Wednesday , December 19 2018

تلنگانہ کی کوئی بھی سیاسی جماعت عبدالقدیر کی رہائی پر غیرسنجیدہ

مجاہدین آزادی کی یوم برسی ، سیاسی قیدیوں کی رہائی پر احتجاجی جلسہ ، جناب ظہیرالدین علی خاں و دیگر کا خطاب

مجاہدین آزادی کی یوم برسی ، سیاسی قیدیوں کی رہائی پر احتجاجی جلسہ ، جناب ظہیرالدین علی خاں و دیگر کا خطاب

حیدرآباد۔23مارچ(سیاست نیوز)مسلمانوں کے بشمول پسماندگی کاشکار تمام طبقات کو ترقی کے یکساں مواقع فراہم کرنے تک ساماجیکا تلنگانہ ریاست کی تشکیل کا خواب شرمندہ تعبیر نہیں ہوسکتا۔ کمیٹی فار دی ریلیز آف پولیٹیکل پریزنرس اورپی ڈی ایم کے زیر اہتمام دھرنا چوک ‘ اندرا پارک پر منعقدہ احتجاجی دھرنے سے خطاب کرتے ہوئے جناب ظہیر الدین علی خان نے ان خیالات کا اظہار کیا۔ مجاہدین جنگ آزادی شہید بھگت سنگھ‘ سکھ دیو ‘ راج گرو کی83ویں برسی کے موقع پر سیاسی قیدیوں کے حقوق کا ہفتہ کے طور پر منائے جانے والے احتجاجی پروگرام کے پہلے دن سابق رکن قانون ساز کونسل مسٹر چکارامیا‘ صدر سی آر پی سی بوجاتارکم‘ پی وینکٹیشوار رائو‘ انقلابی مصنف وراورا رائو‘ معروف صحافی اور سماجی جہدکار مسٹر رام چندر مورتی‘ الم نارائنہ‘سیول لیبرٹیز جہدکار مسٹر راگھو ناتھ کے علاوہ دیگر نے بھی خطاب کیا۔انہوں نے کہاکہ جمہوریت کے دعوے تو بہت کئے جاتے ہیںمگر عملی میدان میں جمہوریت کو کارکرد بنانے کے اقدامات کی کمی مسلمانوں کے علاوہ پسماندگی کاشکار دیگر طبقات کے ساتھ حق تلفی اور ناانصافی کی وجہ بن رہا ہے ۔

انہوں نے چوبیس سالوں سے قید وبند کی صعوبتیں جھیل رہے سابق کانسٹبل عبدالقدیر کی سیاسی قید سے رہائی کا مطالبہ کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ پچھلے چوبیس سالوں سے عبدالقدیر جیل میںقید وبند کی صعوبتیں جھیل رہے ہیں اپنی غلطی کا اعتراف اور مقرر سزاء سے زیادہ وقت جیل میں گذاردینے کے باوجود عبدالقدیر کی رہائی تعطل کاشکار بنی ہوئی ہے ۔ جناب ظہیر الدین علی خان نے کہاکہ عبدالقدیر کو شوگر کا مرض لاحق ہوگیا ہے اور انفیکشن کے سبب عبدالقدیر کا پیر کاٹ دیا گیاجبکہ دوسرے پیر میں بھی انفیکشن پھیلتا جارہا ہے ۔ انہوں نے مزیدکہاکہ جیل سے ملی اطلاعات کے مطابق اگر علاج معالجہ صحیح وقت پر نہیں کیاگیا توعبدالقدیر کا دوسرا پیر بھی کاٹ دینا پڑے گا۔ انہوں نے مزیدکہاکہ عبدالقدیر کا معصوم بچہ بھی جس کا دماغی توازن ٹھیک نہیںہے اس معصوم بچے اور عبدالقدیر کی اہلیہ کو قدیر کی ضرورت ہے مگر تلنگانہ کی کوئی بھی سیاسی جماعت عبدالقدیر کے متعلق بات کرنے کے لئے تیار نہیںہے اقتدار حاصل کرنے کے لئے بلند بانگ دعوے تو کئے جاتے ہیںمگر عبدالقدیر کی رہائی کے متعلق نمائندگی سے گریز کیا جارہا ہے۔ انہوں نے کہاکہ ساماجیکا تلنگانہ ریاست کی تشکیل کے دعوے کرنے والے کیا اس حقیقت سے انکار کرسکیں گے تلنگانہ ریاست کی تشکیل صرف اقتدار کی منتقلی کا عمل بن کر رہ جائے گا۔ انہوں نے مزید کہاکہ ذاتی مفادات کی تکمیل کے لئے اقتدار حاصل کرنا ہی تلنگانہ کے قائدین کا مقصد بنا ہوا ہے۔ عوامی مسائل سے روگردانی بالخصوص مسلمانوں اور قبائیلی طبقات کے ساتھ ہونے والی ناانصافیوں پر خاموشی کے باوجود ساماجیکا تلنگانہ ریاست کی تشکیل کو یقینی بنانے کے تمام دعوے کھوکھلے دکھائی دے رہے ہیں ۔

جناب ظہیر الدین علی خان نے اس موقع پر پولاورم پراجکٹ کی وجہہ سے متاثر ہونے والے قبائیلی طبقات کا بھی تذکرہ کیا او رکہاکہ لاکھوں قبائیلی خاندانوں کو بے گھر کرنے والے پولاورم پراجکٹ کے متعلق تلنگانہ حامی سیاسی جماعتوں کی خاموشی ساماجیکا تلنگانہ ریاست کی تشکیل میں سب سے بڑی رکاوٹ ثابت ہورہا ہے ۔ انہوں نے تلنگانہ میںدس سالوں تک گورنر کو دئے جانے والے زائد اختیار ات کے علاوہ دس سالوں تک حیدرآباد کو مشترکہ صدر مقام میںترمیمات کو لازمی قراردیا۔بوجاتارکم نے احتجاجی دھرنے سے خطاب کرتے ہوئے گنیش اور عبدالقدیرکی غیرمشروط رہائی کا مطالبہ کیا۔ انہوںنے کہاکہ سی آر پی سی کی جانب سے سیاسی قیدیوں کے حقوق کا ہفتہ پروگرام کا مقصد ہی دھشت گردی اور نکسل ازم کے نام مسلمانوں ‘ دلت وقبائلیوں کو سیاسی قیدی بناکر ان کے ساتھ مجرموں جیسا سلوک کرنے کے واقعات کی روک تھام اور ریاست کی مختلف جیلوں میںقید سیاسی قیدیوں کو ان کا حق دلانے کی جدوجہد بھی ہے۔چکارامیہ ‘ رام چندر مورتی‘ ورا ورا رائو کے علاوہ دیگر نے بھی عبدالقدیر اور گنیش کی غیرمشروط رہائی کا پرزور مطالبہ کیا۔

TOPPOPULARRECENT