Wednesday , November 22 2017
Home / ہندوستان / بی جے پی لیڈروں کے قتل کی تحقیقات این آئی اے کے حوالے

بی جے پی لیڈروں کے قتل کی تحقیقات این آئی اے کے حوالے

بیرونی ممالک سے سازشی عناصر کو واپس لانے کیلئے حکومت گجرات کا اقدام
گاندھی نگر۔/19نومبر، ( سیاست ڈاٹ کام ) حکومت گجرات نے یہ فیصلہ کیا ہے کہ بھڑوچ میں 2بی جے پی لیڈروں کے قتل کی تحقیقات نیشنل انوسٹگیشن ایجنسی کے حوالے کردی جائے ۔ باور کیا جاتا ہے کہ قتل کیس کے اصل سازشی عناصر ہندوستان کے باہر ہیں اور دہشت گردوں کے ساتھ ربط ضبط رکھتے ہیں۔ ڈائرکٹر جنرل پولیس مسٹر پی سی ٹھاکر نے آج بتایا کہ این آئی اے تحقیقات کی تجویز پرچیف منسٹر آنند بین پٹیل نے دستخط کردیئے ہیں۔انہوں نے بتایا کہ مرکزی وزارت داخلہ کو روانہ تجویز میں این آئی اے تحقیقات کیلئے مرکز سے درخواست کی گئی ہے۔ این آئی اے ایکٹ کے مطابق مقامی پولیس کی تحقیقات میں کسی بھی کیس میں پتہ چلتا ہے کہ مجرمین اور سازشی عناصر کاتعلق بین الاقوامی گروہوں سے ہے اور انہیں ہندوستان لانے کیلئے کیس کی تحقیقات نیشنل انوسٹیگیشن ایجنسی ( این آئی اے ) کے حوالے کردی جاتی ہے۔ واضح رہے کہ بی جے پی لیڈر و سابق پارٹی صدر ضلع بھڑوچ اور سینئر آر ایس ایس رکن سریش بنگالی اور جنرل سکریٹری بھارتیہ جنتا یوا مورچہ ضلع بھڑوچ پر گنیش میستری کو دو نامعلوم حملہ آوروں نے 2نومبر کو بھڑوچ میں گولی مار کر ہلاک کردیا تھا۔ گجرات کے انسداد دہشت گردی دستہ ( اے ٹی ایس ) نے گجرات، راجستھان اور اتر کھنڈ کے مختلف مقاات سے 9 افراد کی گرفتاری کے بعد یہ دعویٰ کیا تھا کہ بی جے پی لیڈروں کے قتل کیلئے 1993ء کے ممبئی سلسلہ وار بم دھماکوں کے مفرور ملزم جاویدپٹیل عرف جاوید چکنا نے قاتلوں کو سپاری دی تھی کیونکہ جاوید چکنا1993 کے ممبئی فسادات اور 2002 کے گجرات فسادات کا انتقام لینا چاہتا تھا۔ پولیس نے بتایا کہ قتل کا کنٹراکٹ ایک گرفتار ملزم عمر ان قادر کو دیا گیا تھا جس نے قتل کا منصوبہ روبہ عمل لانے کیلئے 8افراد کی اعانت حاصل کی تھی اور اس مقصد کیلئے چکنا جاوید نے 50لاکھ روپئے ادا کئے تھے۔ پولیس سپرنٹنڈنٹ اے ٹی ایس مسٹر ہمانشو شکلانے بتایا کہ تحقیقات میں پتہ چلا ہے کہ جاوید کے علاوہ اس کے بھائی عابد پٹیل نے بھی سرگرم رول ادا کیا ہے جس نے چند سال قبل برطانوی شہریت حاصل کرلی ہے۔ جاوید اور عابد کا آبائی مقام ضلع بھڑوچ میں کایتھریا گاؤں ہے۔ جاوید 1993کے ممبئی دھماکوں کے بعد ملک سے فرار ہوگیا جبکہ عابد 2013 تک ہندوستان میں قیام پذیر تھا۔ بعد ازاں برطانیہ منتقل ہوکر وہاں کا شہری بن گیا ہے اور حال ہی میں بھڑوچ کا دورہ کرکے قتل کی سازش تیار کرکے واپس چلا گیا۔

TOPPOPULARRECENT