Sunday , November 19 2017
Home / شہر کی خبریں / تلنگانہ میں کسانوں کی بھلائی سے کانگریس چراغ پا : ٹی ہریش راؤ

تلنگانہ میں کسانوں کی بھلائی سے کانگریس چراغ پا : ٹی ہریش راؤ

کے سی آر کے اقدامات سے کانگریس بوکھلاہٹ کا شکار ، این نرسمہا ریڈی اور پربھاکر کی پریس کانفرنس
حیدرآباد۔8 ستمبر (سیاست نیوز) وزیرآبپاشی ہریش رائو نے الزام عائد کیا کہ ریاست میں کسانوں کی بھلائی دیکھ کر کانگریس پارٹی برداشت نہیں کر پارہی ہے۔ اسے کسانوں کی خوشحالی ہرگز منظور نہیں۔ لیکن کانگریس کا یہ رویہ اس کے لیے نقصاندہ ثابت ہوگا۔ وزیر داخلہ این نرسمہا ریڈی اور ایم ایل سی کے پربھاکر کے ہمراہ میڈیا کے نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے ہریش رائو نے اراضی سروے کے لیے حکومت کی جانب سے گائوں میں کسانوں پر مشتمل کمیٹیوں کی تشکیل کی کانگریس کی جانب سے مخالفت پر افسوس ظاہر کیا۔ انہوں نے کہا کہ سروے کا مقصد کسانوں کی اراضیات کی نشاندہی کرتے ہوئے انہیں آئندہ مالیاتی سال سے فی ایکڑ 8 ہزار روپئے دو فصلوں کے لیے امداد فراہم کرنا ہے۔ انہوں نے کہا کہ چیف منسٹر کے چندر شیکھر رائو کسانوں کی بھلائی کے لیے جو اقدامات کررہے ہیں، وہ کانگریس پارٹی کو ہرگز برداشت نہیں۔ اقتدار سے دور ہونے کے باعث کانگریس قائدین بوکھلاہٹ کا شکار ہیں اور وہ اقتدار سے محرومی کے صدمہ سے ابھر نہیں پائے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ کانگریس قائدین چاہتے ہیں کہ عوام اور کسان بھی پریشانیوں میں مبتلا رہیں۔ کسانوں کے خودکشی کے واقعات کا سلسلہ ٹی آر ایس دور حکومت میں ختم ہوچکا ہے اور خوشحالی کا دور شروع ہوا۔ ہریش رائو نے کہا کہ حکومت کی پالیسیوں کو کسانوں کی جانب سے زبردست ستائش حاصل ہوئی ہے اور کسانوں میں ایک نیا جذبہ اور خود اعتمادی پیدا ہوئی۔ انہوں نے کہا کہ ٹی آر ایس حکومت میں کسانوں کے 17 ہزار کروڑ روپئے کے قرض معاف کیئے ہیں۔ کانگریس دور حکومت میں جن تالابوں اور جھیلوں کو نظرانداز کردیا گیا تھا انہیں مشن کاکتیہ پروگرام کے ذریعہ دوبارہ کارکرد بنایا جارہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ تلنگانہ کے مشن کاکتیہ پروگرام کو ملک کی دیگر ریاستیں اختیار کرنے کی کوشش کررہی ہیں۔ کانگریس دور حکومت میں آبپاشی پراجیکٹس کو نظرانداز کردیا گیا لیکن کے سی آر کی قیادت میں ٹی آر ایس حکومت نے پراجیکٹس کی تکمیل کا بیڑا اٹھایا ہے۔ محبوب نگر، کھمم، عادل آباد، ورنگل اضلاع کو پانی سیراب کرنے کے لیے منصوبہ بندی کی گئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ سابق حکومتوں نے زرعی شعبہ کو برقی کی سربراہی پر توجہ نہیں دی جبکہ ٹی آر ایس حکومت نے 24 گھنٹے برقی سربراہی کے اقدامات کیے ہیں۔ تین برسوں میں برقی شعبہ میں تلنگانہ ریاست خود مکتفی ہوچکی ہے۔ انہوں نے کہا کہ کانگریس پارٹی نے کسانوں اور زرعی شعبوں کے لیے 40 برسوں میں جو کچھ نہیں کیا ٹی آر ایس نے صرف تین برسوں میں کردکھایا ہے۔ ہریش رائو نے کسانوں کی سمیتیوں کی مخالفت کرتے ہوئے اتم کمار ریڈی سیاسی مقصد براری کے لیے کسانوں کا نقصان کرنا چاہتے ہیں۔ انہوں نے ریمارک کیا کہ کانگریس دور حکومت میں آبپاشی پراجیکٹس پینڈنگ تھے لیکن ٹی آر ایس دور حکومت میں یہ پراجیکٹس رننگ میں ہیں۔ انہوں نے کہا کہ فوج میں خدمات انجام دینے کا دعوی کرنے والے اتم کمار ریڈی کا رویہ باعث حیرت ہے اور وہ ریاست کی ترقی میں رکاوٹ پیدا کرنا چاہتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اگر کانگریس پارٹی اپنے رویہ میں تبدیلی نہیں لائے گی تو اسے عوامی ناراضگی کا سامنا کرنا پڑے گا۔

TOPPOPULARRECENT