Tuesday , January 23 2018
Home / سیاسیات / بے نامی معاملتیں بل کی لوک سبھا میں پیشکشی

بے نامی معاملتیں بل کی لوک سبھا میں پیشکشی

نئی دہلی ۔13 ۔ مئی (سیاست ڈاٹ کام) بیرونی ممالک میں غیر قانونی طورپر پوشیدہ رکھے گئے کالے دھن کو واپس لانے کیلئے ایک قانون وضع کرنے کے بعد حکومت نے اندرون ملک اس مسئلہ سے نمٹنے کیلئے لوک سبھا میں آج ایک بل پیش کیا جس کی رو سے کالا دھن اور غیر محسوب دولت کو بے نقاب کرنے کی کوششوں کے طورپر تمام بے نامی معاملتوں میں ملوث افراد کی جائیداد ق

نئی دہلی ۔13 ۔ مئی (سیاست ڈاٹ کام) بیرونی ممالک میں غیر قانونی طورپر پوشیدہ رکھے گئے کالے دھن کو واپس لانے کیلئے ایک قانون وضع کرنے کے بعد حکومت نے اندرون ملک اس مسئلہ سے نمٹنے کیلئے لوک سبھا میں آج ایک بل پیش کیا جس کی رو سے کالا دھن اور غیر محسوب دولت کو بے نقاب کرنے کی کوششوں کے طورپر تمام بے نامی معاملتوں میں ملوث افراد کی جائیداد قرق کرنے اور انہیں جیل بھیجنے کی راہ ہموار ہوجائے گی۔ کابینہ میں بے نامی معاملتوں پر امتناع سے متعلق بل کی منظوری کے بعد مملکت وزیر فینانس جیئنت سنہا نے لوک سبھا میں بے نامی معاملتیں (امتناع) (ترمیمی) بل پیش کیا۔ حکومت نے یہ اشارہ بھی دیا کہ اپوزیشن کے مطالبہ کی صورت میں حکومت اس بل کو بغرض تنقیح اسٹانڈنگ کمیٹی سے رجوع کرنے کیلئے بھی تیار ہے۔ وزیر فینانس ارون جیٹلی نے بعد ازاں اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ بے نامی معاملتوں کو بہرحال غیر قانونی بنایا جائے گا۔ اس بل کی لوک سبھا میں پیشکشی کے بعد جیٹلی نے کہا کہ ’’جو لوگ اس ملک میں بے نامی جائیدادیں رکھتے ہیں

، اب یہ عمل ختم ہورہا ہے۔ اس عمل کو غیر قانونی بنادیا جائے گا‘‘۔ قبل ازیں کالے دھن میں اضافہ کو روکنے کیلئے کابینہ نے آج ایک نئی بے نامی معاملتیں (امتناعی) بل کو منظوری دیدی، جس کے ذریعہ متعلقہ قوانین کی خلاف ورزی کرنے والوں کے خلاف سخت کارروائی کرنے کی راہ ہموار ہوجائے گی۔ ایک سرکاری بیان میں کہا گیا ہیکہ ’’بے نامی معاملتیں (امتناعی)، (ترمیمی) بل2015 ء کے تحت بے نامی کھاتوں کو ضبط اور قرق کرنے کے علاوہ ان معاملتوں میں ملوث افراد کے خلاف جرمانے عائد کرنے اور سزائے قید دینے کی راہ ہموار ہوگی۔ اندرون ملک کالے دھن کی لعنت کے خلاف جدوجہد میں اٹھایا جانا وہ یہ مزید ایک قدم ہے۔ بیان میں مزید کہا گیا ہیکہ ’’بجٹ میں کئے گئے اعلان کے مطابق مرکزی کابینہ نے وزیراعظم نریندر مودی کی صدارت میں منعقدہ اجلاس میں بے نامی معاملتیں (امتناع) قانون 1988ء میں ترمیم کو منظوری دی ہے اور بے نامی معاملتیں (امتناعی) (ترمیمی) بل 2015ء پارلیمنٹ میں پیش کرنے کا فیصلہ کیا ہے‘‘۔

TOPPOPULARRECENT