Wednesday , June 20 2018
Home / شہر کی خبریں / تلنگانہ میں ایک لاکھ 7 ہزار ملازمین کی جائیدادوں پر عاجلانہ تقررات

تلنگانہ میں ایک لاکھ 7 ہزار ملازمین کی جائیدادوں پر عاجلانہ تقررات

43 فیصد فٹمنٹ کے اعلان کا خیر مقدم ، این جی اوز یونین کا بیان

43 فیصد فٹمنٹ کے اعلان کا خیر مقدم ، این جی اوز یونین کا بیان
حیدرآباد ۔ 10 ۔ فروری : ( سیاست نیوز) : تلنگانہ این جی اوز یونین نے حکومت کے فلاح و بہبودی پروگراموں و اسکیمات کو عوام تک پہونچانے کے لیے ریاست تلنگانہ میں ایک لاکھ سات ہزار ملازمین کی مخلوعہ جائیدادوں پر عاجلانہ طور پر تقررات عمل میں لانے کا حکومت سے مطالبہ کیا ۔ آج یہاں ٹی این جی اوز یونین کی عاملہ کے منعقدہ ایک خصوصی و اہم اجلاس کے اختتام کے فوری بعد اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے صدر ٹی این جی اوز یونین مسٹر دیوی پرساد نے مذکورہ بات کہی اور بتایا کہ حکومت جتنی جلدی کے ساتھ ملازمین کی مخلوعہ جائیدادوں پر تقررات عمل میں لائے گی اتنی ہی تیزی کے ساتھ حکومت کے فلاح و بہبودی پروگراموں و اسکیمات کو عوام تک پہونچائے جاسکیں گے ۔ انہوں نے کہا کہ تلنگانہ ملازمین پی آر سی پر چیف منسٹر تلنگانہ مسٹر کے چندر شیکھر راؤ کے اعلان کے لیے آندھرا پردیش ملازمین بھی منتظر تھے ۔ لہذا آندھرا پردیش کے ملازمین کو بھی 43 فیصد فٹمنٹ کے حصول پر انہوں نے مسرت و خوشی کا اظہار کیا ۔ مسٹر دیوی پرساد نے اس بات کا اعادہ کیا کہ سرکاری ملازمین عوام اور حکومت کے ساتھ دوستانہ انداز میں اپنی خدمات انجام دیں گے اور حکومت کے مختلف ترقیاتی اور عوامی فلاح و بہبودی پروگراموں و اسکیمات کو عوام تک پہونچانے میں اپنا اہم رول ادا کریں گے ۔ علاوہ ازیں بالخصوص ریاست تلنگانہ کے تمام مقامات تک مشن کاکتیہ ، واٹر گرڈ پر معلوماتی کانفرنسیں منعقد کی جائیں گی اور اسی طرح ہر حلقہ اسمبلی میں اتوار کے دن تمام ملازمین کی جانب سے ’ شرمدان ‘ کرنے ( اپنی عوامی خدمات انجام دینے ) کے لیے اجلاس میں فیصلہ کیاگیا ۔ صدر ٹی این جی اوز یونین نے اپنے عاملہ کے خصوصی اجلاس میں مشن کاکتیہ اور واٹر گرڈ کے لیے تمام ملازمین کی جانب سے اپنی ایک یوم کی تنخواہ بطور عطیہ حکومت کو دینے کا فیصلہ کیا گیا ۔ صدر ٹی این جی اوز یونین نے ملازمین کی تقسیم کے مسئلہ پر کملاناتھن کمیٹی کے اختیار کردہ طریقہ کار و طرز عمل کو انتہائی غلط طریقہ کار سے تعبیر کیا اور اپنی شدید تنقید کرتے ہوئے کہا کہ آپشن کا عمل صرف برائے نام چل رہا ہے ۔ اور کوئی تیز تر اقدامات کرنے سے گریز کیا جارہا ہے ۔ انہوں نے 31 مارچ تک سکریٹریٹ میں ایچ او ڈیز ( صدور محکمہ جات ) کی تقسیم کو مکمل کرنے کا پر زور مطالبہ کیا ۔ بصورت دیگر ٹی این جی اوز یونین کو اس مسئلہ پر اپنے آئندہ کے لائحہ عمل کو قطعیت دینے پر مجبور ہونا پڑے گا ۔۔

TOPPOPULARRECENT