Friday , December 15 2017
Home / شہر کی خبریں / تلنگانہ میں مولانا ابوالکلام آزاد کی یوم پیدائش تقاریب وسیع پیمانے پر منعقد کرنے کا فیصلہ

تلنگانہ میں مولانا ابوالکلام آزاد کی یوم پیدائش تقاریب وسیع پیمانے پر منعقد کرنے کا فیصلہ

محکمہ اقلیتی بہبود کے عہدیداروں کے ساتھ جائزہ اجلاس ، جناب محمد محمود علی ڈپٹی چیف منسٹر کا خطاب
حیدرآباد ۔ 26۔ اکتوبر (سیاست نیوز) تلنگانہ حکومت نے ملک کے پہلے وزیر تعلیم مولانا ابوالکلام آزاد کے یوم پیدائش کے موقع پر 11 نومبر کو یوم اقلیتی بہبود بڑے پیمانہ پر منعقد کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ ڈپٹی چیف منسٹر محمد محمود علی نے آج اقلیتی بہبود کے عہدیداروں کے ساتھ جائزہ اجلاس منعقد کیا جس میں یوم اقلیتی بہبود کے مختلف پروگراموں کو قطعیت دی گئی۔ حکومت 11 نومبر کی تقریب میں غریب مسلمانوں کیلئے 1000 آٹو رکشا فراہمی اسکیم کے تحت آٹو رکشا جاری کرنے کا منصوبہ رکھتی ہے۔ تاہم اس سلسلہ میں چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ کی جانب سے وقت کا تعین باقی ہے۔ اگر چیف منسٹر 11 نومبر کو مصروف ہوں تو ان سے خواہش کی جائے گی کہ 13 نومبر کو اس پروگرام میں شرکت کیلئے وقت کا تعین کریں۔ ڈپٹی چیف منسٹر نے مرکزی وزیر اقلیتی بہبود نجمہ ہبت اللہ سے فون پر بات کی اور یوم اقلیتی بہبود میں شرکت کی خواہش کی ۔ انہوں نے بتایا کہ وہ 11 نومبر کو مولانا ابوالکلام آزاد کی مزار پر حاضری دیتی ہیں ، لہذا شرکت ممکن نہیں۔ تاہم انہوں نے 13 نومبر کو تقریب کے انعقاد کی صورت میں شرکت کرنے سے اتفاق کیا۔ حیدرآباد اور رنگا ریڈی میں آٹو رکشا اسکیم کے تحت ابھی تک 2800 درخواستیں داخل کی گئی ہیں جن کا اقلیتی فینانس کارپوریشن جائزہ لے رہا ہے۔ بعد میں  محکمہ ٹرانسپورٹ کے عہدیدار درخواستوں کی جانچ کریںگے اور اہل امیدواروں کا انتخاب کریں گے ۔ ایک ہزار سے زائد اہل درخواستوں کی صورت میں امکان ہے کہ قرعہ اندازی کے ذریعہ انتخاب کیا جائے گا ۔ کارپوریشن نے منگل کے دن بینکرس کے ساتھ اجلاس منعقد کیا ہے۔ یوم اقلیتی بہبود کے موقع پر مولانا ابوالکلام آزاد قومی ایوارڈ پیش کیا جائے گا ، جو مختلف شعبوں میں نمایاں خدمات انجام دینے والی شخصیت کو دیا جاتا ہے ۔ اس کے علاوہ بیسٹ اردو ٹیچرس اور بیسٹ اردو اسٹوڈنٹس ایوارڈس بھی پیش کئے جائیں گے ۔ ہر ضلع سے 5 اساتذہ اور 5 طلبہ کا ایوارڈ کیلئے انتخاب کیا جائے گا ۔ اس کے علاوہ یونیورسٹیز کے 3 پروفیسرس ، 2 یونانی اساتذہ اور ایک خطاطی کے استاد کو بھی ایوارڈ دیا جائے گا ۔ ڈپٹی چیف منسٹر نے عہدیداروں کو ہدایت دی کہ وہ یوم اقلیتی بہبود کے شایان شان انعقاد کی تیاری کریں۔ انہوں نے اقلیتی بہبود کی تمام اسکیمات پر مکمل شفافیت کے ساتھ عمل آوری کی ہدایت دی ۔ محمد محمود علی نے بتایا کہ تلنگانہ حکومت نے جاریہ سال اقلیتی بہبود کیلئے جو بجٹ مختص کیا ہے اسے مکمل خرچ کرنا عہدیداروں کی ذمہ داری ہے ۔ وہ چاہتے ہیں کہ پوری شفافیت کے ساتھ اسکیمات پر عمل کیا جائے اور اسکیمات کے فوائد حقیقی مستحقین تک پہنچنے چاہئے۔ تلنگانہ ملک کی پہلی ریاست ہے جس میں اقلیتی بہبود کیلئے اس قدر زائد بجٹ مختص کیا ہے اور کئی نئی اسکیمات کا آغاز کیا گیا۔ اجلاس میں سکریٹری اقلیتی بہبود سید عمر جلیل ، مینجنگ ڈائرکٹر اقلیتی فینانس کارپوریشن بی شفیع اللہ ، ڈائرکٹر اردو اکیڈیمی پروفیسر ایس اے شکور، جنرل مینجر اقلیتی فینانس کارپوریشن سید ولایت حسین اور دوسر وں نے شرکت کی۔ اس اجلاس کے بارے میں ڈائرکٹر اقلیتی بہبود ایم جے اکبر کو اطلاع نہیں دی گئی ۔ لہذا وہ شریک نہیں ہوئے۔

TOPPOPULARRECENT