Tuesday , June 19 2018
Home / شہر کی خبریں / تلنگانہ حکومت کو ریت سے 1000 کروڑ کی آمدنی: کے ٹی آر

تلنگانہ حکومت کو ریت سے 1000 کروڑ کی آمدنی: کے ٹی آر

کانگریس ہی ریت مافیا کا حصہ، ٹی آر ایس پر الزامات مسترد

حیدرآباد۔/6جنوری، ( سیاست نیوز) وزیر انفارمیشن ٹکنالوجی کے ٹی راما راؤ نے ریاست میں ریت مافیا سے متعلق کانگریس پارٹی کے الزامات کو مسترد کردیا اور کہا کہ کانگریس دور حکومت میں ریت مافیا سرگرم تھا جبکہ ٹی آر ایس حکومت میں ریت سے آمدنی میں اضافہ ہوا ہے۔ کاماریڈی اور نظام آباد اضلاع سے تعلق رکھنے والے کانگریس اور تلگودیشم قائدین کی ٹی آر ایس میں شمولیت کے موقع پر خطاب کرتے ہوئے کے ٹی راما راؤ نے کہا کہ گزشتہ 10 برسوں میں کانگریس حکومت کے دوران ریت کی منتقلی سے سرکاری خزانہ کو 39 کروڑ روپئے کی آمدنی ہوئی تھی جبکہ گزشتہ تین برسوں میں ٹی آر ایس دور حکومت میں 1000 کروڑ روپئے کی آمدنی ہوئی ہے۔ انہوں نے سوال کیا کہ ریت مافیا ہم ہیں یا کانگریس پارٹی اس کا فیصلہ خود عوام کرسکتے ہیں۔ کانگریس قائدین نے اپنے دور اقتدار میں ریت مافیا کی سرپرستی کی تھی۔ انہوں نے کاماریڈی ضلع کے پٹلم علاقہ میں ریت مافیا کی جانب سے ولیج ریونیو آفیسر کی ہلاکت کی تردید کی اورکہا کہ اس بارے میں انہوں نے کاماریڈی کے ضلع کلکٹر سے بات چیت کی تھی۔ کلکٹر نے بتایا کہ ہلاک ہونے والا شخص وی آر او نہیں ہے اور جس گاڑی سے حادثہ ہوا وہ ریت کا ٹریکٹر نہیں تھا۔ انہوں نے الزام عائد کیا کہ معلومات کے بغیر ہی کانگریس قائدین گورنر سے نمائندگی کیلئے پہنچ گئے۔ انہوں نے انتباہ دیاکہ اگر بے بنیاد الزامات کا سلسلہ جاری رہا تو ٹی آر ایس خاموش نہیں رہے گی۔ انہوں نے کہا کہ 2019 انتخابات میں عوام کانگریس کا تلنگانہ سے صفایا کرنے کیلئے تیار ہیں۔ انہوں نے عوام سے اپیل کی کہ وہ مخالف تلنگانہ قائدین کو سبق سکھائیں۔ کے ٹی آر نے کہا کہ کانگریس دور حکومت میں قائدین ہمیشہ اثاثہ جات اور عہدوں کی تقسیم میں مصروف رہے انہوں نے عوامی مسائل پر کبھی توجہ مرکوز نہیں کی۔ کسانوں اور زرعی شعبہ کے مسائل پر عدم توجہی کے نتیجہ میں یہ شعبہ مسائل کا شکار ہوگیا۔ زرعی شعبہ کو مناسب برقی کی سربراہی میں بھی کانگریس پارٹی ناکام ہوگئی۔ ٹی آر ایس نے انتخابی وعدہ کی تکمیل کرتے ہوئے کسانوں کو 24 گھنٹے برقی کی سربراہی کا آغاز کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ انتخابی وعدہ کے مطابق کسانوں کے 17000 کروڑ کے قرضہ جات معاف کئے گئے۔ کے ٹی آر نے بتایا کہ برقی کی پیداوار میں تلنگانہ کا موقف دیگر ریاستوں سے بہتر ہوا ہے۔ ریاست کی تشکیل کے وقت برقی کی پیداوار 4700 میگا واٹ تھی جو اب بڑھ کر 14000 میگا واٹ ہوچکی ہے۔ وزیر اعظم کی ریاست گجرات بھی سولار انرجی کی تیاری میں تلنگانہ سے پیچھے ہے۔ کے ٹی آر نے کہا کہ عوامی مسائل کی یکسوئی کے نتیجہ میں اپوزیشن کو اسمبلی میں موضوع بحث بنانے کیلئے مسائل نہیں ہیں۔ وزیر زراعت پوچارام سرینواس ریڈی نے اس موقع پر کہا کہ سیاست کا مطلب صرف تجارت نہیں ہے بلکہ ٹی آر ایس نے عوامی خدمات کو اپنا شعار بنایا ہے۔ انہوں نے کہا کہ تقریباً 14 چیف منسٹرس کی کارکردگی کو دیکھا لیکن ملک بھر میں کے سی آر جیسا چیف منسٹر نہیں پایا۔ اپنی 40 سالہ سیاسی زندگی کا حوالہ دیتے ہوئے پوچارام سرینواس ریڈی نے کہا کہ جس قدر ترقیاتی اور فلاحی کام ٹی آر ایس حکومت میں انجام پائے کسی بھی حکومت میں انجام نہیں دیئے گئے ۔ انہوں نے کہا کہ کانگریس اور تلگودیشم کو الزام تراشی کے بجائے ریاست کی ترقی میں حکومت سے تعاون کرنا چاہیئے۔

TOPPOPULARRECENT