Monday , September 24 2018
Home / سیاسیات / بی جے پی حکومت غیر متزلزل ہونے کے وہم کا خاتمہ

بی جے پی حکومت غیر متزلزل ہونے کے وہم کا خاتمہ

تحریک عدم اعتماد سے

تلگو دیشم کی تحریک عدم اعتما د ’’خالصتاً سیاسی مجبوری‘‘۔ شیوسینا کا اداریہ

ممبئی 19مارچ ۔(سیاست ڈاٹ کام) شیوسینا نے آج ایک بار بھر اپنے حلیف جماعت بی جے پی پر طنز کرتے ہوئے کہا کہ تلگو دیشم کی جانب سے پیش کی جانے والی تحریک اعتماد کی قراردادنے اس وہم کا خاتمہ کردیا ہے کہ بی جے پی زیر قیادت این ڈی اے حکومت کو ایسا منڈٹ حاصل ہے جس سے آئندہ 25سال تک حکومت کو غیر متزلزل نہیںکیا جاسکتا۔ تاہم شیو سینا نے ساتھ ہی یہ الزام بھی عائدکیا ہے کہ تلگو دیشم کی جانب سے پیش کیا جانے والا تحریک عدم اعتما د ’’خالصتاً سیاسی مجبوری‘‘پر مبنی ہے۔انہونے کہا کہ اگرچہ بی جے پی کو درکار اکثریت حاصل ہے اور پارلیمنٹ میں پیش کیا جانے والا تحریک اعتماد کو شکست ہوجائے گی،تاہم یہ حقیقت ہے کہ اس قراداد نے اس وہم کا خاتمہ کردیا ہے کہ بی جے پی زیر قیادت مرکزی حکومت کو آئندہ 25 سالو ںتک شکست نہیں دیجاسکتی۔ شیو سینا ترجمان’’ سامنا‘‘ کے ادرایہ میںلکھے گئے مضمون میں کہا گیا ہے کہ تلگو دیشم نے مرکزی حکومت کے اپنے حلیف کے ساتھ اپنی چارسالہ رفاقت محض اسلئے ختم کی ہے کہ ،آندھرا پردیش کو خصوصی زمرے کے موء قف کو مرکز نے قبول کرنے سے انکار کردیا ہے ۔جسکے بعد سب سے پہلے وائی ایس آر کانگریس نے تحریک اعتماد پیش کرنے اعلان کیا تھا۔شیوسینا نے مزید کہا کہ 2019میں وہ جذبات پھوٹ پڑینگے جو آج مودی حکومت کے خلاف عوام میں پائے جارہے ہیں۔اور اس وقت تحریک عدم اعتماد پوری اکثریت کے ساتھ لوک سبھا میں منظور کرلی جائے گی۔بہارانتخابات کا حوالہ دیتے ہوئے شیو سینا نے کہا کہ بہار اسمبلی سے پہلے ہمارے وزیر اعظم نے ماہر ہراج نظر آرہے تھے ،جہاں انہونے ریاست بہار کی ترقی کیلئے 50ہزار سے 1.5لاکھ کروڑ روپے کا فنڈ دینے کا وعدہ کیا تھا تاہم انتخابات میں شکست کے بعد 1.5روپے بھی بہار کو نہیں دئے گئے۔یہی وجہ کہ نتیش کمار آج بھی خصوصی موء قف کا مطالبہ کررہے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT