Friday , December 15 2017
Home / ہندوستان / بی جے ڈی رکن اسمبلی رنجن بسوال چٹ فنڈ اسکام میں گرفتار

بی جے ڈی رکن اسمبلی رنجن بسوال چٹ فنڈ اسکام میں گرفتار

سیاسی اغراض پر مبنی کارروائی ‘ مرکز پر سی بی آئی کے بیجا استعمال کا الزام ۔ حکمران جماعت کا رد عمل
بھوبنیشور 19 ستمبر ( سیاست ڈاٹ کام ) بی جے ڈی کے سینئر رکن اسمبلی پراوت رنجن بسوال کو سی بی آئی نے ایک چٹ فنڈ اسکام میں گرفتار کرلیا ہے جبکہ اوڈیشہ کی برسر اقتدار جماعت نے اس پر شدید تنقید کی ہے اور مرکزی حکومت پر تحقیقاتی ایجنسیوں کا بیجا استعمال کرنے کا الزام عائد کیا ہے ۔ سی بی آئی کی جانب سے کروڑ ہا روپئے سی شور گروپ چٹ فنڈ اسکام کی تحقیقات کی جا رہی ہیں ۔ سی بی آئی نے کٹک ۔ چوڈوار کے رکن اسمبلی کو اپنے آفس کل رات طلب کیا تھا جس کے بعد ان کی گرفتاری عمل میں آئی ۔ ایجنسی ذرائع نے یہ بات بتائی ۔ بسوال کے بھائی ارتا رنجن بسوال اور ان کے وکیل انوپ سیناپتی نے کہا کہ رکن اسمبلی کو گرفتار کرکے سی بی آئی کے ریاستی ہیڈ کوارٹرس میں رکھا گیا ہے ۔ کہا گیا ہے کہ بسوال پر سی بی آئی مسلسل نظر رکھے ہوئے تھی کیونکہ انہوں نے سی شور چٹ فنڈ کمپنی سے ایک قطعہ اراضی خریدی تھی ۔ بسوال اور ان کی شریک حیات سے تحقیقاتی ایجنسی نومبر 2014 کے بعد سے کئی مرتبہ پوچھ تاچھ کرچکی ہے ۔ بسوال کی گرفتاری کی اطلاع کے فوری بعد چیف منسٹر و بی جے ڈی کے سربراہ نوین پٹنائک نے اپنی قیامگاہ پر ایک اعلی سطح کا اجلاس منعقد کیا تاکہ اس گرفتاری کے سیاسی اثرات کا جائزہ لیا جاسکے ۔ راجیہ سبھا کے رکن پرتاپ دیب ‘ بی جے ڈی کے نائب صدر دیبی مشرا ‘ وزیر فینانس سشی بھوشن بہیرا ‘ ارکان اسمبلی اٹانو سبیاسچی نائک ‘ سنجئے داس برما اور پرنب پرکاش داس ان قائدین میں شامل ہیں جنہوں نے پٹنائک کی قیامگاہ پر اجلاس میں شرکت کی ۔ بی جے ڈی کے ترجمان و راجیہ سبھا کے رکن پی کے دیب نے اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ بسوال کی گرفتاری سیاسی اغراض پر مبنی دکھائی دیتی ہے ۔ یہ بی جے پی کا منصوبہ ہوسکتا ہے کیونکہ اس کے صدر امیت شاہ نے اپنے حالیہ دورہ اوڈیشہ کے موقع پر اس حکمت عملی کا اشارہ دیا تھا ۔ انہوں نے کہا کہ بسوال سے سی بی آئی کئی موقعوں پر پوچھ تاچھ کرچکی ہے پھر انہیں پہلے گرفتار کیوں نہیں کیا گیا ؟ ۔ انہوں نے کہا کہ بسوال کی گرفتاری بی جے پی کے دباؤ میں کی گئی ہے جو مرکز میں برسر اقتدار ہے ۔

TOPPOPULARRECENT