Tuesday , September 18 2018
Home / شہر کی خبریں / تلنگانہ پر تمثیلی اسمبلی اجلاس کا انعقاد، قرار داد منظور

تلنگانہ پر تمثیلی اسمبلی اجلاس کا انعقاد، قرار داد منظور

حیدرآباد۔4جنوری(سیاست نیوز) تلنگانہ مسودہ بل پر ایوان پارلیمنٹ میں بحث اور منظوری کے علاوہ تلنگانہ ریاست کی تشکیل میں تعاون کی سیما آندھرا قائدین سے تلگودیشم کے رکن اسمبلی جئے پال یادونے اپیل کی۔ 1969تلنگانہ فاونڈرس فورم‘ وائس آف تلنگانہ ‘ حیدرآباد کے زیر اہتمام نیو پریس کلب سوماجی گوڑہ میں منعقدہ عوامی تمثیلی اسمبلی سے خطا

حیدرآباد۔4جنوری(سیاست نیوز) تلنگانہ مسودہ بل پر ایوان پارلیمنٹ میں بحث اور منظوری کے علاوہ تلنگانہ ریاست کی تشکیل میں تعاون کی سیما آندھرا قائدین سے تلگودیشم کے رکن اسمبلی جئے پال یادونے اپیل کی۔ 1969تلنگانہ فاونڈرس فورم‘ وائس آف تلنگانہ ‘ حیدرآباد کے زیر اہتمام نیو پریس کلب سوماجی گوڑہ میں منعقدہ عوامی تمثیلی اسمبلی سے خطاب کے دوران مسٹر جئے پال یادونے تلنگانہ ریاست کی تشکیل کو یقینی قراردیا اور کہاکہ تلنگانہ ریاست کی تشکیل آخری مراحل میں پہنچ چکی ہے ۔ انہوں نے سیما آندھرا قائدین سے تلنگانہ ریاست کی تشکیل میں تعاون کرنے کی گذارش کی۔ مسٹر جئے پال یادو نے تلگو دیشم تلنگانہ فورم کی زیر نگرانی تلگودیشم پارٹی تلنگانہ یونٹ قائم کرنے کا بھی اعلان کیا ۔انہوں نے مزید کہاکہ اس یونٹ کے صدر کا تعلق بھی تلنگانہ سے ہی ہوگا۔ تلنگانہ مسودہ بل کو مسترد کرنے کے متعلق ایوان اسمبلی میں چیف منسٹر کی نوٹس کو غیر جمہوری قراردیتے ہوئے انہوں نے چیف منسٹر پر اسمبلی رولنگ77کے غلط استعمال کا الزام عائد کیا۔ انہوں نے کہا تلنگانہ ریاست کی غیر مشروط ترقی کی تلگودیشم پارٹی تلنگانہ یونٹ پابند رہے گی ۔

تلنگانہ ریاست کی عاجلانہ ترقی کے لئے تلنگانہ تلگودیشم یونٹ کی جانب سے کل جماعتی اجلاس بھی بلایا جائے گا۔ اس عوامی تمثیلی اسمبلی کے مباحثہ میں پروفیسر جی لکشمن‘ کانگریس قائد سریدھر ریڈی‘ مولانا حامد محمد خان‘ سریدھر دھرماصنم‘ مسٹر ایم ویدا کمار‘شہباز علی خان امجد ‘ شریمتی نیرا کشور‘مسٹر لکشمی نارائن‘ مسٹر رام پرساد‘ مسٹر نا گ راج کے علاوہ دیگر تلنگانہ حامی قائدین نے حصہ لیا ۔ ڈاکٹر کولیورو چرنجیوی‘کیپٹن پانڈو رنگاریڈی وقفہ وقفہ سے اسپیکر کے فرائض انجام دئے ۔ تمثیلی اسمبلی کے روداد اور ریمارکس ریاستی اور مرکزی کابینہ کو روانہ کرنے کا بھی اس موقع پر اعلان کیا گیا۔ کیپٹن پانڈورنگار ریڈی نے مباحثہ میں حصہ لیتے ہوئے دہلی کے اے پی بھون اور حیدرآباد ہاوز کو ریاست حیدرآباد کے آخری حکمران آصف جاہ سابع کی ملکیت قرارد یا جس پر صر ف تلنگانہ کا حق ہے انہوں نے کہاکہ حیدرآباد اور اے پی بھون کو تلنگانہ کے حوالے کیا جائے ا ور اوٹی‘ ممبئی‘ بہار میں واقع آصف جاہ سابع کی جائیدادووں کو بھی تلنگانہ کی ملکیت قراردیا جائے ۔ انہوں نے مشترکہ ہائی کورٹ اور کامن انٹرنس ٹسٹ کی سختی کے ساتھ مخالفت کی ۔ مسٹر کیپٹن پانڈ ورنگاریڈی نے تلنگانہ میں علیحدہ ہائی کورٹ اور تعلیمی نظام قائم کیا جائے جس کے ذریعہ علاقہ تلنگانہ کے ساتھ کی گئی ناانصافیوں کا خاتمہ ممکن ہوسکے۔آخر میں اسپیکر اسمبلی نے قراردادمیں تلنگانہ کے ساتھ پچھلے 56سالوں میں کی گئی ناانصافیوں کا جائزہ لینے کا مطالبہ کیا۔

TOPPOPULARRECENT