Tuesday , January 16 2018
Home / Top Stories / تلنگانہ مسئلہ پر پارلیمنٹ میں ہنگامہ

تلنگانہ مسئلہ پر پارلیمنٹ میں ہنگامہ

کارروائی دن بھر کیلئے ملتوی، ایوان میں احتجاج، تائید و مخالفت میں نعرے

کارروائی دن بھر کیلئے ملتوی، ایوان میں احتجاج، تائید و مخالفت میں نعرے
نئی دہلی ۔ 5 فبروری (سیاست ڈاٹ کام) پارلیمنٹ کے توسیع شدہ سرمائی سیشن کے آج پہلے دن دونوں ایوان میں تلنگانہ مسئلہ پر زبردست ہنگامہ ہوا، جس کے نتیجہ میں لوک سبھا کی کارروائی دن بھر کے لئے ملتوی کردی گئی اور راجیہ سبھا میں متواتر التواء کے مناظر دیکھے گئے۔ دونوں ایوان میں شوروغل اور گڑبڑ رہی۔ تلنگانہ کے ساتھ ساتھ سیما آندھرا سے تعلق رکھنے والے آندھراپردیش کے ارکان پارلیمنٹ نے لوک سبھا کی کارروائی کے آغاز کے ساتھ ہی نعرے بلند کئے۔ پارٹی خطوط سے بالاتر ہوکر یہ ارکان ایوان کے وسط میںپہنچ گئے۔ ان میں حکمراں کانگریس کے ارکان بھی شامل تھے۔ سیما آندھرا کے ارکان اپنے ہاتھوں میں جئے سمکھیا آندھراپردیش کے نعرے تحریر کردہ پلے کارڈس تھامے ہوئے تھے۔ تلنگانہ ارکان نے علحدہ ریاست کے عاجلانہ قیام کا مطالبہ کرتے ہوئے نعرے لگائے۔ حکومت نے اعلان کیا ہیکہ وہ پارلیمنٹ کے جاریہ سیشن میں جس کا اختتام 21 فبروری کو ہوگا، آندھراپردیش سے علحدہ ریاست تلنگانہ کے قیام کیلئے بل پیش کرے گی۔ تلنگانہ مسئلہ پر آندھراپردیش ریاست علاقائی خطوط پر منقسم ہوگئی ہے۔ آندھراپردیش اسمبلی کی جانب سے بل کو مسترد کردیئے جانے کے بعد بل کو پارلیمنٹ میں پیش کیا جارہا ہے۔ حکومت کو توقع ہیکہ وہ آئندہ ہفتہ پارلیمنٹ میں آندھراپردیش ری آرگنائزیشن بل پیش کرے گی۔ اسی دوران شرومنی اکالی دل کے ارکان بھی ایوان میں اٹھ کھڑے ہوئے اور 1984ء کے سکھ مخالف فسادات پر کانگریس کو نشانہ بنایا۔ راہول گاندھی کی جانب سے ایک ٹیلی ویژن کو دیئے گئے انٹرویو کے مسئلہ پر اس تنازعہ کا احیاء ہوا ہے۔ پلے کارڈس تھامے نعرے لگاتے ہوئے یہ ارکان مطالبہ کررہے تھے کہ سکھ فسادات کے خاطیوں اور کانگریس کے سجن کمار اور جگدیش ٹائیٹلر کے خلاف زیرالتواء مقدمات کی کارروائی روز بروز کی اساس پر چلائی جائے۔

بی ایس پی ارکان بھی ایوان کے وسط میں پہنچ کر احتجاج کرنے لگے لیکن یہ واضح نہیں ہوا کہ آخر یہ لوگ کس مسئلہ پر احتجاج کررہے تھے۔ اسپیکر لوک سبھا میرا کمار نے بار بار اپیل کی اور ارکان سے کہا کہ وہ ایوان میں نظم و ضبط برقرار رکھیں۔ ایوان کی کارروائی کو پرسکون چلنے دیں اور یاد دلایا کہ یہ 15 ویں لوک سبھا کا آخری سیشن ہے لیکن ان کی اپیل رائیگاں گئیں، جس پر انہوں نے ایوان کی کارروائی ملتوی کردی۔ پہلے دوپہر میں بعدازاں دن بھر کیلئے کارروائی ملتوی کردی گئی۔ التواء سے قبل ایوان نے ملک کے شمال مشرقی علاقوں سے تعلق رکھنے والے افراد پر حملہ اور ہراسانی کی مذمت کی۔ دہلی میں اروناچل پردیش کے ایک نوجوان کی موت کے پیش نظر ایوان نے اس طرح کے واقعات کی مذمت کی۔ راجیہ سبھا میں 3 مرتبہ ایوان کی کارروائی ملتوی کی گئی۔ تلنگانہ مسئلہ پر دوپہر کے کھانے سے قبل ارکان نے تلنگانہ کے علاوہ اسکام زدہ آگسٹو ویسٹ لینڈ وی وی آئی پی ایل ایز اسکام اور2G اسکینڈل کا مسئلہ اٹھایا اور فرقہ وارانہ تشدد روک تھام بل متعارف کرنے حکومت کی کوشش پر بھی احتجاج ہوا۔ چیرمین حامد انصاری نے تلگودیشم کے دو ارکان سی ایم رمیش اور وائی ایس چودھری کے انتقال پر تعزیت پیش کی۔ سیما آندھرا سے تعلق رکھنے والے کانگریس رکن کے وی رامچندر راؤ نے آندھراپردیش کی تقسیم کے خلاف احتجاج کیا۔ انہوں نے آندھراپردیش بچاؤ کا نعرہ لگایا۔ انا ڈی ایم کے ارکان نے وی مائترین کی زیرقیادت احتجاج کرتے ہوئے ڈی ایم کے صدر ایم کروناندھی ان کی دختر کنی موذی کے مبینہ رول سے متعلق زائد ثبوت کے ساتھ احتجاج کیا۔

TOPPOPULARRECENT