Thursday , November 23 2017
Home / Top Stories / بی جے پی لیڈر کی گاؤشالہ میں200 گائے فاقہ کشی سے فوت

بی جے پی لیڈر کی گاؤشالہ میں200 گائے فاقہ کشی سے فوت

سینکڑوں بے زباں جانوروں کا قتل عام ،خودساختہ گاؤرکھشک ذمہ دار

چھتیس گڑھ میں واقعہ، حکومت اور بی جے پی کو سخت الجھن کا سامنا، مزید کئی گائے بھوک سے بدحال، تحقیقات کیلئے حکام متحرک

رائے پور ۔ 18 اگست (سیاست ڈاٹ کام) چھتیس گڑھ میں ضلع درگ کے موضع راجپور میں دیہاتیوں نے دعویٰ کیا ہیکہ ایک مقامی بی جے پی لیڈر کی طرف سے چلائی جانے والی گاؤشالہ میں کم سے کم 200 گائے چارہ اور ادویات کی قلت کے سبب فاقہ کشی اور بیماریوں سے فوت ہوگئے ہیں۔ تاہم عہدیداروں نے 27 گائیوں کے فوت ہونے کی توثیق کی ہے۔ دیہاتیوں نے کہاکہ تقریباً 200 گائے فوت ہوئے ہیں جنہیں گاؤشالہ کے قریب دفن کردیا گیا ہے۔ قریبی مقامات پر کئی مردہ گائیوں کے ڈھانچے بھی پڑے دیکھے گئے ہیں۔ بی جے پی لیڈر ہریش ورما نے جو جامل نگر نگم کے نائب صدر بھی ہیں، گذشتہ سات سال سے یہ گاؤشالہ چلارہے ہیں۔ راجپور کی خاتون سرپنچ کے شوہر سیوارام ساہو نے کہا کہ ’’ہم نے دیکھا کہ گاؤشالہ کے قریب گذشتہ دو دن سے جے سی بی مشینوں کا استعمال کیا جارہا ہے جس کی میڈیا نمائندوں کو اطلاع دی گئی تھی۔ جب ہم نے وہاں پہنچ کر دیکھا تو پتہ چلا کہ وہاں مردہ پڑی کئی گایوں کو دفن کرنے کیلئے کھڈ کھودے جارہے تھے‘‘۔ تاہم بی جے پی لیڈرہریش ورما نے دعویٰ کیا کہ دو دن قبل دیوار منہدم ہوجانے کے سبب گایوں کی موت ہوئی ہے۔ ضلع درگ میں محکمہ افزائش حیوانات کے ڈپٹی ڈائرکٹر ایم کے چاؤلہ نے کہا کہ ’’اس مرحلہ پر ایسا محسوس ہوتا ہیکہ چارہ کی قلت کے سبب گائے فوت ہوئے ہیں۔ گذشتہ دودن کے دوران 27 گائیوں کے پوسٹ مارٹم کئے گئے۔ گاؤشالہ کے قریب دفن کردہ گایوں کوکھڈ سے نکالنا باقی ہے‘‘۔ ڈاکٹر نے کہاکہ دیگر 50 گائے انتہائی بری حالت میں ہیں جن کا علاج کیا جارہا ہے۔ انہوں نے اندیشہ ظاہر کیا کہ گایوں کی اموات میں اضافہ ہوسکتا ہے۔ ایک مقامی سب ڈیویژنل مجسٹریٹ راجیش پاترے نے کہاکہ مرنے والی گایوںکی صحیح تعداد کا پتہ لگانا ہنوز باقی ہے جس کے لئے تحقیقات جاری ہیں۔ پاتر نے کہا کہ ’’دیہاتیوں نے دعویٰ کیا ہے کہ گذشتہ چند دن کے دوران چارہ کی قلت کے سبب 200 گائے فوت ہوئے ہیں۔ یہ دعویٰ درست معلوم ہوتا ہے۔ ضلع مجسٹریٹ کو ایک تفصیلی رپورٹ پیش کی جائے گی جس کے مطابق کارروائی کی جائے گی‘‘۔ بی جے پی لیڈر ہریش ورما اپنی گاؤشالہ کیلئے گذشتہ دو سال سے ریاستی حکومت سے رقم کی اجرائی کا مطالبہ کررہے تھے۔ ہریش ورما نے کہا کہ ’’میری گاؤشالہ ضرورت سے زیادہ گایوں سے پُر ہوگئی ہے۔ جہاں 220 کی گنجائش کے برخلاف فی الحال 650 گائے ہیں۔ ریاستی حکومت سے میں کئی مرتبہ کہہ چکا تھا کہ میں انہیں چارہ فراہم کرنے کے موقف میں نہیںہوں لیکن میری نمائندگی بے سود ثابت ہوئی۔ اس گاؤشالہ کیلئے 10 لاکھ روپئے کے فنڈس منظور ہوئے تھے جو ریاستی حکومت کی طرف سے جاری نہیں کئے گئے ہیں۔ ان گایوں کی موت کے لئے میں قصورار نہیں ہوں‘‘۔ اس بی جے پی لیڈر کے خلاف کارروائی شروع کرنے کیلئے پولیس اب ایک رسمی شکایت کا انتظار کررہی ہے۔ ضلع درگ کے انسپکٹر جنرل دیپانشو کابرا نے کہا کہ ’’گاؤسیواآیوگ اس ضمن میںاعتماد شکنی اور غفلت و لاپرواہی کا ایک مقدمہ درج کرنے کا ارادہ رکھتا ہے اور شکایت درج کئے جانے کے بعد ایف آئی آر کے مطابق کارروائی شروع کی جائے گی۔ چھتیس گڑھ کے گاؤسیوا آیوگ کے سکریٹری اے کے پانی گروہی نے کہا کہ ’’ہمیں اس گاؤشالہ کی کارکردگی میں بے ضابطگیوں کا پتہ چلا تھا جس کے بعد رقمی امداد معطل کردی گئی تھی لیکن گاؤشالہ چلانے کیلئے سرکاری امداد ہی آمدانی کا واحد ذریعہ نہیں تھی۔

 

چھتیس گڑھ کی گاؤشالہ میں 27 گائے فوت
ریاست چھتیس گڑھ گاؤ سیوا آیوگ کا بی جے پی لیڈر گرفتار
رائے پور ۔ /18 اگست (سیاست ڈاٹ کام) ایک مقامی بی جے پی لیڈر کو آج گزشتہ تین دن میں ان کی ضلع درگ کی گاؤ شالہ میں فوت ہوجانے کے بعد گرفتار کرلیا گیا ۔ اس گاؤ شالہ کو حکومت کی جانب سے امداد دی جاتی ہے ۔ پولیس نے آج چھتیس گڑھ راجیہ گاؤ سیوا آیوگ کے خلاف ایک ایف آئی آر درج کرلی ۔ یہ گاؤ شالہ ہریش ورما کے زیرانتظام ہے ۔ ان پر گاؤ شالہ میں مناسب سہولتیں فراہم نہ کرنے کا اور گایوں کی موت کے ذمہ دار ہونے کا الزام عائد کیا گیا ہے۔ /15 اگست کو احاطہ کی دیوار منہدم ہوجانے سے یہ گائیں فوت ہوگیئں تھیں ۔

TOPPOPULARRECENT