Friday , December 15 2017
Home / اضلاع کی خبریں / تاریخی تغلقی مسجد ملک کافور کی تعمیر و تزئین نو

تاریخی تغلقی مسجد ملک کافور کی تعمیر و تزئین نو

وقف پروٹیکشن اینڈ ڈیولپمنٹ کمیٹی کی کامیاب نمائندگی

ورنگل ۔ /26 ستمبر (سیاست ڈسٹرکٹ نیوز) 1323 ء کو قلعہ ورنگل میں محمد بن تغلق کی جانب سے تعمیر کردہ تغلقی مسجد جو تاریخی اعتبار سے مسجد ملک کافور کے نام سے مشہور ہے غیر سماجی عناصر کا مرکز بنی ہوئی تھی جہاں شراب و جوا عام تھا مگر وقف پروٹیکشن اینڈ ڈیولپمنٹ کمیٹی کی ضلع عہدیداروں اور عوامی نمائندگیوں سے بار بار نمائندگی کی وجہ سے ضلع اربن کلکٹر محترمہ امرا پالی اور رکن پارلیمنٹ پی دیاکر کی خصوصی توجہ کی وجہ سے سنٹرل آرکیالوجیکل ڈپارٹمنٹ کی جانب سے مسجد کی صفائی اور تعمیر نو کیلئے 20 لاکھ روپئے منظور کئے گئے ہیں ۔ واضح ہو کہ مسجد کا احاطہ 2000 گز پر مشتمل ہے اور مسجد کی عمارت کی باقیات مقامی ہندو و مسلم افراد میں یکساں مقبول ہیں اور اس تاریخی باقیات کو غیر مسلم افراد کنڈہ گڑی اور مسلم افراد کنڈہ مسجد کے نام سے یاد کرتے ہیں اور مسجد کی باقیات تمام طبقات میں بہترین مذہبی ہم آہنگی کی زندہ مثال ہے ۔ فی الحال مسجد کی عمارت کافی بوسیدہ اور جنگلی جھاڑیوں سے بھری پڑی ہے اور اسکا ایک ستون بھی منہدم ہوچکا ہے ۔ یہ مسجد قلعہ ورنگل کے درمیانی قلعہ یادو واڑہ کے رہائشی علاقہ میں واقع ہے اور اس عمارت کا تاحال کوئی پرسان حال نہیں تھا اور عدم نگہداشت کی وجہ سے عمارت کے چند پتھر بھی نکل گئے ہیں جس کی وجہ سے مکمل عمارت کے منہدم ہونے کے خدشات پائے جاتے ہیں ۔ وقف پروٹیکشن اینڈ ڈیولپمنٹ کمیٹی کی نمائندگی پر عہدیداران نے اس تاریخی عمارت کو بچانے کے اقدامات شروع کردیئے ہیں اور اعلیٰ عہدیداران کی نگرانی میں ماہرین کے ذریعہ سروے کرکے رپورٹ تیار کی گئی ہے اور سیاحوں کی آمد و رفت کو مدنظر رکھتے ہوئے پلان تیار کیا گیا ہے اور حالیہ دنوں میں مرمتی کاموں اور صفائی بھی کی گئی ہے ۔ سنٹرل آرکیالوجیکل عہدیداران کے مطابق منہدم ستون کی دوبارہ ایستادگی اور چھت کی مرمت کی جارہی ہے اور عمارت سے اکھڑی ہوئی اینٹوں اور پتھروں کو انہیں مقامات پر لگاکر دیواروں پر پلاسٹرنگ کی جارہی ہے اور چہار جانب سے اس کی حفاظت کیلئے لوہے کے تاروں سے حصار بندی بھی کی جارہی ہے اور عنقریب سیاحوں کیلئے اس مسجد کو تیار کیا جائے گا ۔ عہدیداران اور عوامی نمائندوں سے نمائندگی کرنے والوں میں کمیٹی کے مشیر اعلیٰ ایم اے کے تنویر ، صدر محمد عبدالجبار ، سکریٹری محمد عبداللطیف قابل ذکر ہیں جبکہ کمیٹی کے اراکین محمد معشوق علی ، سید شرف الدین ، محمد ابراہیم این آر آئی ، سید عارف الدین حسینی ، سید محبوب ، محمد رفیق پاشاہ ، محمد مشید انجنیئر کے علاوہ دیگر تمام اراکین نے بھی حصہ لیا ۔

TOPPOPULARRECENT