Wednesday , December 12 2018

بی جے پی کیخلاف جدوجہد کی سمت پیشقدمی

پٹنہ 20 ڈسمبر (سیاست ڈسٹرکٹ نیوز) جنتادل (متحدہ) کے صدر شرد یادو نے آج کہا ہے کہ نئی دہلی میں 22 ڈسمبر کا مہا دھرنا ۔ سابق جنتا پریوار کی جماعتوں کے انضمام کی سمت پہلا قدم ثابت ہوگا لیکن اس خصوص میں کوئی قطعی تاریخ مقرر نہیں کی گئی ہے۔ اُنھوں نے میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کہاکہ انضمام کیلئے کوئی تاریخ نہیں دی جاسکتی۔ جبکہ جنتا پریوار کے

پٹنہ 20 ڈسمبر (سیاست ڈسٹرکٹ نیوز) جنتادل (متحدہ) کے صدر شرد یادو نے آج کہا ہے کہ نئی دہلی میں 22 ڈسمبر کا مہا دھرنا ۔ سابق جنتا پریوار کی جماعتوں کے انضمام کی سمت پہلا قدم ثابت ہوگا لیکن اس خصوص میں کوئی قطعی تاریخ مقرر نہیں کی گئی ہے۔ اُنھوں نے میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کہاکہ انضمام کیلئے کوئی تاریخ نہیں دی جاسکتی۔ جبکہ جنتا پریوار کے لیڈروں نے دو مرتبہ اجلاس منعقد کرکے نئی دہلی میں 22 ڈسمبر کو مہا دھرنا کا فیصلہ کیا ہے تاکہ بی جے پی حکومت کی ناکامیوں کو بے نقاب کیا جاسکے اور یہ احتجاج 6 جماعتوں کے انضمام کی سمت پہلا قدم ثابت ہوگا۔ جوکہ سابق جنتا پریوار سے علیحدہ ہوگئی ہیں۔ یہ دریافت کئے جانے پر انضمام میں مزید پارٹیاں شامل ہوسکتی ہیں، فی الحال صرف ان جماعتوں کو متحد کیا جارہا ہے جوکہ انضمام کیلئے پیشرفت کی ہیں۔ بعدازاں دیگر پارٹیاں دلچسپی دکھانے پر غور و خوض کیا جائے گا۔ واضح رہے کہ سابق جنتا پارٹی کی تقسیم در تقسیم کے نتیجہ میں سماج وادی پارٹی، راشٹریہ جنتادل، جنتادل (متحدہ) ، انڈین نیشنل لوک دل اور سماج وادی جنتا پارٹی تشکیل پائی ہیں۔ جنتادل متحدہ کے سربراہ سے ان جماعتوں میں اتحاد اور اتفاق کی ضرورت پر زور دیا جو کبھی جنتا پریوار کا اٹوٹ حصہ تھیں اور ان جماعتوں کی مضبوط طاقت سے ہی بی جے پی کا مقابلہ کیا جاسکتا ہے جوکہ ملک کے سیکولر تانے بانے کیلئے خطرہ بن گئی ہے۔ واضح رہے کہ شرد یادو نے نتیش کمار اور کے سی تیاگی کے ہمراہ جاریہ ماہ کے اوائل میں سماج وادی پارٹی صدر ملائم سنگھ یادو کی قیامگاہ نئی دہلی میں دو اجلاسوں میں شرکت کرچکے ہیں۔

صدرنشین و منیجنگ ڈائرکٹر GRSE ایر ایڈمیریل اے کے ورما نے بتایا کہ دوست ممالک سے جنگی جہازوں کی ضرورت کے بارے میں جانکاری حاصل کی جارہی ہے۔ انھوں نے کہاکہ ہندوستانی بحریہ اور کوسٹ گارڈس کیلئے اب تک 92 جنگی جہاز تیار کئے گئے ہیں۔
تبدیلی مذہب کے مسئلہ پر وزیراعظم سے بیان دینے کا مطالبہ
نئی دہلی 20 ڈسمبر (سیاست ڈاٹ کام) عام آدمی پارٹی سربراہ اروند کجریوال نے آج جبراً تبدیلی مذہب کے مسئلہ پر وزیراعظم نریندر مودی سے بیان دینے کا مطالبہ کیا ہے اور کہاکہ اس مسئلہ پر وزیراعظم کا موقف معلوم کرنے کیلئے عوام میں تجسس پایا جاتا ہے۔ سابق چیف منسٹر دہلی نے کہاکہ لوک سبھا اس بات میں بی جے پی نے ترقی کا نعرہ دے کر کامیابی اور حکومت تشکیل دی۔ لیکن وہ انتخابی وعدوں کی تکمیل میں یکسر ناکام ہوگئی ہے۔ وزیراعظم نریندر مودی نے اچھے دنوں کا وعدہ کیا تھا لیکن گزشتہ 6 ماہ سے عوامی مسائل کے بجائے متنازعہ مسائل اُٹھائے جارہے ہیں۔ ساری توانائیاں لو جہاد اور تبدیلی مذہب پر ضائع کی جارہی ہے۔ انھوں نے بتایا کہ گزشتہ 35 سال سے دہلی میں ایک بھی فساد نہیں ہوا لیکن بی جے پی مرکز میں اقتدار میں آتے ہی فساد پھوٹ پڑا۔ اگر عوام حقائق جان گئے تو اُسے ووٹ بھی نہیں دیں گے۔

TOPPOPULARRECENT