تلنگانہ میں کل رائے دہی، وسیع تر سیکوریٹی انتظامات

۔119 حلقوں میں جملہ 1821 امیدوار کی قسمت آزمائی، 2 لاکھ سرکاری ملازمین متعین
حیدرآباد ۔ 5 ڈسمبر (سیاست نیوز) ریاست تلنگانہ میں انتخابی مہم کا آج اختتام عمل میں آیا۔ گذشتہ زائد از ایک ماہ سے انتخابی مہم کے سلسلہ میں جاری شورشرابہ آج ختم ہونے کے باعث ہرطرف فضاء مکمل طور پر پُرامن ہوگئی۔ تاہم 7 ڈسمبر کو منعقد ہونے والی رائے دہی کیلئے ریاستی چیف الیکٹورل آفیسر کی جانب سے ریاست بھر میں انتظامات مکمل کرلئے گئے۔ رائے دہی کے پرامن انعقاد کو یقینی بنانے کیلئے سیع تر صیانتی انتظامات کو قطعیت دی گئی۔ ریاست تلنگانہ کے 119 حلقہ جات اسمبلی میں متعلقہ ریٹرننگ آفیسرس حلقہ جات اسمبلی کی جانب سے رائے دہی کیلئے اسٹاف کی تعیناتی کے عمل کو مکمل کرلیا گیا۔ بتایا جاتا ہیکہ ریاست تلنگانہ میں جملہ رائے دہندوں کی تعداد 2,80,64,684 کروڑ بتائی جاتی ہے جن میں مرد رائے دہندوں کی تعداد 1,41,56,182 کروڑ اور خاتون رائے دہندوںکی تعداد 1,39,00,811 کروڑ ہے۔ معمر رائے دہندوں کیلئے الیکشن کمیشن نے خصوصی انتظامات کئے۔ باوثوق ذرائع نے یہ بات بتائی اور کہا کہ ریاست میں 7 ڈسمبر کو 119 حلقہ جات اسمبلی کیلئے منعقد ہونے والے انتخابات میں جملہ 1821 امیدوار اپنی قسمت آزمائی کریں گے۔ ان انتخابات کیلئے ریاست بھر میں جملہ 32,815 مراکز رائے دہی قائم کئے گئے۔ گریٹر حیدرآباد میں پائے جانے والے حلقہ اسمبلی شیری لنگم پلی میں سب سے زیادہ مراکز رائے دہی پائے جاتے ہیں اور حلقہ اسمبلی بھدراچلم میں سب سے کم مراکز رائے دہی پائے جاتے ہیں۔ بتایا جاتا ہیکہ ریاست میں منعقد ہونے والے اسمبلی انتخابات میں سب سے زیادہ 42 امیدوار حلقہ اسمبلی ملکاجگری میں پائے جاتے ہیں اور سب سے کم صرف 6 امیدوار حلقہ اسمبلی بانسواڑہ میں پائے جاتے ہیں۔ اسی ذرائع کے مطابق بتایا جاتا ہیکہ ریاست میں قبل از وقت منعقد ہونے والے اسمبلی انتخابات کیلئے زائد از 30 ہزار پولیس 279 مرکزی فورسیس کی کمیٹیوں کو انتخابات کے سلسلہ میں بندوبست کیلئے تعینات کیا گیا ہے۔ دیگر ریاستوں سے 18,860 پولیس ملازمین کی خدمات حاصل کی گئیں جبکہ انتخابات کی ڈیوٹیاں انجام دینے کیلئے زائد از دو لاکھ سرکاری ملازمین کی خدمات حاصل کی گئیں۔ اس طرح تمام مراکز رائے دہی کیلئے پولنگ اسٹاف کی تعیناتی عمل میں لائی جاچکی ہے۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT