Monday , July 16 2018
Home / شہر کی خبریں / تلنگانہ میں ایم بی بی ایس میں اے زمرہ میں 2080 نشستوں پر داخلے

تلنگانہ میں ایم بی بی ایس میں اے زمرہ میں 2080 نشستوں پر داخلے

نیٹ کے رینک پر کونسلنگ : گورنمنٹ ، پرائیوٹ اور میناریٹی میڈیکل کالجس شامل
حیدرآباد ۔ 11 ۔ جولائی : ( سیاست نیوز ) : تلنگانہ میں ایم بی بی ایس میں اے زمرہ کی 2080 نشستوں پر تمام 23 میڈیکل کالجس میں داخلے کے لیے الاٹمنٹ جاری کردیا گیا ۔ نیٹ کے سب سے زیادہ مارکس 675 سے شروع ہو کر 381 نشانات ( ایس سی ) زمرہ تک داخلے پہلے مرحلہ میں مکمل ہوئے ۔ 102 مسلم امیدواروں کو عثمانیہ گاندھی ، گورنمنٹ اور نان میناریٹی میڈیکل کالجس میں بی سی زمرہ اور دیگر زمرہ جات میں داخلہ ملے گا اور چار میناریٹی کالجس میں 322 نشستوں پر اے زمرہ میں داخلہ دیا گیا ۔ دکن میڈیکل کالج میں 87 نشستوں پر داخلے ہوئے نیٹ کے نشانات 528 سے شروع ہو کر 452 نشانات پر داخلے مکمل ہوئے ۔ شاداں میڈیکل کالج میں 89 نشستوں پر داخلے ہوئے ۔ 482 سے لے کر 424 نشانات تک داخلہ دیا گیا ۔ ڈاکٹر وی آر کے ویمن میڈیکل کالج میں 58 نشستوں کے لیے نیٹ کے محصلہ نشانات 481 سے 406 پر مکمل ہوئے اور سال حال قائم کردہ نیا میڈیکل کالج ایان میں 88 نشستوں پر داخلے ہوئے اور نیٹ کے نشانات 476 سے شروع ہو کر 397 پر داخلہ مکمل ہوا ۔ سال حال پی ایچ زمرہ کے محفوظ نشست پر بھی داخلہ دیا گیا ۔ 16 جولائی تک یونیورسٹی میں دس ہزار روپئے ادا کرتے ہوئے متعلقہ کالج کو الاٹمنٹ آڈر کے ساتھ رجوع ہو کر کالج کی مقرر کردہ فیس ادا کرنا ہوگا ۔ اسی اثنا کالوجی نارائن راؤ یونیورسٹی آف ہیلت سائنس ورنگل نے تلنگانہ کے پرائیوٹ میڈیکل کالج بشمول مسلم میناریٹی کالج میں بی زمرہ کی نشستوں پر داخلے کے لیے میرٹ لسٹ جاری کردی ہے ۔۔

اساتذہ کے تبادلوں پر ٹیچرس کا ملا جلا ردعمل
مختلف ٹیچرس یونینوں کا اظہار اطمینان ، بعض اساتذہ کے ساتھ نا انصافی کی شکایت
حیدرآباد ۔ 11 ۔ جولائی : ( سیاست نیوز ) : ریاست تلنگانہ میں اساتذہ کے تبادلوں کا عمل گذشتہ دن اختتام کو پہونچا ۔ سب سے پہلے ہیڈ ماسٹرس اور پھر اسکول اسسٹنٹس بعد ازاں سکنڈری گریڈ ٹیچرس ( ایس جی ٹیز ) کے تبادلے عمل میں لاتے ہوئے احکامات تبادلہ جات جاری کئے گئے ۔ ریاستی سطح پر عمل میں لائے گئے تبادلوں کے لیے 2193 ہیڈ ماسٹرس 31968 اسکول اسسٹنٹس اور 40729 ایس جی ٹیز نے درخواستیں پیش کی تھیں ۔ ذرائع نے یہ بات بتائی ۔ اسی دوران مختلف ٹیچرس یونینوں کے قائدین نے تبادلوں کے عمل پر اپنے عدم اطمینان کا اظہار کیا اور بتایا کہ بعض اساتذہ کے لیے پوائنٹس کا شمار نہیں کیا گیا جس کی وجہ سے ان اساتذہ کو توقع کے مطابق مدارس پر تعیناتی عمل میں نہیں آسکی ۔ جس کی وجہ سے ان اساتذہ نے ڈسٹرکٹ ایجوکیشنل آفیسر سے نمائندگی کر کے انصاف کرنے کی خواہش کی لیکن ان اساتذہ کو انصاف حاصل نہیں ہوسکا ۔ لہذا اس صورتحال کے پیش نظر ٹیچرس یونینوں کے قائدین نے بعض اساتذہ کی شکایتی درخواستوں کا از سر نو جائزہ لینے ان اساتذہ کے مسائل کی یکسوئی کرنے کا ڈسٹرکٹ ایجوکیشنل آفیسروں سے مطالبہ کیا ۔ مسٹر سروتم ریڈی ریاستی صدر پی آر ٹی یو سی روی ریاستی جنرل سکریٹری یو ٹی ایف بھوجنگ راؤ ریاستی صدر ایس ٹی یو نے تبادلوں کے سلسلہ میں اساتذہ کو پیش آئے مسائل کی یکسوئی کرنے کے لیے موثر اقدامات کرنے کی ڈائرکٹر اسکول ایجوکیشن سے اپیل کی ۔۔

TOPPOPULARRECENT