Tuesday , November 21 2017
Home / شہر کی خبریں / تلنگانہ لیجسلیچر پارٹی قائدین کا دورہ ہریانہ ، جواہر لعل نہرو لفٹ اریگیشن پراجکٹ کا معائنہ

تلنگانہ لیجسلیچر پارٹی قائدین کا دورہ ہریانہ ، جواہر لعل نہرو لفٹ اریگیشن پراجکٹ کا معائنہ

کم خرچ ، معمولی حصول اراضی سے پراجکٹ کی تعمیر ، چیف منسٹر کے سی آر کو تقلید کا مشورہ ، محمد علی شبیر
حیدرآباد ۔ /20 جولائی (سیاست نیوز) تلنگانہ لیجسلیچر پارٹی قائدین کے ایک وفد نے ہریانہ پہونچکر جواہر لعل نہرو لفٹ اریگیشن پراجکٹ کا معائنہ کیا ۔ وفد کی قیادت قائد اپوزیشن اسمبلی مسٹر کے جاناریڈی قائد اپوزیشن کونسل مسٹر محمد علی شبیر سابق مرکزی وزیر مسٹر ٹی بلرام نائیک سابق ارکان پارلیمنٹ مسٹر پونم پربھاکر مسٹر مدھو گوڑ یشکی رکن اسمبلی مسٹر ڈی مادھوی ریڈی اے آئی سی سی رکن مسٹر دیا ساگر راؤ کا چیف انجنیئر لفٹ کنالس مسٹر ستبر سنگھ اور دیگر اعلیٰ عہدیداروں نے خیرمقدم کیا ۔ جواہر لعل نہرو لفٹ اریگیشن پراجکٹ کی اہمیت اور خصوصیات کو پاور پوائنٹ پریزنٹیشن کے ذریعہ واضح کیا اور کانگریس کے وفد کو ہریانہ کے ضلع جھجر میں واقع پراجکٹ کا معائنہ بھی کروایا ۔ مسٹر محمد علی شبیر نے بتایا کہ جے ایل این پراجکٹ کی تعمیرات کا 1972 ء کو آغاز ہوا اور 1980 ء میں پراجکٹ مکمل ہوا ۔ مختلف مقامات سے پانی کو پمپ کرتے ہوئے حاصل کیا جاتا ہے ۔ پانی کو جمع کرنے کیلئے کوئی ذخیرے آب تعمیر نہیں کئے گئے ۔ اس پراجکٹ کے ذریعہ 6 لاکھ ایکر اراضی کو پانی سیراب کیا جاتا ہے اور ساتھ ہی یہ پراجکٹ پینے کے پانی کی طلب کو بھی پورا کرتا ہے ۔ ہریانہ میں کانگریس حکومت کے مثالی پراجکٹ تعمیر کرتے ہوئے ملک کو یہ پیغام دیا ہے کہ کم خرچ اور معمولی حصول اراضیات کے ساتھ کس طرح پراجکٹ تعمیر کیا جاسکتا ہے ۔ ٹی آر ایس حکومت اس پراجکٹ کی تقلید کرتے ہوئے ملنا ساگر کے علاوہ دوسرے آبپاشی پراجکٹس کو تعمیر کرتے ہوئے بڑے ذخیرہ آب تعمیر کرنے کی تجویز پر دوبارہ نظر ثانی کریں ۔ مسٹرمحمد علی شبیر نے کہا کہ ملنا ساگر کیلئے 50 ٹی ایم سی ذخیرہ آب تعمیر کرنے کی ضرورت نہیں ہے ۔ تلنگانہ لیجسلیچر پارٹی جے ایل این پراجکٹ کی ایک رپورٹ تیار کرتے ہوئے دوسری تجاویز کے ساتھ حکومت تلنگانہ کو ایک رپورٹ پیش کرے گی ۔ انہوں نے جے ایل این پراجکٹ کا معائنہ کرانے پر حکومت ہریانہ سے بھی اظہار تشکر کیا ۔

TOPPOPULARRECENT