Sunday , January 21 2018
Home / شہر کی خبریں / بی بی نگر آل انڈیا انسٹیٹیوٹ آف میڈیکل سائنس کیلئے عنقریب کارروائی مکمل

بی بی نگر آل انڈیا انسٹیٹیوٹ آف میڈیکل سائنس کیلئے عنقریب کارروائی مکمل

960 بستروں کا عصری ادارہ ہوگا، وزیرصحت لکشماریڈی کا ایوان اسمبلی میں بیان

960 بستروں کا عصری ادارہ ہوگا، وزیرصحت لکشماریڈی کا ایوان اسمبلی میں بیان
حیدرآباد۔/15مارچ، ( سیاست نیوز) وزیر صحت لکشما ریڈی نے ایوان اسمبلی کو بتایا کہ نلگنڈہ کے بی بی نگر علاقہ میں آل انڈیا انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل سائنسیس کے قیام کی کارروائی جلد ہی مکمل کرلی جائے گی۔ جس کے تحت 960بستروں پر مشتمل عصری سہولتوں سے آراستہ انسٹی ٹیوٹ قائم کیا جائے گا جس میں 300 بستر سوپر اسپیشالیٹی سے متعلق ہوں گے۔ انہوں نے کہا کہ تقسیم آندھرا پردیش قانون میں اگرچہ آل انڈیا انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل سائنسیس کے قیام کی آندھرا پردیش میں منظوری دی گئی لیکن چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ نے خصوصی دلچسپی لے کر تلنگانہ کیلئے اس ادارہ کے قیام کی مرکز سے منظوری حاصل کی۔ انہوں نے بتایا کہ حکومت نے مرکز کو تجویز پیش کی ہے کہ بی بی نگر علاقہ میں نمس کے قیام کے سلسلہ میں جو اراضی مختص کی گئی تھی وہاں آل انڈیا انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل سائنسیس قائم کیا جائے۔ انہوں نے بتایا کہ چیف منسٹر اور ٹی آر ایس کے ارکان پارلیمنٹ نے اس سلسلہ میں وزیر اعظم اور مرکزی وزیر صحت سے نمائندگی کی۔ وزیر صحت نے بتایا کہ اس انسٹی ٹیوٹ کے قیام سے حیدرآباد کے بشمول 6 اضلاع کے عوام کو فائدہ ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ نلگنڈہ کے بی بی نگر علاقہ میں نمس کے قیام کیلئے 150ایکر اراضی الاٹ کی گئی تھی اور وہاں عمارت بھی تعمیر کردی گئی تاہم آل انڈیا انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل سائنسیس کے قیام کیلئے مزید 150 ایکر اراضی حاصل کی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ سوپر اسپیشالیٹی کے علاوہ 100 نشستوں کے ساتھ میڈیکل کالج بھی قائم کیا جائے گا۔ مرکزی حکومت نے انسٹی ٹیوٹ کے قیام کے سلسلہ میں جن شرائط کا ذکر کیا تھا اس کی تفصیلات روانہ کردی گئی ہیں۔ بہت جلد مرکز کی ٹیکنیکل کمیٹی بی بی نگر کا دورہ کرے گی۔ انہوں نے کہا کہ عمارت تعمیر کردی گئی ہے اور آل انڈیا انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل سائنسیس کے قیام کو جلد ہی منظوری حاصل ہوجائے گی۔ بی جے پی کے این وی ایس ایس پربھاکر اور سی ایچ رام چندرا ریڈی نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ اس ادارہ کے قیام کی کارروائی میں تیزی پیدا کرے۔ انہوں نے بتایا کہ بی جے پی ارکان اسمبلی کی نمائندگی پر مرکزی وزیر صحت ہرش وردھن نے تلنگانہ میں آل انڈیا انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل سائنسیس کے قیام کو منظوری دی ہے۔ رام چندرا ریڈی نے انسٹی ٹیوٹ کے قیام میں تاخیر پر اعتراض کیا۔ انہوں نے کہا کہ ریاستی حکومت کو چاہیئے تھا کہ وہ بی بی نگر کے بجائے کسی اور ضلع میں قومی انسٹی ٹیوٹ قائم کرتی اور بی بی نگر میں طئے شدہ پروگرام کے مطابق نمس قائم کیا جاتا۔ انہوں نے کہا کہ اس طرح تلنگانہ میں طبی سہولتوں کے دو بڑے ادارے قائم ہوسکتے تھے۔ ریڈی نے نمس کے مقام کو قومی انسٹی ٹیوٹ میں تبدیل کرنے کی مخالفت کی۔ انہوں نے کہا کہ ڈاکٹر وائی ایس راج شیکھر ریڈی حکومت نے عمارت کی تعمیر کیلئے 93کروڑ روپئے کنٹراکٹر کو جاری کردیئے تھے۔ اب وہاں نمس کے بجائے ایمس کے قیام سے سرکاری خزانہ کو بھاری نقصان ہوگا۔ وزیر صحت لکشما ریڈی نے تیقن دیا کہ حکومت ایمس کے قیام کی عاجلانہ منظوری اور تکمیل کو یقینی بنائے گی۔

TOPPOPULARRECENT