Sunday , December 17 2017
Home / سیاسیات / بیک وقت لوک سبھا اور اسمبلیوں کے انتخابات

بیک وقت لوک سبھا اور اسمبلیوں کے انتخابات

پارلیمانی قائمہ کمیٹی کی رپورٹ میں انوکھی تجاویز
نئی دہلی۔/17ڈسمبر، ( سیاست ڈاٹ کام ) ایک پارلیمانی کمیٹی نے ملک بھر میں بیک وقت اسمبلیوں اور پارلیمنٹ کے انتخابات منعقد کروانے کی پرزور وکالت کی ہے اور یہ تجویز پیش کی کہ یہ کام مستقبل قریب انجام دیا جاسکتا ہے۔ تاہم بیشتر سیاسی جماعتوں نے قائمہ کمیٹی کے سوالنامہ کے جواب دیتے ہوئے کہا کہ بظاہر یہ مقصد تو نیک ہے لیکن عمل آوری مشکل ہے۔اگرچیکہ کمیٹی کا یہ احساس ہے کہ مستقبل قریب میں ہر پانچ سال میں ایک مرتبہ بیک وقت اسمبلی اور لوک سبھا کے انتخابات منعقد نہیں کئے جاسکتے لیکن بتدریج اس سمت میں پیشرفت کی جاسکتی ہے۔ جہاں پر ریاستی اسمبلیوں کی میعاد مکمل اور تخفیف یا توسیع ہوسکتی ہے لاء اینڈ پرسونل ( قانون اور سرکاری عملہ ) سے متعلق اسٹانڈنگ کمیٹی نے اپنی رپورٹ میں کہا کہ ریاستی اسمبلیوں اور لوک سبھا کے انتخابات بیک وقت منعقد کرنے کی تجویز قابل عمل ہے ۔ پارلیمنٹ میں آج پیش کردہ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ انتخابی قواعد کے مطابق ایوان کی تکمیل میعاد سے 6ماہ قبل بھی انتخابات منعقد کروائے جاسکتے ہیں۔ تاہم ایمرجنسی کے نفاذ کی صورت میں ایوان کی میعاد میں توسیع نہیں دی جاسکتی۔ کمیٹی نے بیک وقت انتخابات منعقد کروانے کیلئے متبادل اور قابل عمل طریقہ کار کی سفارش کی ہے۔ علاوہ ازیں کمیٹی نے پارلیمنٹ کے وسط مدتی اور بعض اسمبلیوں کے بیک وقت انتخابات کے مختلف پہلوؤں کا بھی جائزہ لیا تاہم اس اندیشے کا بھی اظہار کیا کہ مذکورہ سفارشات پر تمام سیاسی جماعتوں کی اتفاق رائے نہیں ہوسکتی۔ پارلیمنٹ میں کانگریس اور ترنمول کانگریس نے ان تجاویز کو مسترد کردیا جبکہ انا ڈی ایم کے، آسام گن پریشد اور شرومنی اکالی دل نے تائید کی ہے اور این سی پی نے اسے ناقابل عمل قرار دیا تو سی پی آئی نے ذہنی تحفظات کا اظہار کیا ہے۔

TOPPOPULARRECENT