Wednesday , September 19 2018
Home / شہر کی خبریں / بیگم بازار میں مسجد کو شہید کرنے کی کوشش ناکام

بیگم بازار میں مسجد کو شہید کرنے کی کوشش ناکام

حیدرآباد۔ 8۔ڈسمبر (سیاست نیوز) بیگم بازار کے علاقہ میں آج ایک مسجد کو شہید کرنے کی کوششوں کو مقامی افراد اور وقف بورڈ کی فوری مداخلت سے ناکام بنادیا گیا۔ قدیم مسجد منوری جو وقف ریکارڈ میں مسجد مہدویہ کے نام سے درج ہے، اسے غیر آباد ظاہر کرتے ہوئے منہدم کرنے کی کوشش کی گئی۔ مسجد کے فرسٹ فلور کو مکمل طور پر منہدم کردیا گیا۔ اطلاع ملتے ہ

حیدرآباد۔ 8۔ڈسمبر (سیاست نیوز) بیگم بازار کے علاقہ میں آج ایک مسجد کو شہید کرنے کی کوششوں کو مقامی افراد اور وقف بورڈ کی فوری مداخلت سے ناکام بنادیا گیا۔ قدیم مسجد منوری جو وقف ریکارڈ میں مسجد مہدویہ کے نام سے درج ہے، اسے غیر آباد ظاہر کرتے ہوئے منہدم کرنے کی کوشش کی گئی۔ مسجد کے فرسٹ فلور کو مکمل طور پر منہدم کردیا گیا۔ اطلاع ملتے ہی مقامی افراد نے نہ صرف احتجاج کیا بلکہ اسپیشل آفیسر وقف بورڈ جلال الدین اکبر کو اس کی اطلاع دی ۔ بتایا جاتا ہے کہ 169.6 مربع گز اراضی پر محیط یہ مسجد وقف ریکارڈ میں موجود ہیں اور متولی کے طور پر سید احمد منوری ولد سید ابراہیم منوری کا نام درج ہے لیکن ان کے غیاب میں فہیم نامی کنٹراکٹر نے مسجد کے چھت کے انہدام کی کارروائی شروع کی۔ وقف بورڈ کی شکایت پر پولیس نے اس کنٹراکٹر کو حراست میں لیکر تحقیقات کا آغاز کردیا ہے ۔ جناب جلال الدین اکبر نے وقف بورڈ کے عہدیداروں کے ہمراہ مسجد کا معائنہ کیا اور پولیس کے اعلیٰ عہدیداروں کو اس کی اطلاع دی ۔ بتایا جاتا ہے کہ اس مسجد کو غیر آباد مسجد کا نام دیکر اسے منہدم کرنے کی سازش رچی گئی جن کے پس پردہ لینڈ مافیا سے وابستہ بعض افراد کارفرما ہیں۔ مسجد کی چھت کے انہدام کے بارے میں جب دریافت کیا گیا تو کنٹراکٹر نے یہ بہانہ بنایا کہ نئی مسجد تعمیر کرنے کیلئے چھت کو منہدم کیا جارہا ہے حالانکہ موجودہ چھت کافی مضبوط ہے اور اسے تبدیل کئے بغیر ایک اور منزل بآسانی تعمیر کی جا سکتی ہے ۔ اسپیشل آفیسر وقف بورڈ نے ریٹائرڈ ڈپٹی سپرنٹنڈنٹ پولیس عظمت اللہ کی قیادت میں ایک تحقیقاتی ٹیم تشکیل دی ہے جو مسجد کے وقف ریکارڈ کی بنیاد پر اطراف کی اراضی کا سروے کرے گی۔ انہوں نے بتایا کہ مقامی افراد نے شکایت کی ہے کہ متولی نے مسجد سے متصل کھلی اراضی حالیہ عرصہ میں فروخت کردی۔ اسپیشل آفیسر نے مسجد کے معائنہ کے دوران ڈپٹی کمشنر پولیس وینکٹیشور راؤ اور اسسٹنٹ کمشنر پولیس گوشہ محل رام گوپال ریڈی کو طلب کرتے ہوئے تفصیلات سے واقف کرایا۔ مسجد کے تحفظ کیلئے پولیس پیکٹس تعینات کردیا گیا۔ وقف بورڈ کی شکایت پر پولیس شاہ عنایت گنج نے کرائم نمبر 378/14 کے تحت متولی کے خلاف آئی ٹی سی کی دفعات 295, 427 اور 447 کے تحت مقدمہ درج کرلیا ہے۔ اسپیشل آفیسر وقف بورڈ نے بتایا کہ مسجد سے متعلق تمام ریکارڈ موجود ہے اور بہر صورت مسجد کا تحفظ کیا جائے گا۔ پولیس اس بات کا پتہ چلانے کی کوشش کر رہی ہے کہ کس کی ایماء پر کنٹراکٹر نے انہدامی کارروائی شروع کی تھی۔ واقعہ کی اطلاع ملتے ہی وقف پروٹیکشن کمیٹی کے قائدین عثمان محمد الہاجری ، لبنیٰ سروت، مولانا طارق قادری ، وحید پاشاہ قادری ، ایم اے باسط اور دوسروں نے مسجد کا معائنہ کیا اور خاطیوں کے خلاف سخت کارروائی کا مطالبہ کیا۔ جناب جلال الدین اکبر نے کہا کہ وہ مقامی مسلمانوں سے بات چیت کرتے ہوئے مسجد کی دوبارہ تعمیر اور اسے آباد کرنے کے اقدامات کریں گے۔

TOPPOPULARRECENT