Thursday , December 14 2017
Home / شہر کی خبریں / بے روزگار اقلیتی نوجوانوں کو کیاب گاڑیوں کے مالک بننے کا موقع

بے روزگار اقلیتی نوجوانوں کو کیاب گاڑیوں کے مالک بننے کا موقع

اقلیتی فینانس کارپوریشن سے اون یوور کیاب اسکیم کا عنقریب آغاز
حیدرآباد ۔ 6۔ اکتوبر (سیاست نیوز) اقلیتی فینانس کارپوریشن کے ذریعہ تعلیم یافتہ بیروزگار نوجوانوں کو کیاب گاڑیوں کا مالک بنانے سے متعلق اسکیم اون یوور کیاب کا جلد آغاز ہوگا۔ حکومت نے اس اسکیم کو منظوری دیدی ہے جس کے تحت اقلیتوں کے علاوہ ایس سی ، ایس ٹی اور بی سی امیدواروں کیلئے بھی اس اسکیم پر عمل آوری کی جائے گی۔ تمام طبقات کیلئے اسکیم پر عمل آوری کی نگرانی محکمہ قبائلی بہبود کو دی گئی ہے جو نوڈل ایجنسی کے طور پر کام کرے گا۔ مینجنگ ڈائرکٹر اقلیتی فینانس کارپوریشن بی شفیع اللہ نے کارپوریشن کے عہدیداروں کے ساتھ مختلف اسکیمات پر عمل آوری کا جائزہ لیا۔ انہوں نے بتایا کہ اون یوور کیاب اسکیم کا آغاز آخری مراحل میں ہے اور 500 امیدواروں کو اسکیم کے تحت گاڑیاں فراہم کی جائیں گی ۔ انہوں نے بتایا کہ محکمہ قبائلی بہبود کو اس اسکیم کے سلسلہ میں جو درخواستیں موصول ہوئی تھیں، ان میں 1100 درخواستوں کو شارٹ لسٹ کیا گیا ہے۔ اسکیم کے آغاز کے بعد درخواستوں کا جائزہ لیا جائے گا اور مستحق امیدواروں کا انتخاب ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ اسکیم کے تحت گاڑی کی مالیت تقریباً 6 لاکھ روپئے ہوسکتی ہے جس میں 50 فیصد رقم کارپوریشن سبسیڈی کے طور پر جاری کرے گا ، جسے واپس کرنے کی ضرورت نہیں ہوگی۔ امیدوار مابقی 50 فیصد رقم بینک کو اقساط میں ادا کریں گے۔ شفیع اللہ نے کہا کہ اس منفرد اسکیم کا مقصد تعلیم یافتہ بیروزگار اقلیتی نوجوانوں کو خود مکتفی بنانا ہے۔ کارپوریشن نے اون یوور آٹو اسکیم کے تحت 2000 آٹو جاری کئے ہیں۔ اجلاس میں اردو کمپیوٹر سنٹرس اور لائبریریز کی صورتحال کا جائزہ لیا گیا۔ کارپوریشن نے پہلے مرحلہ میں 7 کمپیوٹر سنٹرس کو عصری بنانے کا فیصلہ کیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ہر سنٹر میں نئے کمپیوٹرس اور فرنیچرس فراہم کیا جائے گا اور موجودہ فیکلٹی کو عصری کورسس میں ای سی آئی ایل میں ٹریننگ فراہم کی جائے گی۔ یہ ٹریننگ ایک ماہ پر مشتمل ہوگی۔ 7 اضلاع میں جن کمپیوٹر سنٹرس کو عصری بنانے کا فیصلہ کیا گیا ہے، یہ کام اندرون 15 یوم مکمل کرلیا جائے گا ۔ انہوں نے کہا کہ قابل اور ماہر فیکلٹیز کے ذریعہ ٹریننگ اور امتحانات کا اہتمام ہوگا ۔ مینجنگ ڈائرکٹر اقلیتی فینانس کارپوریشن نے کہا کہ اگر حکومت کی جانب سے زائد بجٹ جاری کیا جاتا ہے تو مزید کمپیوٹر سنٹرس کو عصری بنایا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ کمپیوٹر سنٹر و لائبریریز کے ملازم کی تنخواہیں اگست تک جاری کردی گئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ سکریٹری اقلیتی بہبود نے ایسے سنٹرس جو غیر کارکرد ہیں، وہاں کے ملازمین کی خدمات دیگر اقلیتی اداروں میں حاصل کرنے کا فیصلہ کیا ہے ۔ بینکوں سے مربوط سبسیڈی اسکیم کے تحت زیر تصفیہ درخواستوں میں ایک تا دو لاکھ روپئے سبسیڈی والی درخواستوں کی ترجیحی بنیادوں پر یکسوئی کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ تمام درخواستوں کی یکسوئی کے بعد ہی نئی درخواستوںکے حصول پر غور کیا جائے گا ۔

TOPPOPULARRECENT