Thursday , December 13 2018

تلنگانہ پولیس میں خواتین کو 33فیصد تحفظات کی سفارش

ٹاسک فورس کی سفارشات کو ویب سائٹ پر پیش کرنے کا فیصلہ : انوراگ شرما

ٹاسک فورس کی سفارشات کو ویب سائٹ پر پیش کرنے کا فیصلہ : انوراگ شرما
حیدرآباد۔15ستمبر ( پی ٹی آئی) پولیس میں اصلاحات کیلئے حکومت تلنگانہ کی جانب سے مقررکردہ ٹاسک فورس میں سب انسپکٹر کی سطح تک پولیس کے مختلف شعبوں میں خواتین کو 33فیصد تحفظات دینے کی سفارش کی ہے ۔ تلنگانہ کے ڈائرکٹر جنرل پولیس انوراگ شرما نے کہا کہ اس کمیٹی نے یہ سفارش بھی کی ہے کہ تلنگانہ کے ہر پولیس اسٹیشن میں ایک خاتون ریسپشنسٹ کے علاوہ ایک کونسلر ( مصالحت کار) کو تعینات کیا جانا چاہیئے ۔ انہوں نے کہا کہ اصلاحات پر قبل ازیں تشکیل شدہ ٹاسک فورس میں جو سفارشات پیش کئے ہیں وہ بہت جلد عوامی تجاویز اور تبصروں کیلئے دستیاب رہیں گے ۔ مسٹر شرما نے اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ ’’ خواتین کے مسائل سے نمٹنے کیلئے پولیس میں خواتین کی تعداد میں اضافہ ضروری ہے ۔ چنانچہ ٹاسک فورس میں ‘ سیول پولیس میں خواتین کیلئے 33فیصد اور مسلح پولیس میں 10فیصد تحفظات کی سفارش کی ہے ‘‘ ۔ انہوں نے کہا کہ ریاستی پولیس فورس میں فی الحال 8تا 9فیصد خواتین برسرخدمت ہیں۔ محکمہ پولیس خواتین سے متعلق اُمور و مسائل سے نمٹنے کیلئے بہبودی خواتین اور دیگر محکمہ جات کے ساتھ قریبی ربط ضبط سے کام کرے گا ۔ مسٹر انوراگ شرما نے اعتراف کیا کہ ریاست میں جرائم پر سزائیں دلانے کی شرح کم ہے ۔ انہوں نے کہا کہ چارج شیٹ اور کیس ڈائری جیسے قانونی دستاویزات بنانے میں مقامی عہدیداروں کی مدد کیلئے ہر ایک پولیس اسٹیشن میں قانونی مشیروں کے تقرر کی ایک تجویز پر غور کیا جارہا ہے ۔ مسٹر انوراگ شرما نے کہا کہ ٹاسک فورس کی سفارشات سوشل نٹ ورکنگ سائٹس اور ای میل کے ذریعہ عوامی تجاویز و تبصروں کیلئے دستیاب رہیں گے ۔

TOPPOPULARRECENT