Saturday , June 23 2018
Home / شہر کی خبریں / تلنگانہ میں سیاسی جماعتوں کے منشور پر تنقید

تلنگانہ میں سیاسی جماعتوں کے منشور پر تنقید

ڈاکٹر کے چرنجیوی ، میجر قادری و دیگر کی پریس کانفرنس

ڈاکٹر کے چرنجیوی ، میجر قادری و دیگر کی پریس کانفرنس

حیدرآباد۔8اپریل(سیاست نیوز) نئی ریاست تلنگانہ میں پہلے عام انتخابات اور سیاسی جماعتوں کے رویہ کو اپنی شدید تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کوکنونیر 1969تلنگانہ مومنٹ فاونڈرس فورم ڈاکٹر کولیورو چرنجیوی نے کہاکہ سیاسی جماعتوں کے منشور اور امیدواروں کے ناموں کا اعلان خود اس بات کی دلیل ہے کہ مستقبل کے تلنگانہ میں بھی پسماندگی کاشکار طبقات کے ساتھ ناانصافیوں کا سلسلہ جاری رہے گا۔ آج یہاں ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے ڈاکٹر چرنجیوی نے کانگریس کے بشمول ٹی آر ایس‘ تلگودیشم اور دیگر سکیولر جماعتوں کو اپنی شدید تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہاکہ تلنگانہ تحریک کے دوران مسلمانوں کے علاوہ دیگر اقلیتی اور پسماندہ طبقات کے ساتھ جو وعدئے کئے تھے ان کو سیاسی جماعتوں نے یکسر فراموش کردیا۔ڈاکٹر چرنجیوی نے تلنگانہ کی سیاسی جماعتوں سے سوال کرتے ہوئے کہاکہ آیا کیا مذکورہ سیاسی جماعتیں تلنگانہ کے مسلمانو ں کو ہندوستان کا حصہ نہیں سمجھتے یا پھر سیاسی جماعتوں کا تلنگانہ کے مسلمانوں کے متعلق رویہ تلنگانہ تحریک سے مسلمانوں کو دور قراردینے کی سازش کا حصہ ہے۔انہوں نے مزید کہاکہ تلنگانہ تحریک میں روز اول سے ہی مسلمان شامل ہیںاور ہر دور کی تلنگانہ تحریک میں مسلمانوں نے اہم رول ادا کیا باوجودا سکے کے ساتھ ناانصافی مسلمانوں کے متعلق رویہ سیاسی جماعتوں کی عصبیت کا نتیجہ دیکھائی دے رہا ہے۔ ڈاکٹر چرنجیوی نے ٹی آر ایس سربراہ کے چندرشیکھر رائو کے وعدوں کو یاد لاتے ہوئے کہاکہ تلنگانہ ریاست کی تشکیل کے بعد مسلمانوں کو آبادی کے تناسب سے تمام شعبہ حیا ت میں بارہ فیصد تحفظات فراہم کرنے کا وعدہ کیا تھا

جس کو یکسر فراموش کردیا گیا ہے ۔ انہوں نے کہاکہ 92کے بشمول تین مسلم امیدواروں کو ٹکٹ دیکر تلنگانہ کے مسلمانوں پر احسان جتنانے کا جو رویہ کے سی آر اپنا رہے ہیںوہ قابلِ مذمت ہے انہو ںنے کہاکہ ناصرف ٹکٹ دینا بلکہ مسلم امیدواروں کی کامیابی کو یقینی بنانے کی ذمہ داری بھی ٹی آر ایس سربراہ پر عائد ہوتی ہے۔ انہو ںنے کہاکہ جہاں سے مسلم امیدوار کی کامیاب کا خود ٹی آر ایس سربراہ کو یقین نہیںہے وہاں سے مسلم امیدوار کو ٹکٹ دیکر مسلمانوں سے کئے گئے وعدوںکو پورا کرنے کااعلان ناصرف تلنگانہ مسلمانوں کے جذبات سے کھلواڑ ہے بلکہ مسلمانوں کے ساتھ دیگر پسماندہ طبقات کے ساتھ بھی ایک بڑا دھوکہ ہوگا۔ نیو پریس کلب سوماجی گوڑہ میں منعقدہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے ڈاکٹر چرنجیوی نے کہاکہ سرکاری اعداد وشمار کے مطابق تلنگانہ میں مسلمانوں کی آبادی کاتناسب 12.5فیصد ہے اور تلنگانہ تحریک کے دوران تلنگانہ حامی سیاسی جماعتوں نے تمام شعبہ حیات میں مسلمانو ںکو آبادی کے تناسب سے تحفظات فراہم کرنے کا وعدہ کیا تھا مگر انتخابات کا اعلان سیاسی جماعتوں کے رویہ کو یکسر تبدیل کردیا۔جناب میجر قادری نے کہاکہ ساٹھ سالوں میں حق تلفی اور ناانصافیوں کا شکار ہونے کے باوجود بھی ملک کے مسلمانوں کو ہندوستان کی عظیم جمہوری نظام پر مکمل بھروسہ ہے۔جناب آصف الدین نے کہاکہ ٹی آر ایس سربراہ کا تلنگانہ مسلمانوں کے متعلق رویہ فرقہ پرست طاقتوں کے ناپاک منصوبوں سے خطرناک ہے۔اسکائی بابا‘ پروفیسر سوریہ پلی سجاتا‘ ثنا ء اللہ خان کے علاوہ دیگر نے بھی اس پریس کانفرنس سے خطاب کیا۔

TOPPOPULARRECENT