Tuesday , November 21 2017
Home / Top Stories / تاج محل ملک کا ثقافتی ورثہ، وزیراعظم مودی موقف واضح کریں

تاج محل ملک کا ثقافتی ورثہ، وزیراعظم مودی موقف واضح کریں

بی جے پی کا فرقہ وارانہ کارڈ زیادہ نہیں چلے گا، پٹرول اور ڈیزل کو جی ایس ٹی میں شامل کرنے پر زور: جئے پال ریڈی
حیدرآباد 17 اکٹوبر (سیاست نیوز) تاج محل ملک کا تہذیبی ورثہ ہے اور اس کا دنیا کے سات عجائب میں شمار ہوتا ہے۔ بی جے پی قائدین غیر ضروری طور پر اس تاریخی ورثے کے بارے میں تنازعہ کھڑا کرنے کی کوشش کررہے ہیں۔ وزیراعظم نریندر مودی کو اس معاملے میں مداخلت کرتے ہوئے موقف واضح کرنا چاہئے۔ کانگریس کے سینئر لیڈر اور سابق مرکزی وزیر ایس جئے پال ریڈی نے آج یہ بات کہی۔ گاندھی بھون میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے انھوں نے کہاکہ مرکزی حکومت عوام سے کئے گئے وعدوں کو پورا کرنے میں ناکام ہوچکی ہے اور اُس نے اپنی ناکامیوں کی پردہ پوشی کے لئے مذہبی جذبات بھڑکانا اور مذہبی منافرت پیدا کرنا شروع کردیا ہے۔ وہ ملک کے امن و امان کو تباہ و تاراج کرنے کی کوشش کررہی ہے۔ اس سے عارضی طور پر بی جے پی کو فائدہ ہوگا لیکن یہ روش مستقل طور پر برقرار نہیں رکھی جاسکتی اور بی جے پی کا بھی زوال یقینی ہے۔

جئے پال ریڈی نے تلنگانہ حکومت پر بھی تنقید کی اور کہاکہ بدعنوانیوں اور بے قاعدگیوں پر سی بی آئی و انفورسمنٹ ڈائرکٹوریٹ کی نظر ہے۔ اسی لئے چیف منسٹر کے چندرشیکھر راؤ مرکزی بی جے پی حکومت سے خوفزدہ ہیں۔ اُنھوں نے کہاکہ کے چندرشیکھر راؤ اسی خوف کی وجہ سے وزیراعظم نریندر مودی کے ہر فیصلے کی تائید کرتے چلے جارہے ہیں۔ ملک اور ریاست کے عوام باشعور ہیں اور وہ بی جے پی کے ساتھ ٹی آر ایس کو بھی سبق سکھائیں گے۔ ان دونوں کو عوامی غیض و غضب کا سامنا کرنا پڑے گا۔ اُنھوں نے چیف منسٹر کی جانب سے کانگریس پر عدالتوں سے رجوع ہوتے ہوئے آبپاشی پراجکٹس کی تعمیر میں رکاوٹیں کھڑی کرنے کے الزامات کو مضحکہ خیز قرار دیا۔ جئے پال ریڈی نے ریاستی وزیر آبپاشی ہریش راؤ کا نام لئے بغیر کہاکہ کلواکرتی لیفٹ اریگیشن پراجکٹ ٹی آر ایس نہیں بلکہ کانگریس کا کارنامہ ہے۔ ریونت ریڈی کے کانگریس میں شمولیت کے بارے میں سوال پر اُنھوں نے لاعلمی کا اظہار کیا۔ اُنھوں نے کہاکہ پارٹی میں کسی کی شمولیت یا کسی جماعت سے اتحاد کا قطعی فیصلہ ہائی کمان کرے گی۔ جئے پال ریڈی نے کہاکہ پٹرول اور ڈیزل کو گڈس اینڈ سرویسس ٹیکس (جی ایس ٹی) کے دائرہ کار میں لایا جانا چاہئے تاکہ قیمتوں پر کنٹرول کیا جاسکے۔ مرکزی وزیر پٹرولیم دھرمیندر پردھان کے ظاہر کردہ خیالات سے اتفاق کرتے ہوئے جئے پال ریڈی نے کہاکہ ریاستی حکومتوں کو ایندھن پر ویاٹ میں کمی لانی چاہئے۔ اُنھوں نے کہاکہ وہ اِس مطالبہ کی تائید کرتے ہیں کہ ریاستیں بھی اپنے ٹیکس میں کمی لائیں لیکن مرکزی حکومت اپنے ٹیکسیس اور شرحوں میں اضافہ کرتے ہوئے ریاستوں پر بوجھ عائد کرنے یا اُنھیں ذمہ دار قرار دینے کی کوشش کررہی ہے۔ جئے پال ریڈی نے رائے دی کہ موجودہ بین الاقوامی ایندھن کی قیمت کو اگر ملحوظ رکھا جائے تو پٹرول 40 روپئے فی لیٹر ہونا چاہئے۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT