Sunday , June 24 2018
Home / ہندوستان / تانیا کی موت پر دہلی میں نوجوانوں کا احتجاج جاری

تانیا کی موت پر دہلی میں نوجوانوں کا احتجاج جاری

نئی دہلی ۔ 3 فبروری (سیاست ڈاٹ کام) شمال مشرقی علاقوں سے تعلق رکھنے والے طلباء نے اروناچل پردیش کے نوجوان نیڈو تانیا کو موم بتی جلا کر اجتماعی طور پر خراج عقیدت پیش کیا اور مطالبہ کیا کہ ان علاقوں کے نوجوانوں کے تحفظ کیلئے انسداد نسل پرستی قانون وضع کیا جائے۔ جنترمنتر پر شمال مشرقی طلباء کی مختلف یونینوں سے وابستہ نوجوان جمع ہوگئے ا

نئی دہلی ۔ 3 فبروری (سیاست ڈاٹ کام) شمال مشرقی علاقوں سے تعلق رکھنے والے طلباء نے اروناچل پردیش کے نوجوان نیڈو تانیا کو موم بتی جلا کر اجتماعی طور پر خراج عقیدت پیش کیا اور مطالبہ کیا کہ ان علاقوں کے نوجوانوں کے تحفظ کیلئے انسداد نسل پرستی قانون وضع کیا جائے۔ جنترمنتر پر شمال مشرقی طلباء کی مختلف یونینوں سے وابستہ نوجوان جمع ہوگئے اور مطالبہ کیا کہ 19 سالہ تانیا کی موت کی عاجلانہ تحقیقات کروائی جائیں۔ لالجپت نگر میں کچھ دکانداروں کے حملے میں تانیا ہلاک ہوگیا تھا جو اروناچل پردیش کے کانگریس ایم ایل اے کا بیٹا تھا۔

وہاں موجود احتجاجی انسداد نسل پرستی قانون وضع کرنے کا مطالبہ کررہے تھے تاکہ شمال مشرقی ریاستوں کے نوجوانوں کو تحفظ فراہم کیا جاسکے۔ دوسری دہلی ہائیکورٹ نے بھی اروناچل پردیش کے طالب علم کی ہلاکت کا ازخود نوٹس لیتے ہوئے مرکزی حکومت کو ہدایت کی ہیکہ اس معاملہ کی رپورٹ پیش کی جائے۔ یاد رہیکہ گذشتہ دو دنوں سے میڈیا میں تانیا کی ہلاکت کی خبریں گشت کررہی ہیں۔ چیف جسٹس این وی رامنا اور راجیو سہائے اینڈ لا پر مشتمل ایک بنچ نے وزارت امورداخلہ، حکومت دہلی اور دہلی پولیس کو نوٹسیں جاری کی ہیں جس میں انہیں ہدایت کی گئی ہیکہ اس معاملہ کے موجودہ موقف کی رپورٹ 5 فبروری تک پیش کی جائے۔ یہی نہیں بلکہ شمال مشرق ریاستوں سے تعلق رکھنے والے طلباء کے تحفظ کیلئے کئے گئے اقدامات سے بھی سپریم کورٹ کو واقف کروایا جائے۔ یہاں اس بات کا تذکرہ ضروری ہیکہ نیڈو تانیا اروناچل پردیش ایم ایل اے کا بیٹا تھا۔ جنوبی دہلی کے لالجپت نگر کے کچھ دکانداروں نے اس کی زبردست پٹائی کی تھی۔ قصہ یوں تھا کہ انہوں نے تانیا کے بالوں کے اسٹائیل کا مضحکہ اڑا دیا تھا۔

TOPPOPULARRECENT