Thursday , July 19 2018
Home / شہر کی خبریں / تلنگانہ سے ناانصافی کیخلاف پارلیمنٹ میں جدوجہد: ونود کمار

تلنگانہ سے ناانصافی کیخلاف پارلیمنٹ میں جدوجہد: ونود کمار

حیدرآباد۔ 3 فبروری (سیاست نیوز) ٹی آر ایس کے رکن پارلیمنٹ ونود کمار نے مرکزی حکومت کے بجٹ پر تنقید کی اور کہا کہ بجٹ اہم اسکیمات کے سلسلہ میں غیر واضح ہے۔ تلنگانہ کے ساتھ ناانصافی کا الزام عائد کرتے ہوئے ونود کمار نے وضاحت کی کہ مرکزی حکومت کو ٹی آر ایس سے مسائل کی بنیاد پر تائید ہے۔ میڈیا کے نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے ونود کمار نے کہا کہ غریب خاندانوں کے لیے ہیلتھ انشورنس سمیت بعض دیگر مسائل پر مرکزی بجٹ میں وضاحت نہیں کی گئی۔ انہوں نے کہا کہ ہیلتھ بیمہ اسکیم عجلت میں تیار کرلی گئی اور عمل آوری کے سلسلہ میں کوئی منظم حکمت عملی حکومت کے پاس موجود نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ تلنگانہ کو مرکزی بجٹ سے فنڈس کے حصول کا جو امکان تھا، اس میں مایوسی ہوئی ہے۔ کئی اہم اسکیمات اور پراجیکٹس کے لیے مرکز نے فنڈس منظور نہیں کیے۔ ونود کما نے کہا کہ آندھراپردیش تنظیم جدید قانون کے تحت تلنگانہ سے جو وعدے کیے گئے تھے ان کا اظہار بجٹ میں دکھائی نہیں دیتا۔ انہوں نے کہا کہ کسانوں کو فصلوں پر امدادی قیمت سے متعلق اسکیم میں اس بات کی وضاحت نہیں کی کہ کس طرح عمل آوری ہوگی۔ بظاہر امدادی قیمت میں اضافہ کا اعلان کیا گیا لیکن حقیقت میں کسانوں کو کوئی فائدہ نہیں ہوگا۔ ونود کمار نے کہا کہ مرکز کی اُڑان اسکیم میں تلنگانہ کے ساتھ ناانصافی کی گئی اور تلنگانہ کے لیے ایک بھی نیا ایرپورٹ منظور نہیں کیا گیا جو باعث افسوس ہے۔ تلنگانہ کے آبپاشی پراجیکٹس کو بجٹ میں شامل نہیں کیا گیا۔ انہو ںنے سوال کیا کہ غریبوں کے لیے ہیلتھ انشورنس اسکیم کے اعلان سے قبل ریاستی حکومتوں سے مشاورت کیوں نہیں کی گئی۔ ہر تین لوک سبھا حلقوں میں ایک میڈیکل کالج کے قیام کے اعلان پر ونود کمار نے کہا کہ کیا تلنگانہ میں چھ نئے میڈیکل کالج منظور کیے جائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ پارلیمنٹ کے جاریہ سیشن میں ٹی آر ایس ان ناانصافیوں کے خلاف آواز اٹھائے گی۔ انہوں نے کہا کہ تلنگانہ کو اس کا حق ملنے تک پارٹی جدوجہد کرے گی۔ انہوں نے وضاحت کی کہ مرکزی حکومت کو ٹی آر ایس کی جانب سے مسائل کی بنیاد پر تائید حاصل ہے۔

TOPPOPULARRECENT