Saturday , June 23 2018
Home / Top Stories / بی جے پی تبدیلی مذہب کے تنازعہ کو بھڑکارہی ہے

بی جے پی تبدیلی مذہب کے تنازعہ کو بھڑکارہی ہے

نئی دہلی 12 ڈسمبر (سیاست ڈاٹ کام)جنتا پریوار اور بائیں بازو کی پارٹیوں کے قائدین نے آج مرکز کی اس تجویز پر سخت تنقید کی کہ تبدیلی مذہب کے خلاف قانون بنایا جائے انہو ںنے کہا کہ ایسی کوئی بھی قانون سازی دستور کے خلاف ہوگی اور الزام عائد کیا کہ بی جے پی چاہتی ہے کہ ہندو ووٹوں کو معاشرے میں صف بندی کے ذریعہ مرتکز کیا جائے۔ انہوں نے کہا کہ ب

نئی دہلی 12 ڈسمبر (سیاست ڈاٹ کام)جنتا پریوار اور بائیں بازو کی پارٹیوں کے قائدین نے آج مرکز کی اس تجویز پر سخت تنقید کی کہ تبدیلی مذہب کے خلاف قانون بنایا جائے انہو ںنے کہا کہ ایسی کوئی بھی قانون سازی دستور کے خلاف ہوگی اور الزام عائد کیا کہ بی جے پی چاہتی ہے کہ ہندو ووٹوں کو معاشرے میں صف بندی کے ذریعہ مرتکز کیا جائے۔ انہوں نے کہا کہ برسر اقتدار بی جے پی حقیقی مسائل سے عوام کی توجہ ہٹانے کیلئے تبدیلی مذہب کے تنازعہ کو بھڑکا رہی ہے۔ صدر آر جے ڈی لالو پرساد اور صدر جے ڈی یو شرد یادو جنہوں نے بہار میں ایک دوسرے سے ہاتھ ملا لیا ہے اور تمام جنتا پریوار کی پارٹیوں کو دوبارہ متحد کرنے کی کوشش کررہے ہیںاور ان کے انضمام کیلئے جدوجہد کررہے ہیں، الزام عائد کیا کہ بی جے پی چاہتی ہے کہ معاشرہ میں صف بندی کے ذریعہ ہندو ووٹوں کو مرتکز کیا جائے۔ شرد یادو نے آج تک پر ایک پروگرام ’’ایجنڈہ ‘‘ میں کہا کہ دستور عوام کو آزادی دیتا ہے کہ وہ کسی بھی پارٹی میں شامل ہوجائیں کوئی بھی مذہب اختیار کریں بی جے پی ایک عجیب پارٹی ہے وہ درحقیقت ’’تبدیلی مذہب‘‘ کررہی ہے ۔ انہوں نے کسی بھی قیمت پر بعض مجبور لوگوں کا مذہب تبدیل کرنے کا ارادہ کرلیا ہے۔ لالو پرساد اور سی پی آئی ایم کے سیتا رام یچوری نے ان کے نقطہ نظر سے اتفاق کیا ۔لالو نے کہا کہ بی جے پی کی تاریخ اقلیتوں کی عبادت گاہوں میں ’’توڑ پھوڑ‘‘ اور ان مذاہب کے ماننے والوں کو ’’دہشت زدہ‘‘کرنے کی رہی ہے۔ وہ ہمیشہ تبدیلی مذہب کی مخالفت کرتے رہے ہیں لیکن دوغلی پالیسی پر عمل پیرا ہیں۔ انہوں نے کہا کہ بی جے پی نے جھوٹے وعدے کئے ہیں۔ اس کی حکومت نے کالا دھن واپس لانے ، نوجوانوں کو ملازمتیں فراہم کرنے کا تیقن دیا تھا لیکن اب ’’توجہ ہٹانے‘‘ کی چالیں چل رہی ہے کیونکہ وہ اپنے تیقنات کی تکمیل سے قاصر ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ غبارہ (مودی حکومت) بہت جلد زمین بوس ہوجائے گا۔ یہ اس لئے اُڑ رہا ہے کیونکہ اس میںجھوٹے وعدوں کی ہوا بھری ہوئی ہے ۔لوگوں کو احساس ہوگیا ہے کہ اُن کے ساتھ دھوکہ کیا گیا ہے ۔ انہوں نے دعوی کیا کہ مرکزی حکومت چھ ماہ میں زوال پذیر ہوجائے گی ۔ اتحاد کے اپنے اقدام کے بارے میں انہو ںنے کہا کہ وہ مشترکہ طور پر آئندہ مہینوں میں ملک گیر دورہ کریں گے تا کہ بی جے پی حکومت کی ناکامیوں کے بارے میں عوام کا شعور بیدار کیا جاسکے ۔ صدر سماج وادی پارٹی ملائم سنگھ یادو کو تمام پارٹیوں کو متحدکرنے کی ذمہ داری دی گئی ہے ۔ سی پی آئی ایم کی اس تجویز کو مسترد کرتے ہوئے کہ کٹر حریف ممتابنرجی کے ساتھ ہاتھ ملاتے ہوئے مخالف بی جے پی اتحاد قائم کیا جائے ۔ یچوری نے کہا کہ سیاست صرف حساب کا مسئلہ نہیں ہے اس کا مقصد ووٹوں کی تقسیم روکنا ہے لیکن یہ عوام تک جلسہ عام کی صورت میں جانا چاہئے تا کہ ان کا ایک سیاسی ایجنڈہ ہوسکے ۔

TOPPOPULARRECENT