Tuesday , December 12 2017
Home / شہر کی خبریں / بی جے پی، آر ایس ایس کا پولٹیکل فرنٹ، ملک کو ہندو راشٹر بنانے کوشاں

بی جے پی، آر ایس ایس کا پولٹیکل فرنٹ، ملک کو ہندو راشٹر بنانے کوشاں

پدم بھوشن واپس کرنے والے سائنسداں پروفیسر پی ایم بھارگوا کا سی پی آئی کی یوم تاسیس تقریب سے خطاب
حیدرآباد ۔ 14 نومبر (سیاست نیوز) بھارتیہ جنتا پارٹی، آر ایس ایس کا پولیٹکل فرنٹ ہے جو تقسیم کے نظریہ پر گامزن ہے تاکہ ہندو اکثریت کو بنیاد بناکر جمہوری ہندوستان کو ہند وراشٹرا بنانے کی کوشش میں ہے۔ بانی سی سی ایم بی وممتاز سائنس داں پدما بھوشن ایوارڈ یافتہ پروفیسر پی ایم بھارگوا نے کمیونسٹ پارٹی آف انڈیا کی 90ویں یومِ تاسیس تقریب کے موقع پر سی پی آئی ہیڈ کوارٹر مخدوم بھون میںمنعقدہ ایک سمینار سے خطاب کے دوران یہ بات کہی۔ قومی سکریٹری سی پی آئی ایس سدھا کر ریڈی‘ جسٹس چندرا کمار کے علاوہ سی پی آئی تلنگانہ اسٹیٹ سکریٹری چاڈا وینکٹ ریڈی نے بھی مخاطب کیا۔سی پی آئی قومی عاملہ رکن وسابق رکن پارلیمنٹ راجیہ سبھا جناب سید عزیز پاشاہ ‘ رکن اسمبلی رویندر کمار‘ پالا وینکٹ ریڈی کے علاوہ سینکڑو ںکمیونسٹ قائد ین او رکارکنوں نے شرکت کی۔مسٹر پی یم بھارگوانے اپنے سلسلہ خطاب کو جاری رکھتے ہوئے کہاکہ جمہوری نظام کے خلاف جاکر بہار انتخابات میںکامیابی کے لئے بی جے پی قائدین کی جانب سے یگنہ کرنے کا بھی اس موقع پر ذکر کیا۔ پی ایم بھارگوا نے مزیدکہاکہ آر ایس ایس چیف موہن بھگوت نے ہندو سماج کی شادیوں کے متعلق اپنے ریمارکس میںعورت کی آزادی پر پابندی لگانے اور عورت کوشادی کے بعد اپنے گھروں تک محدود رکھنے کی بات کرتے ہوئے قومی سطح پر بی جے پی اور آرایس ایس کے نظریات کو پیش کیا ہے۔ انہو ںنے اپنی تقریر کے دوران عدم رواداری اور فرقہ پرستی کے بڑھتے واقعات پرحکومت ہند کی خاموشی کو تشویش ناک قراردیا او رکہاکہ بیف کا استعمال کرنے کے الزام پر ایک بے قصور شخص کاقتل کردیا گیاجبکہ بیف کے مسلئے پر گرما گرم مباحثہ کے بعد قومی سطح پر بیف درآمد کرنے والی کمپنیوں کے لائسنس کی اجرائی میںتیزی کے ساتھ اضافہ ہوا ہے ۔ مسٹر پی ایم بھارگوا نے آزادی اظہار خیال پر بڑھتی پابندیوں پر بھی تشویش ظاہر کی ۔ انہوں نے دلت طالب علم کی جانب سے اعلی ذات والوں کے خلاف مضمون لکھنے کے بعدشدت پسندوں کی جانب سے مذکورہ طالب علم کا اغوا کرنے اور اسے زدکوب کرنے کے واقعات کی بھی مذمت کی ۔ انہوں نے کھانے پینے‘ بولنے او رلکھنے کی آزادی پر بڑھتے تحدیدات اور فلمی صنعت سے لیکر تعلیمی اداروں میں فرقہ وارانہ منافرت رکھنے والے ذہن کے لوگوں کے تقررات کے سلسلہ پر بھی تعجب کا اظہار کرتے ہوئے کہاکہ بڑھتی عدم رواداری او ر فرقہ پرستی کے ضمن میں حکومت ہند بالخصوص وزیراعظم نریندر مودی کی خاموشی کو انہوں نے اپنی شدید تنقید کا نشانہ بنایا ۔ واضح رہے کہ بڑھتی عدم رواداری کے خلاف دانشواروں کے ایوارڈس واپسی میںپی ایم بھارگوا وہ پہلے سائنس داں تھے جنھوں نے اپنا پدمابھوشن ایوارڈ واپس کرتے ہوئے احتجاج بلند کیا تھا۔جسٹس چندرا کمار نے عدم رواداری کے خلاف ایوارڈس لوٹانے والوں کو خیر مقدم کرتے ہوئے کہاکہ ہندوستان کی آزادی کا اصل مقصد سرمایہ داروں کی بڑھتی اجارہ داری کو ختم کرنا ‘ غیرملکی کمپنیوں کی مخالفت کرتے ہوئے ہندوستان کو آزاد کیا تھا مگر آزادی کے بعد سے سیاسی جماعتوں نے دوبارہ ملک کو سرمایہ داروں کے حوالے کردیا۔ فرقہ پرستوں کی ساز ش کا منھ توڑ جواب دینے کا سہارا بہار کی عوام کے سر کیااو رکہاکہ بہار کی عوام نے اپنے دور اندیشی کا مظاہرہ کرتے ہوئے بہار سے فرقہ پرست طاقتوں کو مار بھگایا ہے۔انہوں نے بی جے پی کے اقتدار میںآنے کی اصل وجہہ کانگریس کی عوام دشمن پالیسیاں تھیںجس کو لے کرکانگریس کے خلاف بی جے پی اتحادی جماعتوں نے عوامی رائے قائم کی۔ انہوں نے کہاکہ ایف ڈی آئی‘ کسانوں کے ساتھ ناانصافی‘ بد عنوانی اور رشوت خوری کو بنیاد بناکر کانگریس کے خلاف محاذ آرائی کے ذریعہ اقتدار حاصل کیا۔ مگر اب بی جے پی اپنی ناکامیوں کو چھپانے کے لئے اپنی ماضی کی طرف گامزن ہے اور عوام میں نفرت پھیلارہی ہے تاکہ اصل موضوع سے عوام کو دھیان ہٹا یا جاسکے۔سی پی ائی کے قومی سکریٹری ایس سدھاکر ریڈی نے بی جے پی کو آر ایس ایس کے نظریات کے مطابق ملک کو چلانے کاذمہ دار ٹھرایا انہوں نے کہاکہ مہاتماگاندھی کے نظریات کو عام کرتے ہوئے پسماندگی کاشکار ممالک میںہندوستان کی سرپرستی کے ذریعہ ترقی لانے کا دعوی کرنے والے نریندر مودی  نے مہاتما گاندھی کے قاتل ناتھو رام گوڈسے کی جینتی کو سرکاری طور پر منانے کے اعلان پر خاموش تماشائی بنے ہوئے ہیں۔ انہوںنے مزیدکہاکہ آر ایس ایس ہندواکثریت کے نام پر ملک کو ہندوراشٹر ر بنانے کی حمایت کرنے والی تنظیم ہے۔

TOPPOPULARRECENT