Thursday , November 23 2017
Home / شہر کی خبریں / تلنگانہ کیلئے علحدہ وقف بورڈ کی تشکیل‘جی او جاری

تلنگانہ کیلئے علحدہ وقف بورڈ کی تشکیل‘جی او جاری

حیدرآباد ۔ 19۔ اکتوبر (سیاست نیوز) تلنگانہ حکومت نے آندھراپردیش وقف بورڈ کو تحلیل کرتے ہوئے علحدہ وقف بورڈ تشکیل دیا ہے۔ اس سلسلہ میں آج باقاعدہ سرکاری احکامات جاری کئے گئے ۔ حکومت نے تلنگانہ وقف بورڈ کی تشکیل کے ساتھ نئے عہدیدار مجاز کا تقرر کیا ہے ۔ اس کے لئے علحدہ جی او جاری کیا گیا ۔ سکریٹری اقلیتی بہبود سید عمر جلیل کو فوری اثر کے ساتھ 6 ماہ کی مدت کیلئے یا پھر وقف بورڈ کے انتخابات تک عہدیدار مجاز مقرر کیا گیا ہے ۔ چیف اگزیکیٹیو آفیسر کی حیثیت سے محمد اسد اللہ برقرار رہیں گے۔ واضح رہے کہ مرکزی حکومت نے 7 ستمبر کو آندھراپردیش وقف بورڈ کو تقسیم کرتے ہوئے 8 ستمبر کو اعلامیہ جاری کیا تھا جس کے بعد آندھراپردیش وقف بورڈ عملاً تحلیل ہوچکا تھا ۔ تلنگانہ حکومت نے علحدہ وقف بورڈ کی تشکیل کا فیصلہ کرتے ہوئے نئے عہدیدار مجاز کا تقرر کیا ہے۔ اس عہدہ پر فائز ڈائرکٹر اقلیتی بہبود ایم جے اکبر کو اس ذمہ داری سے سبکدوش کردیا گیا۔ وہ آندھراپردیش وقف بورڈ میں اسپیشل آفیسر اور پھر عہدیدار مجاز کی حیثیت سے خدمات انجام دے رہے تھے ۔ بتایا جاتا ہے کہ تلنگانہ حکومت نے موجودہ چیف اگزیکیٹیو آفیسر محمد اسد اللہ کی خدمات کو جاری رکھنے کا فیصلہ کیا تاکہ تلنگانہ وقف بورڈ کی کارکردگی کو بہتر بنایا جاسکے۔ اسپیشل آفیسر کے تقرر کو ہائی کورٹ میں چیلنج کیا گیا ہے اور یہ معاملہ ابھی بھی عدالت میں زیر التواء ہے، حکومت نے نئے عہدیدار مجاز کا تقرر کیا تاکہ کسی قانونی کشاکش سے بچا جاسکے ۔ بتایا جاتا ہے کہ عہدیدار مجاز کی تبدیلی کے لئے بعض گوشوں سے حکومت پر زبردست دباؤ تھا کیونکہ بعض اوقافی جائیدادوں اور اداروں کے معاملہ میں عہدیدار مجاز نے سخت قدم اٹھائے تھے ۔ بعض متولیوں کی مبینہ بے قاعدگیوں کے خلاف کارروائیوں کے پس منظر میں مخصوص سیاسی جماعت نے حکومت پر مسلسل دباؤ بنایا کہ انہیں تبدیل کردیا جائے۔ حکومت نے اگرچہ سکریٹری اقلیتی بہبود کو اس عہدہ کی ذمہ داری دیدی لیکن سکریٹری کے رتبہ کیلئے یہ عہدہ کم رتبہ کا ہے اور سکریٹری کی ذمہ داری نبھاتے ہوئے وقف بورڈ کے امور پر مسلسل نگرانی رکھنا ممکن نہیں۔ بتایا جاتا ہے کہ حکومت عہدیدار مجاز کے طور پر ایک آئی ایف ایس عہدیدار کے  نام پر غور کر رہی ہے ۔ تاہم ان کی رضامندی کے بعد تقرر کا اعلان کیا جائے گا ۔ وقف بورڈ کی موجودہ صورتحال انتہائی دیگرگوں ہے اور وہاں ایک مستقل عہدیدار کی ضرورت ہے جو پوری سنجیدگی اور دیانتداری کے ساتھ خدمات انجام دے۔ وقف بورڈ کے ملازمین اور عہدیداروں میں حکومت کے اس فیصلہ پر ملے جلے ردعمل کا اظہار کیا جارہا ہے ۔

TOPPOPULARRECENT