Saturday , December 16 2017
Home / شہر کی خبریں / تلنگانہ کا بجٹ، اقلیتی طبقات کیساتھ پھر ایک بار کھلواڑ

تلنگانہ کا بجٹ، اقلیتی طبقات کیساتھ پھر ایک بار کھلواڑ

بلندبانگ دعوے وفا نہ ہوسکے، سید عزیز پاشاہ کا ردعمل
حیدرآباد۔17مارچ(سیاست نیوز) کمیونسٹ پارٹی آ ف انڈیا کی قومی عاملہ کے رکن وسابق رکن پارلیمنٹ راجیہ سبھاجناب سیدعزیز پاشاہ نے معاشی سال2016-17کے لئے حکومت تلنگانہ کے پیش کردہ بجٹ میں ایک اور مرتبہ ریاست کے اقلیتی طبقات کے ساتھ کھلواڑ کا الزام عائد کیا۔ جناب سید عزیز پاشاہ نے اپنے بجٹ کے متعلق اپنے صحافتی بیان میں کہاکہ حکومت تلنگانہ نے اپنے مجموعی بجٹ میںاقلیتوں کے لئے ایک فیصد کی بھی حصہ داری فراہم نہیںکی ہے۔ انہوںنے مزیدکہاکہ پچھلے سال جہاں پر حکومت تلنگانہ طبقات کی فلاح وبہبود کے نام پر گیارہ سو پچاس کروڑ کی اجرائی عمل میںلانے کااعلان کیا تھا وہیں پر بیس سے پچیس فیصد بجٹ بھی خرچ نہیںکیاگیا ۔ جناب سید عزیز پاشاہ نے بیورکریٹس کی جانب سے درخواستوں کی عدم دستیابی کے تمام اعلانات کو بے بنیا د قراردیتے ہوئے کہاکہ اقلیتوں کے تئیں حکومت کی ناکامیوں کوچھپانے کے لئے بیوروکریٹس کی جانب سے اس قسم کے بیانات دئے جارہے ہیں جبکہ حقیقت اس کے برخلاف ہے ۔ انہوں نے درخواستوں کے متعلق اعداد وشمار پیش کرتے ہوئے کہاکہ 122کروڑ روپئے ٹیوشن اور فیس بازادائیگی کے لئے خرچ کیا جانا درخواستوں کی عدم دستیابی کے باوجود ممکن نہیں ہے۔ جناب عزیز پاشاہ نے کہاکہ حکومت کو چاہئے کے جتنی رقم اقلیتوں کی فلاح وبہبود کے لئے خرچ کی جاتی ہے اتنی ہی رقم کو اقلیتوں کا بجٹ قرارد ے کیونکہ ہزاروں کروڑ کے اعلانات کے باوجود معاشی سال کے اختتام پر اگر موزانہ کیاگیا تو پتہ چلتا ہے کہ صرف چار سو کروڑ کا مجموعی بجٹ سے خرچ کئے گئے ہیں۔ انہوں نے حکومت تلنگانہ کو ماضی کے حکومتوں کی طرز پر کام کرتے ہوئے اقلیتوں کے ساتھ کھلواڑ کے سلسلے کو جاری رکھنے کا الزام بھی عائد کیا ۔

TOPPOPULARRECENT