Thursday , September 20 2018
Home / سیاسیات / تحویل اراضی بل کے دفعات اور فقرہ بہ فقرہ جائزہ

تحویل اراضی بل کے دفعات اور فقرہ بہ فقرہ جائزہ

مشترکہ پارلیمانی کمیٹی کی سرکاری عہدیداروں کے ساتھ مشاورت

مشترکہ پارلیمانی کمیٹی کی سرکاری عہدیداروں کے ساتھ مشاورت
نئی دہلی ۔ 6 ۔ جولائی (سیاست ڈاٹ کام) متنازعہ اور پیچیدہ تحویل اراضی بل اب مشترکہ پارلیمانی کمیٹی کے پاس فیصلہ کن آزمائش سے گزرے گا جو کہ بل کے دفعات اور فقرہ بہ فقرہ جائزہ لے گی ۔ مشترکہ پارلیمانی کمیٹی کے اجلاس میں آج ارکان نے یہ فیصلہ کیا ہیکہ اگر حکومت 16 جولائی تک ان کے سوالات کاجواب دے گی تو 22 جولائی سے بل کے فقرہ بہ فقرہ کا باریک بینی سے جائزہ لے گی، کمیٹی نے یہ بھی فیصلہ کیا اکہ متعلقہ وزارتوں کے سکریٹری کو 16 جولائی کے دن طلب کیا جائے تاکہ ایکٹ 2013 ء میں ترامیم پر ان کے نقطہ نظر کی سماعت کی جاسکے۔ توقع ہے کہ محکمہ جات قانونی امور ، مقننہ وزارت دیہی ترقیات و کامرس اور ریلویز کے اعلیٰ عہدیداروں کی کمیٹی کے روبرو حاضری ہوگی۔ کم از کم 2 ارکان نے بتایا کہ اگر 16 جولائی تک کمیٹی کے اٹھائے گئے سوالات کا طمانت بخش جواب وصول ہونے پر آرڈیننس کی شکل میں جو بل نافذ کیا گیا ہے اس کے مختلف ترامیم پر یہ کمیٹی غور و خوض کرے گی۔ حکومت نے تحویل اراضی آرڈیننس کو ایک بل کی شکل میں پارلیمنٹ میں پیش کرنے کی کوشش کی ہیں۔ بل کے مختلف دفعات پر سیاسی جماعتوں کے اعتراض پر اسے مشترکہ کمیٹی سے رجوع کردیا گیا جبکہ 16 اور 18 جولائی کے دوران کمیٹی کے ارکان سے کہا جائے گا کہ اراضی بل میں اپنی ترامیم پیش کریں۔ مشترکہ پارلیمانی کمیٹی نے اپنا کام مکمل کرلینے کیلئے ایک ہفتہ کی توسیع طلب کی تھی جس پر 28 جولائی تک مہلت دی گئی جو کہ 21 جولائی سے شروع ہونے والے پارلیمنٹ کے مانسون اجلاس کا دوسرا ہفتہ ہوگا۔ چونکہ حکمراں بی جے پی کے ایک رکن دلیپ سنگھ بھوریہ کا گزشتہ ماہ انتقال ہوگیا تھا اور لوک سبھا اجلاس کا پہلا دن انہیں خراج پیش کرنے کے بعد ملتوی کردیا جائے گا۔

TOPPOPULARRECENT