Monday , June 18 2018
Home / شہر کی خبریں / تلنگانہ مسودہ بل مباحث کیلئے مہلت میں توسیع نہ کیا جائے

تلنگانہ مسودہ بل مباحث کیلئے مہلت میں توسیع نہ کیا جائے

حیدرآباد۔/17جنوری، ( سیاست نیوز) ٹی آر ایس کے رکن اسمبلی کے ٹی راما راؤ نے اسپیکر اسمبلی این منوہر سے مطالبہ کیا کہ وہ تلنگانہ مسئلہ مسودہ بل پر مباحث کی تکمیل کیلئے صدر جمہوریہ سے مہلت میں مزید توسیع سے متعلق تجویز کی تائید نہ کریں۔ انہوں نے کہا کہ صدر جمہوریہ نے 23جنوری تک مباحث کی تکمیل اور رائے پیش کرنے کا وقت دیا ہے۔ سیما آندھرا کے

حیدرآباد۔/17جنوری، ( سیاست نیوز) ٹی آر ایس کے رکن اسمبلی کے ٹی راما راؤ نے اسپیکر اسمبلی این منوہر سے مطالبہ کیا کہ وہ تلنگانہ مسئلہ مسودہ بل پر مباحث کی تکمیل کیلئے صدر جمہوریہ سے مہلت میں مزید توسیع سے متعلق تجویز کی تائید نہ کریں۔ انہوں نے کہا کہ صدر جمہوریہ نے 23جنوری تک مباحث کی تکمیل اور رائے پیش کرنے کا وقت دیا ہے۔ سیما آندھرا کے قائدین صدر جمہوریہ سے مزید مہلت طلب کرنے کی کوشش کررہے ہیں تاکہ تشکیل تلنگانہ کے عمل کو روکا جاسکے۔ راما راؤ نے کہا کہ اسپیکر اسمبلی کو چاہیئے کہ وہ قواعد کے مطابق ایوان کی کارروائی چلائیں اور مقررہ وقت میں مباحث کی تکمیل کو یقینی بنائیں۔ انہوں نے کہا کہ مباحث کی تکمیل کیلئے اگر اسمبلی کا اجلاس کسی وقفہ کے بغیر رات بھر بھی جاری رہا تو ٹی آر ایس تعاون کیلئے تیار ہے۔ انہوں نے کہاکہ مقررہ مدت کے دوران ہی ایوان کی کارروائی کو زاید وقت تک چلاتے ہوئے مباحث کی تکمیل کی جانی چاہیئے۔

انہوں نے مباحث کیلئے مزید وقت طلب کئے جانے کی کوششوں کو تنقید کا نشانہ بنایا۔ راما راؤ نے کہا کہ وائی ایس آر کانگریس پارٹی کی جانب سے تشکیل تلنگانہ کی مخالفت مضحکہ خیز ہے حالانکہ آنجہانی وائی ایس راج شیکھر ریڈی نے چیف منسٹر کی حیثیت سے تشکیل تلنگانہ کی تائید کی تھی اور انہوں نے تلنگانہ میں عوامی جلسوں سے خطاب کرتے ہوئے کہا تھا کہ علحدہ ریاست کی تشکیل پر انہیں کوئی اعتراض نہیں۔ راما راؤ نے کہا کہ وائی ایس آر کانگریس پارٹی کو چاہیئے کہ وہ آنجہانی راج شیکھر ریڈی کے موقف کی تائید کرتے ہوئے ریاست کی تقسیم کی مخالفت ترک کردے۔ انہوں نے دستور کی دفعہ 3میں ترمیم سے متعلق وائی ایس آر کانگریس پارٹی کے مطالبہ کی بھی مخالفت کی۔ انہوں نے کہاکہ اس دفعہ کے تحت مرکزی حکومت کو کسی بھی ریاست کی تقسیم کا مکمل اختیار حاصل ہے۔

مرکز اس اختیار کے ذریعہ ریاستی اسمبلی کی مخالفت کے باوجود بھی نئی ریاست تشکیل دے سکتا ہے۔ راما راؤ نے کہاکہ صدر جمہوریہ نے مسودہ بل کو اسمبلی کی رائے حاصل کرنے روانہ کیا ہے اس میں ووٹنگ کی کوئی گنجائش نہیں اور سیما آندھرا قائدین کا یہ مطالبہ ناقابل قبول ہے۔ ٹی آر ایس رکن اسمبلی نے کہاکہ اگر اسمبلی میں ووٹنگ کے ذریعہ بل کو شکست دی جاتی ہے تب بھی ریاست کی تقسیم کے عمل میں کوئی رکاوٹ نہیں ہوگی۔ انہوں نے کہا کہ سیما آندھرا ارکان اسمبلی جنہوں نے مسودہ بل کی کاپیوں کو نذرِ آتش کیا ان کی جانب سے مسودہ بل پر مباحث کیلئے مزید وقت طلب کرنا مضحکہ خیز ہے۔ جب انہیں مسودہ بل ہی منظور نہیں تو پھر وہ مباحث کیوں کرنا چاہتے ہیں۔ انہوں نے مشورہ دیا کہ اسمبلی کی مابقی چار دنوں کی کارروائی دن اور رات میں بلاوقفہ جاری رکھی جائے اور مباحث کی تکمیل کی جائے۔

TOPPOPULARRECENT