Tuesday , December 11 2018

تلنگانہ ، اے پی میں آر ٹی سی ہڑتال ، عام زندگی مفلوج

حیدرآباد ۔ /6 مئی (سیاست نیوز) تلنگانہ اور آندھراپردیش میں آج آر ٹی سی ہڑتال کے سبب عوامی ٹرانسپورٹ سرویس مسدود ہوگی جس سے عام مفلوج ہوگی ۔ زائد از ایک لاکھ آر ٹی سی ملازمین ہڑتال پر چلے گئے جبکہ دونوں ریاستوں سے تقریباً 20 ہزار بسوں کو سڑکوں سے ہٹالیا گیا ۔ آندھراپردیش میں 10 ہزار 576 جبکہ تلنگانہ میں 9 ہزار 370 بسوں کو سڑکوں سے ہٹالیا گیا

حیدرآباد ۔ /6 مئی (سیاست نیوز) تلنگانہ اور آندھراپردیش میں آج آر ٹی سی ہڑتال کے سبب عوامی ٹرانسپورٹ سرویس مسدود ہوگی جس سے عام مفلوج ہوگی ۔ زائد از ایک لاکھ آر ٹی سی ملازمین ہڑتال پر چلے گئے جبکہ دونوں ریاستوں سے تقریباً 20 ہزار بسوں کو سڑکوں سے ہٹالیا گیا ۔ آندھراپردیش میں 10 ہزار 576 جبکہ تلنگانہ میں 9 ہزار 370 بسوں کو سڑکوں سے ہٹالیا گیا ۔ جوبلی ہلز بس اسٹیشن میں اضلاع کی تمام بسیں ٹھہری رہی اس طرح دیگر ڈپوز سے بھی بسوں کو نہیں نکالا گیا ۔ آر ٹی سی ہڑتال سے طلبہ ، ملازمین ، سیاح ، تعطیلات میں دیگر مقامات کو جانے والوں کو شدید مشکلات کا سامنا رہا ۔ آر ٹی سی ملازمین سے 43 پے ریویژن کا مطالبہ کرتے ہوئے نصف شب سے ہڑتال کی ۔ اے پی ایس آر ٹی سی نے ریاست کی خراب مالی حالت کے پیش نظر آر ٹی سی کے مطالبات کو مستر د کردیا ۔ آر ٹی سی انتظامیہ نے کنٹراکٹ ملازمین کی خدمات حاصل کی جس کے سبب تلنگانہ کے چند علاقوں میں ہڑتال اور کنٹراکٹ ملازمین کے درمیان جھڑپوں کی خبریں سامنے آئی ۔ حیدرآباد میں مہاتما گاندھی بس اسٹیشن ایم جی بی ایس جہاں سے تلنگانہ اور اے پی کو سینکڑوں بسیں جاتی ہیں ، ایک صحرا کا منظر پیش کررہا تھا ۔ گریٹر حیدرآباد کی سڑکوں سے تقریباً ساڑھے تین ہزار بسوں کو ہٹالیا گیا تھا ۔ ایم جی بی ایس جوبلی بس اسٹیشن وشاکھاپٹنم ، وجئے واڑہ ، تروپتی اور دیگر مقامات پر ہزاروں مسافرین رکے ہوئے ہیں ۔

اے پی ایس آر ٹی سی کے ایم ڈی سامبا سیوا راؤ نے کہا کہ بس مسافرین کے کرایوں میں 15 تا 20 فیصد اضافہ کے ذریعہ ملازمین کے مطالبات پورے کئے جاسکتے ہیں ۔ تاہم یہ فوری ممکن نہیں ہے کیونکہ /14 مئی سے دونوں ریاستوں میں آر ٹی سی کی تقسیم ہوگی ۔ تلنگانہ وزیر ٹرانسپورٹ مہندر ریڈی نے مسافرین کو مشکلات کے پیش نظر ہڑتال ختم کردینے کی ملازمین سے اپیل کی ۔ آر ٹی سی ہڑتال کے سبب آٹو ، سیٹ ون بسوں ، سات نشستی آٹوز کا خوب کاروبار رہا ۔ اے پی ایس آر ٹی سی حکام نے خانگی اور ریٹائرڈ ڈرائیورس کے ذریعے بسوں کو چلانے کا اعلان کیا تھا تاہم کوئی بھی بس سڑک پر نظر نہیں آئی۔ اسی دوران ریاستی حکومتوں نے عارضی بنیادوں پر ڈرائیوروں اور کنڈکٹرس کی متبادل خدمات حاصل کرنے کا فیصلہ کیا۔ آندھراپردیش ٹرانسپورٹ کے وزیر ایس راگھوا راؤ نے کہا کہ ان کی حکومت مسافرین کی سہولت کیلئے ریلوے سے بات چیت کرے گی۔ اسی دوران آر ٹی سی ایمپلائز یونین قائدین نے کہا کہ اگر کارپوریشن کی جانب سے ضروری خدمات بحالی قانون (اسما) نافذ کیا جاتا ہے تو ہم کو اس کی پرواہ نہیں ہوگی۔

TOPPOPULARRECENT