Tuesday , June 19 2018
Home / سیاسیات / بی جے وائی ایم کے جلوس پر دو دن کا حکم التواء

بی جے وائی ایم کے جلوس پر دو دن کا حکم التواء

کولکتہ ۔ /12 جنوری (سیاست ڈاٹ کام) کلکتہ ہائیکورٹ نے آج بھارتیہ جنتا یووا مورچہ کو ہدایت دی کہ اس کے جلوس پر دو روز کیلئے امتناع عائد کردیا گیا ہے ۔ کیونکہ ہجوم کے حملے کا اندیشہ ہے ۔ عدالت نے ایک خصوصی عہدیدار پرہجوم حملے کے اندیشے پر تعینات کردیا گیا ہے ۔ ہائیکورٹ کی جانب سے اجازت ملنے پر بی جے وائی ایم موٹر سائیکل جلوس سنکلپ پرتیرودھ یاترا کا آغاز کونٹائی سے ہوگا اور یہ جلوس شام کو اختتام پذیر ہوگا ۔ جلوس کی مخالفت مغربی بنگال کی حکومت میں بھی کی ہے اور کہا ہے کہ اس کے پاس پولیس پولیس عملہ کی کمی ہے کیونکہ گنگا ساگر میلہ جاری ہے ۔ ایک ڈیویژن بنچ نے جو کارگزار چیف جسٹس جے بھٹاچاریہ اور جسٹس اے بنرجی پر مشتمل ہے ۔ ہدایت دی تھی کہ مزید نقل و حرکت /15 جنوری تک ملتوی کردی گئی ہے ۔ چنانچہ بی جے وائی ایم جلوس کا اختتام /20 جنوری کو کیا جائے ۔ یہ مقررہ پروگرام سے دو دن تاخیر سے ختم ہوگا ۔ ہایکورٹ نے ایک خصوصی عہدیدار کا بھی تقرر کیا ہے جو انتظامات کا جائزہ لے گا ۔ انہوں نے عدالت سے کہا کہ جلوس کو دو دن کیلئے ملتوی کردیا جائے ۔ ایڈوکیٹ جنرل کشور دتا نے عدالت میں بیان دیتے ہوئے کہا کہ اس سلسلے میں ایف آئی آر درج کروائی گئی ہے ۔ حالانکہ ایسا کوئی واقعہ پیش نہیں آیا جس کی بناء پر کسی کو گرفتار کیا جاسکتا ۔ انہوں نے گزارش کی کہ جلوس کو /26 جنوری تک ملتوی رکھا جائے ۔ کیونکہ پولیس عملہ کی گنگا ساگر میلہ کی بنا پر قلت پیدا ہوگئی ہے ۔ اور لاکھوں یاتری ملک کے گوشہ گوشہ سے بنگال پہونچے ہیں ۔

TOPPOPULARRECENT