Thursday , May 24 2018
Home / شہر کی خبریں / تلنگانہ میں اقلیتوں کو 12 فیصد تحفظات کی عدم فراہمی سے مسلمان ناراض،مسلمانوں کی خوش آمدی کیلئے کے سی آر وزیراعظم پر ریمارک، ایس جئے پال ریڈی کی پریس کانفرنس

تلنگانہ میں اقلیتوں کو 12 فیصد تحفظات کی عدم فراہمی سے مسلمان ناراض،مسلمانوں کی خوش آمدی کیلئے کے سی آر وزیراعظم پر ریمارک، ایس جئے پال ریڈی کی پریس کانفرنس

حیدرآباد ۔ 3 مارچ (سیاست نیوز) کانگریس کے سینئر قائد و سابق مرکزی وزیر ایس جئے پال ریڈی نے کہا کہ 12 فیصد مسلم تحفظات کی عدم فراہمی پر تلنگانہ کے مسلمانوں میں ٹی آر ایس حکومت کے خلاف ناراضگی پائی جاتی ہے۔ مسلمانوں کی خوشنودی حاصل کرنے کیلئے چیف منسٹر کے سی آر نے وزیراعظم نریندر مودی کے خلاف ریمارکس کیا ہے جبکہ حقیقت میں ٹی آر ایس اور بی جے پی کا خفیہ معاہدہ ہوچکا ہے۔ آج گاندھی بھون میں ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے ایس جئے پال ریڈی نے کہا کہ بی جے پی کے خلاف ٹکراؤ کی پالیسی اختیار کرنے اشارے جاری کرتے ہوئے کے سی آر بلیک میل کی پالیسی اپنا رہے ہیں۔ ایک طرف مسلمانوں میں جو ناراضگی ہے اس کو دور کرنے کی کوشش کررہے ہیں دوسری طرف ٹی آرایس اور بی جے پی ایک دوسرے کے خلاف تبصرے کرتے ہوئے سرخیاں بٹورنے کی کوشش کررہے ہیں جبکہ دونوں جماعتیں ایک دوسرے سے ملی ہوئی اور اقلیتوں کی آنکھوں میں دھول جھونکنے کی کوشش کی جارہی ہے۔ دونوں جماعتوں کے قائدین کے درمیان نوک جھونک صرف سیاسی ڈرامہ ہے۔ ٹی آر ایس اور بی جے پی ایک ہی سکے کے دورخ ہیں۔ نیتی آیوک، نوٹ بندی، جی ایس ٹی، صدرجمہوریہ، نائب صدرجمہوریہ کے انتخابات میں ٹی آر ایس نے بی جے پی کی غیرمشروط تائید کی ہے۔ 2014ء کے انتخابات میں بھی کے سی آر نے بی جے پی سے اتحاد کرنے کی منت و سماجت کی جس کو بی جے پی نے مسترد کردیا۔ ایس جئے پال ریڈی نے کہا کہ اصولی طور پر ٹی آر ایس اور بی جے پی کے درمیان خفیہ معاہدہ ہوگیا ہے۔ کے سی آر کیلئے بی جے پی اور مودی کے سواء دوسرا کوئی سہارا نہیں بچا ہے اگر انتخابات سے قبل کھل کر اتحاد نہ کریں تو انتخابات کے بعد ٹی آر ایس کو حاصل ہونے والے 2 یا 3 ارکان پارلیمنٹ کو بی جے پی کی جھولی میں ڈال دینے کی پیش قیاسی کی ہے۔ انہوں نے ٹی آر ایس کو سیاسی مفاد پرست اور کے سی آر کو خودغرض قرار دیتے ہوئے کہا کہ چیف منسٹر نے وزیراعظم نریندرمودی کو ہی نہیں صدر کانگریس راہول گاندھی کے خلاف غیرپارلیمانی الفاظ کا استعمال کیا ہے۔ ایس جئے پال ریڈی نے کہا کہ ریاست میں جب بھی انتخابات منعقد ہوں گے، کانگریس پارٹی بھاری اکثریت سے کامیابی حاصل کرے گی۔ انہیں علاقائی سے زیادہ قومی سیاست پسند ہے۔ وہ آئندہ حلقہ لوک سبھا محبوب نگر سے ہی مقابلہ کریں گے۔

TOPPOPULARRECENT