Sunday , September 23 2018
Home / شہر کی خبریں / تلنگانہ مسودہ بل پر تلنگانہ تلگودیشم پارٹی کی تائید

تلنگانہ مسودہ بل پر تلنگانہ تلگودیشم پارٹی کی تائید

حیدرآباد ۔ 24 جنوری (سیاست نیوز) تلنگانہ مسودہ بل پر ایوان میں جاری مباحث میںحصہ لیتے ہوئے تلنگانہ تلگودیشم پارٹی ارکان اسمبلی مسرس ایم کشن ریڈی اور کے ایس رتنم نے اس بات کا اعادہ کیا کہ نہ صرف وہ تلنگانہ مسودہ بل کی بھرپور تائید کررہے ہیں بلکہ تلگودیشم پارٹی تلنگانہ کی تائید کے اپنے موقف پر برقرار ہے۔ مسٹر کشن ریڈی نے اپنا اظہارخیا

حیدرآباد ۔ 24 جنوری (سیاست نیوز) تلنگانہ مسودہ بل پر ایوان میں جاری مباحث میںحصہ لیتے ہوئے تلنگانہ تلگودیشم پارٹی ارکان اسمبلی مسرس ایم کشن ریڈی اور کے ایس رتنم نے اس بات کا اعادہ کیا کہ نہ صرف وہ تلنگانہ مسودہ بل کی بھرپور تائید کررہے ہیں بلکہ تلگودیشم پارٹی تلنگانہ کی تائید کے اپنے موقف پر برقرار ہے۔ مسٹر کشن ریڈی نے اپنا اظہارخیال کرتے ہوئے کہا کہ ضلع رنگاریڈی کے ساتھ ہر لحاظ سے ناانصافی کی گئی۔ یہاں تک کہ ضلع رنگاریڈی کی اراضیات کو زبردستی حاصل کرکے سیما آندھرا سرمایہ داروں کے حوالہ کرکے ملازمتیں بھی سیما آندھرا والوں کو ہی فراہم کئے گئے، جس کی وجہ سے ہی علحدہ ریاست تلنگانہ کا مطالبہ کرتے ہوئے جدوجہد کی گئی۔ ضلع میں آبپاشی سہولتوں کی عدم فراہمی کا تذکرہ کرتے ہوئے کہا کہ ضلع رنگاریڈی کی تشکیل عمل میں آنے ایک طویل عرصہ ہوچکا ہے (زائد از 35 سال) لیکن آج تک بھی کوئی خاطرخواہ ترقی نہیں دی جاسکی۔ انہوں نے ضلع آبپاشی سہولتوں کی فراہمی کیلئے پرانہیتا چیوڑلہ آبپاشی پراجکٹ کو قومی موقف عطا کرنے عاجلانہ تکمیل کرنے کا مطالبہ کیا۔

انہوں نے تلنگانہ بل کا تذکرہ کرتے ہوئے کہا کہ شہر حیدرآباد کو مرکزی زیرانتظام علاقہ قرار دینے کے ہی ضلع رنگاریڈی کے کئی منڈلوں کو حیدرآباد میٹرو ڈیولپمنٹ اتھاریٹی کی تشکیل عمل میں لاتے ہوئے شامل کیا گیا، لیکن ان کوششوں کی ہرگز اجازت نہیں دی جائے گی۔ مسٹر کے ایس رتنم رکن اسمبلی تلنگانہ تلگودیشم پارٹی نے تلنگانہ مسودہ بل کی بھرپور تائید کی اور کہا کہ علحدہ ریاست تلنگانہ کیلئے طلباء، ڈاکٹرس، انجینئرس، ملازمین، ایڈوکیٹس گذشتہ 60 سال سے جدوجہد جاری رکھے ہوئے ہیں، لیکن سیما آندھرا قائدین متحدہ آندھرا کیلئے صرف 6 ماہ سے جدوجہد کررہے ہیں۔ انہوں نے دریافت کیا کہ سیما آندھرا قائدین کو علحدہ تلنگانہ کی تشکیل پر اعتراض کیوں؟ انہوں نے پرزور الفاظ میں کہا کہ خود سیما آندھرا عوام میں ریاست کی تقسیم کے حامی ہیں لیکن سرمایہ دار و سیاسی قائدین اس کی مخالفت کررہے ہیں کیونکہ سیاسی قائدین و سرمایہ دار افراد کو اپنے مفادات کا تحفظ کرنا اہم مقصد ہے۔ انہوں نے کہا کہ خود مسٹر این چندرا بابو نائیڈو صدر تلگودیشم پارٹی بھی تلنگانہ کی تائید میں ہیں۔ تاہم وہ دیگر علاقوں کے ساتھ مساویانہ انصاف کرنے کی خواہش کررہے ہیں۔ مسٹر رتنم نے کہا کہ تلنگانہ کے مسئلہ پر ہر کوئی سیاسی جماعت صرف تلگودیشم پارٹی کو ہی اپنا نشانہ بنانے کیلئے کوشاں ہیں۔

TOPPOPULARRECENT