Tuesday , June 19 2018
Home / شہر کی خبریں / تشکیل تلنگانہ کا ایک سال مکمل، سونیا گاندھی سے اظہار تشکر

تشکیل تلنگانہ کا ایک سال مکمل، سونیا گاندھی سے اظہار تشکر

گاندھی بھون میں تلنگانہ پی سی سی کا جلسہ، پنالہ لکشمیا اور دیگر کی شرکت و مخاطبت

گاندھی بھون میں تلنگانہ پی سی سی کا جلسہ، پنالہ لکشمیا اور دیگر کی شرکت و مخاطبت
حیدرآباد /20 فروری (سیاست نیوز) تلنگانہ پردیش کانگریس نے راجیہ سبھا میں تلنگانہ بل کی منظوری کے ایک سال کی تکمیل پر گاندھی بھون میں جلسہ منعقد کرتے ہوئے پارٹی صدر سونیا گاندھی سے اظہار تشکر کیا۔ جلسہ کی صدارت صدر تلنگانہ پردیش کانگریس پنالہ لکشمیا نے کی، جس میں مسرز کے جانا ریڈی، ڈی سرینواس، محمد علی شبیر، انجن کمار یادو، سریش شیٹکار، پونم پربھاکر، مدھو گوڑ یشکی، ملو روی، نندی ایلیا، وی ہنمنت راؤ، سبیتا اندرا ریڈی، ڈی کے ارونا، ڈی ناگیندر، محمد سراج الدین، ایس کے افضل الدین، سید یوسف ہاشمی، ڈاکٹر ایم اے انصاری، شیخ عبد اللہ سہیل اور دیگر قائدین نے شرکت کی۔ قائد اپوزیشن کے جانا ریڈی نے علحدہ تلنگانہ ریاست کی تشکیل کو سونیا گاندھی کا کارنامہ قرار دیتے ہوئے ان سے اظہار تشکر کیا۔ انھوں نے کہا کہ مخالفت کے باوجود مسز گاندھی نے تلنگانہ عوام سے کئے گئے وعدہ کو پورا کیا اور علحدہ ریاست تشکیل دی، جس سے تلنگانہ عوام بخوبی واقف ہیں، تاہم جس وقت علحدہ ریاست تشکیل دی گئی وہ مناسب وقت نہیں تھا، جس کی وجہ سے کانگریس کو نقصان پہنچا۔ انھوں نے چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ پر وعدوں کے مطابق عمل آوری میں ناکامی کا الزام عائد کیا اور کانگریس کو تلنگانہ میں برسر اقتدار لاکر سونیا گاندھی سے حقیقی طورپر اظہار تشکر کا عزم ظاہر کیا۔ دریں اثناء پنالہ لکشمیا نے کہا کہ علحدہ ریاست کانگریس اور سونیا گاندھی کی دین ہے، تاہم اس کی صحیح طریقے سے تشہیر نہیں کی گئی اور نہ ہی ٹی آر ایس کے جھوٹے وعدوں سے عوام کو واقف کرایا گیا۔ انھوں نے کہا کہ کانگریس پارٹی اپوزیشن کا تعمیری رول ادا کرتے ہوئے عوامی مسائل کی یکسوئی میں کلیدی رول ادا کرے گی۔ انھوں نے کہا کہ چیف منسٹر تلنگانہ کے قول و فعل میں تضاد پایا جاتا ہے، علاوہ ازیں وہ توہم پرستی کا شکار ہیں۔ نائب صدر تلنگانہ پردیش کانگریس محمد علی شبیر نے کہا کہ ٹی آر ایس کی وجہ سے تلنگانہ ریاست تشکیل نہیں پائی، بلکہ یہ سب کچھ کانگریس اور سونیا گاندھی کی وجہ سے ہوا ہے۔ انھوں نے کہا کہ کے چندر شیکھر راؤ نے تلنگانہ کے لئے کبھی پارلیمنٹ میں احتجاج نہیں کیا، جب کہ کانگریس کے ارکان پارلیمنٹ احتجاج میں پیش پیش رہے اور تلنگانہ کی تشکیل میں اہم رول ادا کیا۔ انھوں نے کانگریس قائدین کو مشورہ دیا کہ وہ نظریاتی اختلافات فراموش کرکے ایک پلیٹ فارم پر جمع ہو جائیں۔ اسی دوران ڈی سرینواس نے کہا کہ تلنگانہ کے عوام سونیا گاندھی کے شکر گزار ہیں کہ انھوں نے علحدہ ریاست تشکیل دی، لیکن ٹی آر ایس حکومت تلنگانہ کو سنہرے تلنگانہ میں تبدیل کرنے میں ناکام ہو گئی۔ وی ہنمنت راؤ نے تلنگانہ کانگریس قائدین کو مشورہ دیا کہ پارٹی کے استحکام کے لئے متحد ہو جائیں۔

TOPPOPULARRECENT