Saturday , November 25 2017
Home / Top Stories / تحریک ِتحفظات سیاسی نہیں، ’سیاست‘کی صحافتی ذمہ داری کا حصہ

تحریک ِتحفظات سیاسی نہیں، ’سیاست‘کی صحافتی ذمہ داری کا حصہ

حیدرآباد کے بجائے اضلاع سے مہم شروع کرنے پر جناب عامر علی خاں کی وضاحت
سدی پیٹ ۔ 15۔ ڈسمبر (سیاست نیوز) نیوز ایڈیٹر روزنامہ سیاست جناب عامر علی خان نے حیدرآباد کے بجائے اضلاع سے 12 فیصد مسلم تحفظات کی تحریک شروع کرنے کی وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ اگر میں شہر حیدرآباد سے تحریک کا آغاز کرتا تو یہ تصور کیا جاتا یا باور کیا جاتا کہ ان کے کوئی سیاسی عزائم ہیں یا مجلس کے خلاف سیاسی محاذ کھول رہے ہیں یا پھر روزنامہ سیاست کی جانب سے نئی سیاسی جماعت تشکیل دینے کی کوشش کی جارہی ہے جبکہ میں واضح کردینا مناسب سمجھتا ہوں کہ میرے کوئی سیاسی عزائم نہیں ہیں اور نہ ہی روزنامہ سیاست کی جانب سے کوئی سیاسی جماعت تشکیل دی جارہی ہے ۔ جب ایوانوں میں بیٹھنے والوں نے مسلمانوں کی خوشحالی کا ضامن بننے والے 12 فیصد مسلم تحفظات کے مسئلہ کو نظر انداز کردیا تو روزنامہ سیاست نے اپنی صحافتی ذمہ داری قبول کرتے ہوئے آگے بڑھنے کا فیصلہ کیا ہے ۔ آندھراپردیش کی تقسیم اور علحدہ تلنگانہ ریاست کی تشکیل کے بعد مختلف محکمہ جات میں بڑے پیمانہ پر تقررات ہونے والے ہیں۔ ٹی آر ایس حکومت نے ایک لاکھ سے زائد سرکاری جائیدادوں پر تقررات کرنے کا اعلان کیا ہے اور 15 ہزار جائیدادوں پر تقررات کیلئے اعلامیہ جاری کردیا ہے ۔ ٹی آر ایس نے اپنے انتخابی منشور میں مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات فراہم کرنے کا وعدہ کیا ہے ۔ مسلمانوں سے کئے گئے وعدہ پر عمل آوری کو یقینی بنانے اور چیف منسٹر تلنگانہ کے سی آر پر جمہوری انداز میں دباؤ ڈالنے کیلئے اضلاع میں گروپ میٹنگس ، مشاورتی اجلاس ، جل سے اور ریالیوں کے ساتھ بھوک ہڑتال کا اہتمام کیا جارہا ہے ۔ تحصیلداروں ، کلکٹرس اور عوامی منتخب نمائندوں کو تحریری طور پر یادداشتیں پیش کی جارہی ہیں۔ 12 فیصد مسلم تحفظات کی تحریک کسی جماعت کے خلاف نہیں ہے اور نہ ہی کسی جماعت کی تائید میں ہے ۔ صرف اور صرف مسلمانوں کو فائدہ پہنچانے کیلئے تمام مسلمانوں کو جماعتی اور مسلکی وابستگی سے بالاتر ہوکر ایک پلیٹ فارم پر جمع کیا جارہا ہے جس کے مثبت نتائج برآمد ہورہے ہیں ۔  اضلاع کے مسلمانوں نے اس مہم کو تحریک میں تبدیل کردیا ہے جس کیلئے وہ تمام مسلمانوں سے اظہار تشکر کرتے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT