام سے حکومت کو سالانہ 9.6 فیصد کی آمدنی میں اضافہ ہوگا اور حکومت انضمام کے ذریعہ ملک کے بینکوں میں موجود قرض نا دہندگان پر کنٹرول کا منصوبہ رکھتی ہے اسی لئے ملک کے عوامی شعبہ کے بینکوں کو جن میں حکومت کے 50 فیصد اثاثہ موجود ہوتے ہیں انہیں ضم کرتے ہوئے 6تک کرنے کے اقدامات کئے جا رہے ہیں۔ محکمہ فینانس کے ذرائع کے مطابق بینکوں کے انضمام کے فوری بعد جو صورتحال پیدا ہوگی اس کے مطابق بینکوں کی شاخوں میں کوئی کمی نہیں لائی جائے گی اور موجودہ نظام جوں کا توں کام کرے گا لیکن بتدریج انضمام کے بعد باقی رہ جانے والے بینکوں کی خدمات کا جائزہ لیتے ہوئے اس کی شاخوں کو بہتر بنانے کے اقدامات کئے جائیں گے۔ حکومت کا کہناہے کہ بینکوں کے انضمام کا عوام پر چیک بک کی تبدیلی کے علاوہ کوئی اور اثر نہیں پڑے گا لیکن ان بینکوں کے ذریعہ قرض حاصل کرنے والوں کی تعداد کا حقیقی اندازہ لگا یاجاسکے گا۔ بتایاجاتاہے کہ مرکزی حکومت کی جانب سے بینکوں کے انضمام کی پالیسی کے سلسلہ میں ماہرین معاشیات سے بھی رائے حاصل کی جاچکی ہے اور اس کے ذریعہ حکومت بینکوں پر عائد ہونے والے اخراجات اور قرض نا دہندگان کی تعداد میں کمی لانے کی کوشش کر رہی ہے ۔ وزارت فینانس کا استدلال ہے کہ بینکوں کے انضمام کے ذریعہ معیشت کو مستحکم کرنے کا عمل کوئی نئی بات نہیں ہے اور اس کا کوئی منفی اثر عوام یا کھاتہ داروں پر نہیں پڑے گا لیکن عوام میں پائی جانے والی بے چینی کے متعلق کہا جا رہاہے کہ ہر بینک میں بینک کے اپنے منافع کے اعتبار سے سود ہیں اور اسی طرح جاری کئے جانے والے قرضہ جات پر بھی بینکوں کی جانب سے سود عائد کرنے کی منفرد اسکیمات موجود ہیں لیکن اس انضمام کے بعد سب بینکوں پر یکساں قوانین لاگو ہونے لگ جائیں گے۔ محکمہ فینانس کے عہدیداروں کا کہناہے کہ بینکوں کے انضمام سے غیر کارکرد کھاتہ داروں کے کھاتوں کو بھی ختم کرنے کی سہولت حاصل ہو جائے گی اور انضمام کے بعد اس بات کا پتہ چل جائے گا کہ کس بینک میں کونسا کھاتہ غیر کارکرد ہے جسے بند کیا جانا چاہئے۔ مرکزی حکومت کی جانب سے کئے جانے والے ان اقدامات کو بینک کاری شعبہ کے لئے انتہائی مستحکم و مثبت تصور کیا جا رہاہے اور کہا جارہا ہے کہ بینکوں سے قرض حاصل کرتے ہوئے بیک وقت ایک سے زائد بینکوں کے قرض کا دیوالیہ کرنے والوں کو روکا جا سکے گا۔

TOPPOPULARRECENT