Tuesday , December 11 2018

تبدیلی مذہب، گوڈسے کی ستائش، مودی سے لب کشائی کا مطالبہ

وزیراعظم ، تفرقہ پرداز تنازعات پر حکومت کی پالیسی واضح کریں : نتیش کمار

وزیراعظم ، تفرقہ پرداز تنازعات پر حکومت کی پالیسی واضح کریں : نتیش کمار
پٹنہ 23 ڈسمبر (سیاست ڈاٹ کام) جے ڈی (یو) کے سینئر لیڈر نتیش کمار نے آج اصرار کیاکہ جبری مذہبی تبدیلی جیسے پھوٹ ڈالنے اور عوام کو منقسم کرنے والے مسائل پر وزیراعظم نریندر مودی کو بیان دینا چاہئے۔ اُنھوں نے اِس احساس کا اظہار کیاکہ اِن مسائل پر اُن کی خاموشی دراصل آر ایس ایس سربراہ موہن بھاگوت اور سنگھ پریوار کے دوسرے قائدین کے بیانات کی تائید سمجھی جارہی ہے۔ نتیش کمار نے اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے ’’یہ حکومت نریندر مودی کے نام پر برسر اقتدار آئی ہے اور صرف وہ ہی آر ایس ایس اور دیگر ہندوتوا تنظیموں کی طرف سے جاری رکھنے جانے والے تخریبی ایجنڈوں پر اپنی حکومت کی پالیسی بیان کرسکتے ہیں‘‘۔ نتیش کمار نے مزید کہاکہ ’’اُنھوں نے بی جے پی سرکار نہیں بلکہ مودی سرکار بنانے کیلئے عوام سے ووٹ حاصل کیا تھا چنانچہ بابائے قوم مہاتما گاندھی کے قاتل ناتھو رام گوڈسے کی ستائش اور

جبری مذہبی تبدیلی جیسے مسائل پر صرف اُن (مودی) کے دو الفاظ ہی کافی ہوسکتے ہیں جس سے عوام میں پیدا شدہ بدگمانیاں دور ہوسکتی ہیں اور تمام طبقات کے درمیان اعتماد کی فضاء بحال ہوسکتی ہے‘‘۔ اُنھوں نے کہاکہ ’’ہم سب کو یاد ہے کہ اُس وقت کے بی جے پی صدر راج ناتھ سنگھ نے پہلی مرتبہ بی جے پی کو ووٹ دینے کی اپیل کی تھی لیکن اُس کے صرف 45 منٹ بعد ہی اپنے الفاظ سے منحرف ہوتے ہوئے مودی کو ووٹ دینے کی اپیل کی۔ بعدازاں اپنی مہم میں غلطی کی اصلاح کرتے ہوئے ہمیشہ ہی مودی سرکار کو ووٹ دینے کے لئے اپیل کی۔ نتیش کمار نے اصرار کیاکہ مرکزی مملکتی وزیر سادھوی رنجن جیوتی، ساکھشی مہاراج کے غیر ذمہ دارانہ بیان پر پیدا شدہ بدگمانیوں کا ازالہ کرنے کے لئے وزیراعظم کو لب کشائی کرنا چاہئے۔ علاوہ ازیں آر ایس ایس سربراہ موہن بھاگوت یہ کہہ رہے ہیں کہ ’گھر واپسی مہم‘ کے بہانے مذہبی تبدیلی جاری رہے گی۔ اِس مسئلہ پر بھی وزیراعظم کو موقف واضح کرنا ہوگا۔

TOPPOPULARRECENT