Tuesday , December 12 2017
Home / شہر کی خبریں / تلنگانہ تلگو دیشم قائدین میں لفظی بحث ، ریونت ریڈی سے وضاحت طلبی

تلنگانہ تلگو دیشم قائدین میں لفظی بحث ، ریونت ریڈی سے وضاحت طلبی

پارٹی پولیٹ بیورو اور سنٹرل کمیٹی اجلاس ، ایم نرسمہلو اور اروند کمار گوڑ کا بائیکاٹ
حیدرآباد ۔ 20 ۔ اکٹوبر : ( سیاست نیوز ) : توقع کے مطابق تلنگانہ تلگو دیشم پولیٹ بیورو اور سنٹرل کمیٹی کا اجلاس درہم برہم ہوگیا ۔ تلگو دیشم کے سینئیر قائدین ایم نرسمہلو اور ارویند کمار گوڑ نے راہول گاندھی سے ملاقات اور آندھرائی تلگو دیشم وزراء پر لگائے الزامات کی ریونت ریڈی سے وضاحت طلب کی ۔ ریونت ریڈی نے اجلاس میں موجود قائدین کو جواب دینے سے انکار کرتے ہوئے کہا کہ وہ پارٹی سربراہ اور چیف منسٹر آندھرا پردیش سے وضاحت کریں گے ۔ ریونت ریڈی کے جواب سے عدم اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے ایم نرسمہلو اور ارویند کمار گوڑ نے اجلاس سے واک آوٹ کردیا ۔ تلنگانہ تلگو دیشم پارٹی کے ورکنگ پریسیڈنٹ و رکن اسمبلی ریونت ریڈی کی سرگرمیاں اور پارٹی قائدین کے خلاف الزامات تلگو دیشم پارٹی اور سیاسی حلقوں میں موضوع بحث بنی ہوئی ہے ۔ یہاں تک سنا جارہا ہے کہ تلنگانہ میں تلگو دیشم پارٹی خالی ہونے والی ہے ۔ پارٹی کو نقصانات اور قائدین کو سیاسی وفاداریاں تبدیل کرنے سے روکنے کے لیے آج این ٹی آر بھون میں تلنگانہ تلگو دیشم پولیٹ بیورو اور سنٹرل کمیٹی کے ارکان کا ایک اہم اجلاس منعقد ہوا جس میں تمام قائدین ریونت ریڈی کی حالیہ سرگرمیوں کا جائزہ لیتے ہوئے مستقبل کی حکمت عملی تیار کرنے والے تھے تاہم اجلاس میں اچانک ریونت ریڈی کی شرکت سے حالت اور ایجنڈہ دونوں تبدیل ہوگیا ۔ تلنگانہ تلگو دیشم پارٹی کے صدر ایل رمنا نے دہلی میں راہول گاندھی کے بشمول دوسرے کانگریس قائدین سے ملاقات کرنے اور سیاسی اتحاد کے بارے میں مذاکرات کرنے کی ریونت ریڈی سے وجہ طلب کی ۔ سینئیر قائد ایم نرسمہلو نے کہا کہ جس پارٹی کا کانگریس کے خلاف وجود عمل میں آیا ہے ۔ اس پارٹی سے اتحاد کیسے ممکن ہے ۔ کیا تم نے کانگریس کے قائدین سے ملاقات کرنے سے قبل پارٹی صدر این چندرا بابو نائیڈو سے اجازت حاصل کی تھی ۔ ارویند کمار گوڑ نے پارٹی میں نیا تنازعہ کھڑا کرنے اور آندھرائی تلگو دیشم وزراء وائی رام کرشنوڈو ، پی سنیتا کے علاوہ رکن قانون ساز کونسل پی کیشو کے خلاف کھلے عام تنقیدیں کرتے ہوئے الزامات عائد کرنے کی وجہ طلب کی ۔ اس طرح اجلاس میں موجود قائدین نے مختلف سوالات کیے ۔ جس پر ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے ریونت ریڈی نے کہا کہ پارٹی کے لیے جیل کون گئے اور مجھے جیل بھیجانے والے چیف منسٹر تلنگانہ کے سی آر سے آندھرائی قائدین خوشگوار موڈ میں ملاقات کرتے ہیں ۔ وہ تلنگانہ میں کے سی آر اور ٹی آر ایس کے خلاف جدوجہد کررہے ہیں اور آندھرائی قائدین ٹی آر ایس سے دوستی کرتے ہوئے تجارتی تعلقات استوار کررہے ہیں ۔ یہ کہاں کا انصاف ہے ۔ اگر میں قائد اپوزیشن آندھرا پردیش و صدر وائی ایس کانگریس پارٹی جگن موہن ریڈی سے ملاقات کرتا ہوں اور ان کے ساتھ تجارتی تعلقات استوار کرتا ہوں تو کیا آندھرائی تلگو دیشم قائدین اس کو برداشت کرپائیں گے ۔ میں دہلی میں کس سے ملاقات کیا اس کی مجھے وضاحت کرنے کی ضرورت نہیں ہے ۔ اخبارات اور میڈیا میں جو کچھ بھی چل رہا ہے ۔ اس سے وہ واقف نہیں ہے ۔ اور نہ ہی وہ اس پر کوئی ردعمل دینا مناسب سمجھتے ہیں ۔ وہ پارٹی سربراہ چندرا بابو نائیڈو کی بیرونی دورے سے واپسی کے بعد انہیں تمام تفصیلات فراہم کریں گے ۔ ریونت ریڈی کے اس جواب پر تلگو دیشم کے سینئیر قائدین ایم نرسمہلو اور ارویند کمارگوڑ برہم ہوگئے ۔ ان تینوں کے درمیان لفظی جھڑپ بھی ہوگئی جس کے بعد بطور احتجاج ایم نرسمہلو اور ارویند کمار گوڑ نے اجلاس سے واک اوٹ کردیا جس پر ریونت ریڈی نے بھی سخت جواب دیتے ہوئے کہا کہ پارٹی کے لیے کون کام کررہا ہے اور کون وفادار ہے وہ بخوبی جانتے ہیں اور وہ یہ بھی جانتے ہیں کہ ٹی آر ایس کے رابطے میں کون ہیں ۔۔

TOPPOPULARRECENT