Monday , November 19 2018
Home / Top Stories / بی جے پی اقتدار میں آتے ہی حالات بدل گئے ، وزیراعظم کا دعویٰ

بی جے پی اقتدار میں آتے ہی حالات بدل گئے ، وزیراعظم کا دعویٰ

مجھے صرف نوٹ بندی اور جی ایس ٹی کے پیمانے پر ہی نہ تولیں ،اسمبلی اور لوک سبھا انتخابات ایک ساتھ کرانے کی وکالت

نئی دہلی، 20 جنوری (سیاست ڈاٹ کام) وزیر اعظم نریندر مودی نے کہا ہے کہ 2014 میں بی جے پی کے اقتدار میں آتے ہی ملک میں حالات مکمل طور پر بدل گئے ۔ مودی نے کل دیر شام ایک خانگی نیوز چیانل کے ساتھ انٹرویو میں کہا کہ 2014 سے پہلے دنیا یہ نہیں دیکھتی تھی کہ ہندوستان کیا کہتا ہے ۔لیکن 2014 میں جب ہم اقتدار میں آئے تو حالات مکمل طور پر بدل گئے ۔ سب سے بڑی بات یہ ہے کہ ہندوستان میں 30 سال بعد مکمل اکثریت والی حکومت آئی ہے جو کہ دنیا میں ایک بہت بڑی اہمیت رکھتی ہے ۔ یہ پہلے دن سے ہی نظر آرہاہے ۔جب سے ہماری حکومت آئی، ہندوستان گھر میں اچھا کر رہا ہے ، اس لئے دنیا اسے قبول کر رہی ہے ۔ وزیراعظم نے کہا کہ ان کی حکومت اقتدار میں آنے کے پہلے دن سے ہی گڈ گورننس اور شفافیت پر زیادہ توجہ دینا شروع کر دی تھی۔ انہوں نے کہا کہ جب دنیا ہندوستان کو ایز آف ڈوئنگ بزنس میں 142 سے 100 رینک پر دیکھتی ہے ، تو یہ ان کے لئے بڑی بات ہے ۔ دنیا کی سب سے بڑی جمہوریت کے لئے 125 کروڑ ہندوستانیوں کی آواز سننا ضروری ہے ۔ یہ پوچھنے پر کہ روزگار کی فراہمی میں ناکام رہنے کے لئے ان کی حکومت کی خاصی تنقید ہو رہی ہے ، مسٹر مودی نے کہا کہ گزشتہ ایک سال میں منظم شعبے میں 70 لاکھ ملازمین کے پی ایف اکاؤنٹ کھلے ہیں۔ ایک سال میں 10 کروڑ لوگوں نے کرنسی اسکیم کا فائدہ لیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ مسئلہ یہ ہے کہ دفاتر کے باہر دکان لگانے والے افراد کی کمائی کو ہم روزگار میں شامل نہیں کر رہے ہیں۔ وہ کسی بھی اعداد و شمار میں شامل نہیں ہوتے ہیں ۔مصنوعات و خدمات ٹیکس (جی ایس ٹی) اور نوٹ بندی کے فیصلے پر این ڈی اے حکومت کی ہونے والی نکتہ چینیوں کے درمیان نریندر مودی نے آج کہا کہ لوگوں کو انہیں صرف نوٹ بندي اور جی ایس ٹی سے ہی نہیں تولنا چاہئے ۔

مسٹر مودی نے ایک پرائیویٹ ہندی نیوز چینل کے ساتھ انٹرویو میں کہا کہ صرف نوٹ بندي اور جی ایس ٹی سے ہی میری پیمائش مت کیجئے ۔ ہم نے اقتصادی اصلاحات کئے ہیں، ٹوائلٹ بنوائے اور 18000 دیہاتوں میں بجلی پہنچائیں ہیں۔ جی ایس ٹی کے نفاذ کے بعد اپنی حکومت کی ہونے والی تنقید پر انہوں نے کہاکہ جی ایس ٹی کی کامیابی وفاقی ڈھانچے کی طاقت میں ہے ۔ اس کو ایڈجسٹ کرنے میں وقت تو لگتا ہے ، لیکن اس کے نتائج اچھے ہوں گے ۔ وزیر اعظم نے کہا کہ ہندوستان کے عوام نے ہمیں بہتر ی لانے کے لئے منتخب کیا ہے ، نہ کہ صرف الیکشن جیتنے کے لئے ۔ اگر ہماری اصلاحات سے لوگوں کو فائدہ ہوتا ہے تو اس کا اثر انتخابات پر پڑے گا، جیسا کہ ہم نے اتر پردیش اور گجرات میں دیکھا ہے ۔ انہوں نے ساتھ ہی یہ بھی کہا کہ وہ اسمبلی اور لوک سبھا کے انتخابات ایک ساتھ کرنے پر اتفاق کرتے ہیں۔مودی نے کہاکہ ایک کے بعد ایک انتخابات ہوتے رہتے ہیں، اس سے سیاستدانوں کی توجہ دوسری طرف رہتی ہے ۔ سال میں ایک بار جشن کی طرح انتخابات بھی ایک مخصوص وقت میں ہونے چاہئے ۔ ریاستوں کے 80 سے 100 بڑے افسروں کے طور پر دوسری ریاستوں میں بھیجا جاتا ہے ۔ ایسے میں ریاست کس طرح کام کرے گی۔ سکیورٹی دستوں کے جوان سال میں 100 سے 200 دن انتخابی ڈیوٹی میں لگے رہتے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ اگر اسمبلی اور لوک سبھا کے انتخابات ایک ساتھ کرائے جاتے ہیں تو اس سے کروڑوں روپے بچائے جا سکتے ہیں۔ پولنگ بوتھ پر بڑی تعداد میں افرادی قوت تعینات ہوتی ہے ۔ جس میں کافی بڑی رقم خرچ ہوتی ہے ۔ ان دونوں انتخابات کو ساتھ ساتھ ہونا چاہئے ۔ اس کے ایک ماہ بعد مقامی بلدیاتی انتخابات ہونے چاہیے ۔ سب مل کر ایسا سوچیں گے تو یہ ممکن ہو سکتا ہے ۔ ایک بار بحث شروع ہو تو آگے کی راہ نکل آئے گی ۔

TOPPOPULARRECENT