Wednesday , December 12 2018

تلسی رام پرجا پتی انکاؤنٹر

ممبئی 6 جون ( پی ٹی آئی ) نریندر مودی کے ایک قریبی ساتھی امیت شاہ کو راحت فراہم کرتے ہوئے سی بی آئی کی ایک عدالت نے آج انہیں تلسی رام پرجا پتی کے مبینہ فرضی انکاؤنٹر مقدمہ میں صحت کی بنیادوں پر شخصی حاضری سے استثنی دیدیا ہے ۔ امیت شاہ بی جے پی کے جنرل سکریٹری ہیں اور گجرات کے سابق منسٹر آف اسٹیٹ داخلہ ہیں۔ وہ آج عدالت میں پیش نہیں ہوئے ا

ممبئی 6 جون ( پی ٹی آئی ) نریندر مودی کے ایک قریبی ساتھی امیت شاہ کو راحت فراہم کرتے ہوئے سی بی آئی کی ایک عدالت نے آج انہیں تلسی رام پرجا پتی کے مبینہ فرضی انکاؤنٹر مقدمہ میں صحت کی بنیادوں پر شخصی حاضری سے استثنی دیدیا ہے ۔ امیت شاہ بی جے پی کے جنرل سکریٹری ہیں اور گجرات کے سابق منسٹر آف اسٹیٹ داخلہ ہیں۔ وہ آج عدالت میں پیش نہیں ہوئے اور اپنے وکیل کے ذریعہ عدالت میں انہوں نے درخواست پیش کی ۔ درخواست میں انہوں نے کہا کہ وہ شکر کے مریض ہیں اور انہیں باقاعدہ معائنے کرواتے رہنا اور دوا لینا پڑتا ہے ۔

امیت شاہ نے سی بی آئی خصوصی جج بی ڈی اپٹاٹ کی عدالت میں الزامات منسوبہ سے بری کرنے کی درخواست بھی پیش کی ہے اور امکان ہے کہ عدالت اس درخواست پر 16 جون کو احکام جاری کریگی ۔ عدالت نے 9 مئی کو امیت شاہ اور کیس کے دوسرے ملزمین کو سمن جاری کردیا تھا ۔ بعض ملزمین کا گجرات سے تبادلہ ہوچکا ہے ۔ سی بی آئی نے امیت شاہ اور 18 دوسروں کے خلاف اس کیس میں چارچ شیٹ پیش کی ہے جن میں کئی پولیس عہدیدار بھی شامل ہیں۔ یہ چارچ شیٹ گذشتہ سال ستمبر میں پیش کی گئی تھی ۔ سی بی آئی کے بموجب سہراب الدین شیخ انکاؤنٹر میں تلسی رام پرجا پتی عینی شاہد تھا اور پولیس نے اسے گجرات کے بنست کنٹھا ضلع میں چھپری گاؤں کے قریب ایک فرضی انکاؤنٹر میں ہلاک کردیا ہے ۔ اس وقت امیت شاہ گجرات کے منسٹر آف اسٹیٹ داخلہ تھے ۔ ان پر دونوں کے مبینہ قتل کی سازش میں ملوث رہنے کا الزام ہے ۔

TOPPOPULARRECENT