Thursday , December 14 2017
Home / شہر کی خبریں / تلنگانہ کی ٹی آر ایس حکومت وعدوں پر قائم ، عمل کے لیے سنجیدہ

تلنگانہ کی ٹی آر ایس حکومت وعدوں پر قائم ، عمل کے لیے سنجیدہ

کانگریس و بی جے پی تلنگانہ کی ترقی میں رکاوٹ ، ٹی آر ایس ارکان اسمبلی کا سخت ردعمل
حیدرآباد ۔ 19 ۔ اگست (سیاست  نیوز) ٹی آر ایس ارکان اسمبلی کے پربھاکر اور ونئے بھاسکر نے کانگریس اور بی جے پی قائدین کو سخت تنقید کا نشانہ بنایا اور کہا کہ ان جماعتوں کے قائدین تلنگانہ کی ترقی میں رکاوٹ پیدا کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے ارکان اسمبلی نے کہا کہ ناگم جناردھن ریڈی کو ٹی آر ایس حکومت پر تنقید کا کوئی حق حاصل نہیں۔ انہوں نے کہا کہ ٹی آر ایس حکومت کی جانب سے جو ترقیاتی کام انجام دیئے جارہے ہیں ، اس سے بوکھلاہٹ کا شکار ہوکر اپوزیشن جماعتیں تنقیدوں کا سہارا لے رہی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ناگم جناردھن ریڈی کو تلنگانہ کی مخالفت پر عثمانیہ یونیورسٹی میں طلبہ کی ناراضگی کا سامنا کرنا پڑا تھا ۔ بعد میں وہ بی جے پی میں شامل ہوئے اور خود کو تلنگانہ تحریک سے وابستہ قرار دینے لگے۔ ونئے بھاسکر نے کہا کہ ٹی آر ایس حکومت نے عوام سے جو وعدے کئے تھے ، ان پر عمل کیا جارہا ہے ۔ چیف منسٹر چندر شیکھر راؤ عوام سے کئے گئے وعدوں پر قائم ہیں اور ان پر بہر صورت عمل کیا جائے گا۔ ونئے بھاسکر نے کہا کہ ناگم جناردھن ریڈی کی جانب سے علحدہ فورم کے قیام کے ذریعہ حکومت پر تنقید کرنا افسوسناک ہے۔ انہوں نے کہاکہ ناگم جناردھن ریڈی کو پارٹیاں تبدیل کرنے کی عادت ہوچکی ہے ۔ رکن اسمبلی کے پربھاکر نے سابق وزیر ڈی کے ارونا کو تنقید کا نشانہ بنایا اور کہاکہ ڈی کے ارونا وزیر کی حیثیت سے کئی بے قاعدگیوں میں ملوث رہی ہیں اور آج بھی وہ الزامات کا سامنا کر رہی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ کانگریس قائدین تلنگانہ میں دوبارہ عوامی تائید حاصل کرنے کیلئے حکومت پر تنقیدیں کر رہے ہیں ۔ اپوزیشن کی ذمہ داری ہے کہ وہ حکومت کے بہتر اقدامات کی تائید کرے اور تعمیری تجاویز پیش کریں۔ برخلاف اس کے کانگریس پارٹی صرف تنقیدوں کے ذریعہ حکومت کی ہر اسکیم کی مخالفت کی عادی بن چکی ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس طرح کی تنقیدوں سے کانگریس کو عوامی تائید حاصل نہیں ہوسکتی۔

TOPPOPULARRECENT